مرجھا رہے ہیں پھول انہیں بچا لیجیے - عائشہ راٹھور

یخ بستہ راتوں کو پھلانگ کر سورج ابھی نکلنے کی تیاری ہی میں تھا کہ دبے پاؤں چلنے کی آواز نے سحر کی خاموشی کو جیسے توڑ دیا۔ یوں لگ رہا تھا جیسے کوئی رات بھر سویا بھی نہیں اور صبح اٹھتے ہی اپنے کام میں مگن ہو گیا ہے۔ سورج کی کرنیں کتابوں پہ جمی گرد کو واضح کر رہی تھیں اور صبا ان سے جڑی یادوں کو پھولوں...