مصر سے مکہ اور کشمیر تک - محمد رضی الاسلام ندوی

'جیل' کا لفظ سنتے ہی ذہن میں ایک ایسی جگہ کا تصوّر آجاتا ہے جس میں آزادیاں مسلوب ہوتی ہیں، اختیارات پر پابندی ہوتی ہے، ہاتھوں میں ہتھکڑیاں اور پیروں میں بیڑیاں ہوتی ہیں، نہ بھی ہوں تب بھی آزادانہ نقل و حرکت کی اجازت نہیں ہوتی۔ انسان مجبورِ محض اور لاچاری و بے بسی کی مجسّم تصویر ہوتا ہے۔ عموماً جیل...