ڈاکٹر محمد مشتاق احمد

ڈاکٹر محمد مشتاق احمد بین الاقوامی اسلامی یونی ورسٹی، اسلام آباد کے شعبۂ قانون کے چیئرمین ہیں ۔ ایل ایل ایم کا مقالہ بین الاقوامی قانون میں جنگِ آزادی کے جواز پر، اور پی ایچ ڈی کا مقالہ پاکستانی فوجداری قانون کے بعض پیچیدہ مسائل اسلامی قانون کی روشنی میں حل کرنے کے موضوع پر لکھا۔ افراد کے بجائے قانون کی حکمرانی پر یقین رکھتے ہیں اور جبر کے بجائے علم کے ذریعے تبدیلی کے قائل ہیں۔

فیس بک پروفائل ٹوئٹر پروفائل
سبسکرائب کریں
X

سبسکرائب کریں

E-mail :*

سودی قوانین کے خلاف مقدمہ؛ علمائے کرام کیا کر رہے ہیں؟ ڈاکٹر محمد مشتاق احمد

پچھلے دنوں ”وفاقی شرعی عدالت کیا کر رہی ہے؟“ کے عنوان سے ایک تحریر لکھی جس میں ذکر کیا کہ کتنے مقدمات اس عدالت میں سالہا سال سے زیر التوا چلے آ رہے ہیں۔ اس پر کمنٹس میں لوگوں نے عدالت پر کافی سخت تنقید کی۔ سوال یہ ہے کہ کیا ہمارے علمائے کرام کی مزید پڑھیں

گستاخ رسول کو قتل کرنے والے شخص کا شرعی حکم – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
شراب اور بیرسٹر ظفر اللہ، اصل مسئلہ کیا ہے؟ ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
قومی ریاست بطور ناجائز بچہ، چند سوالات – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
حکمرانوں، عدالتی نظام کی شرعی حیثیت – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
مختلف نظام ہائے قوانین کے اصولوں میں تلفیق، چند اہم سوالات – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
خود کش حملوں کی شرعی حیثیت – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
”اسلامی“ بینکاری پر اہم کتب – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
جبری گمشدگی؛ قانون و اخلاقیات، چند اہم سوالات – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
2016ء میں پڑھی گئی کتابیں – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
سفیر کا تحفظ، اسلامی شریعت اور بین الاقوامی قانون – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
میں برات کا اعلان کرتا ہوں! – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
عوام کے لیے سیکیورٹی پلان – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
ڈاکٹر عبد السلام صاحب کا مسئلہ کیوں مختلف ہے؟ ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
”قادیانی“ آرمی چیف اور لبرلزم کا پائے چوبیں – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد
قطری شہزادے کا خط، چند مزید سوالات – ڈاکٹر محمد مشتاق احمد