مدفون کلیاں - نصرت یوسف

بارش چھاجوں چھاچھ برس چکی تھی، بادل کے سوراخو‍ں سے آنے والی دھوپ کی ٹکیاں جگہ جگہ بکھری تھیں، چھجے پر بیٹھے کبوتر غٹرغوں کرنا شروع ہو چکے تھے۔ ایسے میں اسکول سے لمحوں پہلے لوٹی سات سالہ ننھی نے پلنگ پر لیٹ کر پڑوس کے ریڈیو سے آنے والی موسیقی کو توجہ سے سنتے آنکھیں مونند لیں۔ ہر روز دیوار پار سے آتی...

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */