حافظ یوسف سراج

گمنام قبیلے کا اک گمنام فرد ہوں. قلم پکڑنا سیکھتا ہوں پر گاہ اس سے اپنا اور گاہ دوسروں کا سر قلم کر بیٹھتا ہوں. سو تادیر نادم اور ناشاد رہتا ہوں. ہاں تہمت کچھ 'نئی بات' اور 'پاکستان' کا کالم نگار اور پیغام ٹی وی کا ریسرچ ہیڈ ہونے کی بھی ہے. باقی میرا اثاثہ اور تعارف میرے احباب ہیں.

فیس بک پروفائل ٹوئٹر پروفائل
سبسکرائب کریں
X

سبسکرائب کریں

E-mail :*

اک اور جعلی پیر، اک اوراصلی واردات – حافظ یوسف سراج

انسانیت کا لہو کر دیتی جن خاردار بیڑیوں سے نسلِ انسانی کو بچانے مذہب آیا تھا، افسوس عیار شیطانی ہوس نے انھی بیڑیوں میں جکڑنے کا خود مذہب ہی کو آلہ بنا ڈالا۔ ربعی بن عامرؓ کی طرف منسوب قول ہے، اسلام آیا، تاکہ یہ بندوں کو بندوں کی بندگی سے نکال کر اللہ کی مزید پڑھیں