سلطنت عثمانیہ کی شکست و ریخت، ذمہ دار کون؟ تزئین حسن

سال گزشتہ ترکی کے صدر طیب اردگان کے خلاف ناکام فوجی بغاوت کے بعد سے ترکی بین الاقوامی اور قومی اخبارات میں زیر بحث ہے. اتفاق سے 2016ء میں برطانیہ اور فرانس کے درمیان سکائس پیکوٹ معاہدے کو پورے سو سال ہو چکے ہیں. اب یہ بات سرکاری طور پر منظرعام پر آ چکی ہے مزید پڑھیں

’پوسٹ کولڈ وار‘ سیناریو سمجھنے کی ضرورت (3) – حامد کمال الدین

دشمن صرف آپ کا ”آج“ نہیں دیکھتا کچھ بڑی مسلم آبادیاں اور کچھ مضبوط عسکری امکانات کی مالک مسلم ریاستیں – اپنے یہاں اسلام نافذ نہ ہونے کے باوجود – اسلام دشمنوں کی آنکھ میں کھٹکتی آئی ہیں۔ البتہ اِس ”مابعد سرد جنگ دور“ میں یہ اُن کی جارحیت کا نشانہ بھی ہو سکتی ہیں۔ مزید پڑھیں

ترک سیکولرازم کا آنکھوں دیکھا حال – مجیب الحق حقی

آئیے آپ کو آج سے بیس سال قبل کے ترکی کی ایک جھلک دکھاتے ہیں۔ پی آئی اے کے ہم تین ساتھیوں نے عمرے کا ارادہ کیا اور طے ہوا کہ ویزہ کھلتے ہی روانہ ہوں گے تاکہ رش سے بچ کر سکون سے عبادات کریں۔ لیکن معلوم ہوا کہ ابھی ویزہ ان لوگوں کو مزید پڑھیں

طیب اردوان کو جاننا اس قدرآسان نہیں ہے – اختر عباس

’’ہم اپنا سفر وہیں سے شروع کریں گے جہاں سے چھوٹا تھا۔‘‘\nجمہوریہ ترکی کے صدر کی یہ بات ایک سو سال پرانے سفر سے جڑنے کا فسانہ سنا رہی تھی۔ خلافت عثمانیہ سے جدائی اور انجان اور اجنبی تصورات اور روایات کا جبر جو 1923ء سے جاری تھا، وہ اس سے دوری کا آرزو مند مزید پڑھیں