حافظ یوسف سراجادب اور دین دلچسپی کے میدان ہیں۔ کیرئیر کا آغاز ایک اشاعتی ادارے میں کتب کی ایڈیٹنگ سے کیا۔ ایک ہفت روزہ اخبار کے ایڈیٹوریل ایڈیٹر رہے۔ پیغام ٹی وی کے ریسرچ ہیڈ ہیں۔ روزنامہ ’نئی بات ‘اورروزنامہ ’پاکستان‘ میں کالم لکھا۔ ان دنوں روزنامہ 92 نیوز میں مستقل کالم لکھ رہے ہیں۔ دلیل کےاولین لکھاریوں میں سے ہیں۔

وہ جلتی رہی، یہ دیکھتا رہا! - حافظ یوسف سراج

پھر ایک خبر آئی ہے، پھر کانوں میں صورِ سرافیل گونجا ہے، پھر سینے میں ایک آگ دہکی ہے، پھر دماغ پر ایک چوٹ پڑی ہے، پھر جگر خونم خون ہوا ہے۔ اک درندے نے پھر انسانیت کا دل دکھایا ہے۔ انسان نے آج پھر اپنے وجود پر کلہاڑی ماری ہے، پھر اپنی رگوں میں زہر انڈیلا ہے۔ انسان کا اگرچہ دعویٰ یہ ہے کہ وہ بڑی ترقی...

error: اس صفحے کو شیئر کیجیے!