ان پڑھ عورت – محمد زبیر قلندری

آج شبو کے گھر میں بہت سارے مہمان اکٹھے تھے اور اکٹھے بھی کیوں نہ ہوتے شبو کی شادی جو تھی.اس شبو کی جو پنڈ کی سب سے خوبصورت اور چنچل لڑکی تھی. اور شادی بھی ایسی ویسی جگہ نہیں اس گاؤں کے واحد پڑھے لکھے نوجوان ماسٹر خورشید کے ساتھ! شبو کی اماں کا مزید پڑھیں

ایک غیرمعمولی شجرہ نسب – غلام عباس

چھجو: باپ کا نام باوجود تحقیق بسیار معلوم نہ ہو سکا۔ گاؤں میں کبابی کی دکان کرتے تھے۔ شیخ مسیتا: چھجو کے بیٹے، شہر میں پہلے سگریٹ کی دکان تھی، پھر عطاری کرنے لگے۔ حکیم عمردراز: شیخ مسیتا کے بیٹے، ان پڑھ تھے، مگر ساری عمر حکمت کرتے رہے۔ بلا کے زیرک شخص تھے۔ اگر مزید پڑھیں

پسماندگان – خواجہ احمد عباس

اس کا نام تو رحیم خان تھا مگر اس جیسا ظالم بھی شاید ہی کوئی ہو۔ گاؤں بھر اس کے نام سے کانپتا تھا۔ نہ آدمی پر ترس کھائے نہ جانور پر۔ ایک دن راہو کہار کے بچے نے اس کے بیل کی دم میں کانٹے باندھ دیے تو مارتے مارتے اس کو ادھ مُوا مزید پڑھیں

بھوک – آصف اقبال

”ابے اس اشارے پر ساری آبادی رک رک کے چلتی اب۔ ایک دفعہ گاڑی قطار میں لگ جائے تو چار دفعہ تو اشارہ بند ہو ہی جاتا۔ اتنی گاڑیوں کی قطار میں تیرے سے پانچ سو روپے اکٹھے نہیں ہوتے۔ بکواس کرتا رہتا ہے میرے ساتھ۔ سیدھی طرح بتا دے پیسے کدھر کرتا ہے تو۔“ مزید پڑھیں

مرنے کے بعد – اشفاق احمد

کسی کو ٹھیک سے معلوم نہیں کہ ماسٹرا لیاس کب اس محلہ میں آیا تھا اور کب اس نے یہ کوٹھڑی کرائے پر لی تھی، لیکن اس بات کا ہر ایک کو علم تھا کہ ماسٹر الیاس مہاجر ہے اور اس کا تعلق انبالے کے کسی علاقے سے ہے، کیونکہ وہ بولی ہی ایسی بولتا مزید پڑھیں

خودکشی – سعادت حسن منٹو

(ساتھیو! خالی الذہنی کا عالم ہے، کچھ نہیں سوجھ رہا، ایسے میں مجھے مطالعے کی طلب ہونے لگتی ہے۔ منٹو کے افسانے پڑھنے شروع کیے تو ایک افسانہ دل کو بہت بھایا، سچ تو یہ ہے کہ ایڈ گر ایلین پو جیسا اسلوب لگا، اور سیدھا دل پر لگا ۔ پیش خدمت ہے – محمد مزید پڑھیں

آنکھیں – قاضی عبدالستار

۔۔۔۔۔۔۔۔۔ طاؤس کی غم ناک موسیقی چند لمحوں بعد رک جاتی ہے۔ ’’سبحان اللہ جہاں پناہ! سبحان اللہ۔‘‘ ’’بیگم!‘‘ (بھاری اور رنجور آواز میں) ’’جہاں پناہ اگر ہندوستان کے شہنشاہ نہ ہوتے تو ایک عظیم مصنف، عظیم شاعر، عظیم مصور اور عظیم موسیقار ہوتے۔‘‘ ’’یہ تعریف ہے یا غم گساری؟ بہرحال جو بھی ہے مابدولت مزید پڑھیں