تجزیے کا مغالطہ - عاطف حسین

عاطف حسین پچھلے کچھ دنوں کے دوران اوپر تلے مقبوضہ کشمیر میں برہان وانی کی شہادت، ترکی میں ناکام فوجی بغاوت، قندیل بلوچ کا قتل اور آزاد کشمیر میں انتخابات چار ایسے واقعات ہوئے جن میں پاکستانیوں کی ایک بڑی تعداد نے دلچسپی ظاہر کی۔ اس دوران اپنی فیس بک نیوز فیڈ اور مختلف بلاگز سائٹس وغیرہ کو دیکھتے ہوئے راقم کو اچانک احساس ہوا کہ پیشہ ور اور نیم پیشہ ور تجزیہ کاروں کے ساتھ ساتھ عوام کی ایک بہت بڑی تعداد بھی ان واقعات کے متعلق جہاں اپنے جذبات کا اظہار کر رہی ہے وہیں ان واقعات کا تجزیہ بھی کر رہی ہے۔\n\nمزید غور کرنے پر احساس ہوا ہے کہ 'تجزیہ' معاشرے میں ایک بہت مطلوب جنس ہے جس کی طلب پوری کرنے کےلیے تجزیہ کاری کی پوری صنعت موجود ہے جس سے سینکڑوں\nایسے لوگ وابستہ ہیں جو روزانہ درجنوں ٹی وی پروگرامز اور سینکڑوں کالمز کے ذریعے اس طلب کو پورا کرنے میں مصروف ہیں۔ عوام بہت شدت سے ان تجزیوں کا انتظار کرتے ہیں اور ان سے مستفید ہونے کےلیے رقم اور وقت دونوں خرچ کرتے ہیں۔\n\nتجزیوں کا مقصد بظاہر یہی معلوم ہوتا ہے کہ واقعات کے اسباب متعین کیے جائیں، ان سے کچھ اسباق اخذ کیے جائیں اور ان کی روشنی میں آئندہ کا لائحہ عمل ترتیب دیا جائے. دراصل ہم انسان ابہام، پیچیدگی اور غیر یقینیت کو پسند نہیں کرتے اور مسلسل اس کوشش میں رہتے ہیں کہ واقعات و مظاہر کے پیچھے کار فرما اصولوں اور سبب و مسبوب کے تعلقات کو سمجھ کر درست پیش گوئیوں اور اسباب کے رد و بدل کے ذریعے من چاہے نتائج حاصل کرنے کی صلاحیت پاسکیں۔ اگر غور کیا جائے تو سارے تجزیوں کا مقصد یہی ہوتا ہے۔ مثلاً جب کوئی یہ تجزیہ کرتا ہے کہ مسلم لیگ نواز آزاد کشمیر میں کیوں الیکشن جیتی اور پاکستان تحریک انصاف کیوں ہاری تو دراصل وہ دعویٰ کرتا ہے کہ ووٹ حاصل کرنے کے کچھ اصول ہیں، جن کا لحاظ جو جماعت کرے گی وہ ووٹ حاصل کرے گی۔ باالفاظ دیگر یہ تجزیے ہماری ان اصولوں کو جن پر یہ دنیا چلتی ہے سمجھنے کی خواہش کی تسکین کرتے اور ہمیں یہ اعتماد دیتے ہیں کہ ہم اسباب کے ہیر پھیر کے ذریعے اپنے من چاہے مستقبل کو یقینی بنا سکتے ہیں۔\n\nسوال یہ ہے کہ کیا واقعی کچھ ایسے اصول موجود ہیں اور انہیں تجزیوں کے ذریعے دریافت کیا جاسکتا ہے؟ یہ کہنا تو مشکل ہے کہ ایسے کوئی اصول موجود نہیں لیکن دوسرے سوال کا جواب قریب قریب یقین کے ساتھ نفی میں دیا جاسکتا ہے۔ سیاستدان فلپ ٹیٹلوک (Philip Tetlock) کی کم وبیش دو عشروں تک تجزیہ کاروں کی پیش گوئیوں پر کی گئی تحقیق نے تجزیہ کاروں کے بھرم کے غبارے سے مکمل طور پر ہوا نکال دی ہے۔ ٹیٹلوک کی ریسرچ سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ نہ صرف اندھے بہرے الگورتھمز ماہر تجزیہ کاروں کی نسبت کہیں زیادہ بہتر پیش گوئیاں کرسکتے ہیں بلکہ اگر بندر بھی تکے لگاتے تو وہ ماہر تجزیہ کاروں کی نسبت بہتر پیش گوئیاں کرتے۔ مزید لطف یہ ہے کہ زیادہ ماہر اور مشہور تجزیہ کاروں کی پیش گوئیاں شوقیہ اور غیر پیشہ ور تجزیہ کاروں کی نسبت زیادہ غلط ہوتی ہیں!\n\nیہاں یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ بڑے مکمل، جاندار اور درست معلوم ہونے والے تجزیوں کی بنیاد پر کی گئی پیش گوئیاں کیوں غلط ثابت ہوتی ہیں؟ اس سوال کا جواب سماجی دنیا کی پیچیدگی اور انسانی صلاحیتوں کے محدودات میں تلاش کیا جا سکتا ہے۔\n\nدراصل سماجی دنیا ناقابل فہم اور خطرناک حدتک پیچیدہ ہے جس میں ہر واقعے کی بنیاد میں ان گنت عوامل شامل ہوتے ہیں جن میں سے کسی ایک میں بھی ذرا سی بھی تبدیلی نتائج میں زمین آسمان کا فرق ڈال سکتی ہے۔ اسے عرب بہار کی مثال سے سمجھا جا سکتا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ عرب بہار کا آغاز ایک نوجوان کی خود کشی سے ہوا۔ یہ کوئی پہلی خودکشی تو نہیں تھی۔ اس سے پہلے بھی ہزاروں خودکشیاں ہوئیں جن پر کوئی انقلاب برپا نہیں ہوا۔ تاہم چھوٹے چھوٹے عوامل نے مل کر اس خودکشی کو ایک بہت بڑی تحریک کی بنیاد بنا دیا جس کے دوران کئی حکومتیں گریں۔ ان عوامل میں سے کوئی ایک بھی عامل اگر عین ویسا ہی نہ ہوتا جیسا کہ تب تھا تو شاید اس خود کشی پر کوئی احتجاج نہ ہوتا، یا صرف اسی قصبے تک محدود رہتا۔ یہ واقعہ جتنی بڑی تحریک کا موجب بنا اس کی نہ تو پہلے پیش گوئی کی جاسکتی تھی اور نہ اب ان عوامل، ان کی مقدار یا ترتیب کا ٹھیک ٹھیک تعین کیا جاسکتا ہے۔\n\nاور اگر بالفرض محال کر بھی لیا جائے تو وہ مزید کسی پیش گوئی کے کام نہیں آسکتا کیونکہ یہ منفرد صورت حال تھی جو اب دوبارہ کبھی پیدا نہیں ہوگی۔ درحقیقت سماجی دنیا میں ہونے والا ہر واقعہ ہی منفرد ہوتا ہے لہذا اگر ایک واقعے کو ٹھیک ٹھیک سمجھ بھی لیا جائے تو عملی مقاصد کےلیے بے کار ہے کیوں کہ اب وہ واقعہ دوبارہ کبھی نہیں پیش آنے والا۔ اب اگر ہم کہیں پولیس کی ناانصافی کے خلاف احتجاجی خود کشی دیکھیں تو یقین سے نہیں کہہ سکتے کہ ایک اور عرب بہار برپا ہونے والی ہے۔\n\nاسی سے یہ بھی سمجھیے کہ چونکہ ہر بڑا واقعہ بہت چھوٹے چھوٹے اتفاقات کی سیریز کا نتیجہ ہوتا ہے اسی لیے ان واقعات کے متعلق پیش گوئی نہیں کی جاسکتی۔ چودہ سو سال قبل ایران میں اگر اخباری تجزیہ کار ہوتے تو ان کا سارا زور بڑے بڑے عوامل پر ہوتا اور ان کے سان گمان میں بھی نہ ہوتا کہ عرب جیسے غیر اہم خطے میں ہونے والے بظاہر غیر اہم واقعات سے بھی ساسانی سلطنت کو کوئی حقیقی خطرہ ہوسکتا ہے۔ تاہم انھی واقعات کے نتیجے میں صرف چند سالوں میں ساسانی سلطنت نیست و نابود ہوگئی۔\n\nاس بحث کا مقصد یہ دکھانا ہے کہ چاہے کسی گذرے ہوئے واقعے کے اسباب متعین کرنے ہوں یا موجودہ صورت حالات کا تجزیہ کرکے مستقبل کے متعلق درست پیش گوئی کرنی ہو، دونوں کے لیے ضروری ہے کہ تجزیہ کار کو تمام عوامل (جن کی تعداد لاکھوں میں ہوسکتی ہے) کے وجود اور تناسب کا بالکل ٹھیک ٹھیک پتا ہو۔ اب ایسا مکمل علم لاپلاس کے تصوراتی عفریت (Laplace’s Demon) کے پاس تو ہوسکتا ہے، کسی انسان کے پاس نہیں۔ لہذا ہر انسانی تجزیہ چاہے وہ جانبداری سے معجزاتی طور پر بالکل پاک بھی ہو، نامکمل اور بیشتر اوقات غلط اور ناقابل اعتبار ہی ہوتا ہے۔\n\nہر تجزیہ کار اپنی صلاحیت یا نظریاتی میلانات کے مطابق کچھ حقائق اور واقعات کو اٹھاتا ہے اور انھیں ایک مسلسل کہانی کی شکل دیتا ہے جو اکثر بہت متاثر کن اور درست معلوم ہوتی ہے۔ مثال کے طور پر ترکی کی بغاوت کے متعلق بالکل متضاد کہانیاں تخلیق کی جاسکتی ہیں (اور کی بھی جا رہی ہیں) جن میں سے ہر ایک بہت متاثر کن معلوم ہوگی۔ ایک کہانی یہ ہوسکتی ہے کہ یہ بغاوت اردگان کا اپنا رچایا ہوا ڈرامہ تھا۔ ایک اور کہانی یہ ہوسکتی ہے کہ یہ فتح اللہ گولن کے پیروکاروں کی بغاوت تھی۔ بالکل اسی طرح ایک کہانی یہ بھی ہے کہ یہ مغربی طاقتوں کی سازش تھی۔ لطف یہ ہے کہ ان میں سے ہر کہانی کی تصدیق کرنے والے کئی حقائق مل جائیں گے اور اپنی نظریات میلانات کی تصدیق کی خواہش یا محض سہل پسندی کے زیراثر کسی ایک ہی خاص کہانی کو درست ماننے کے خواہش مند اس کہانی میں سیدھے سیدھے فٹ نہ ہوسکنے والے حقائق کو بھی توڑ مروڑ کر اس کے مطابق بنا لیں گے اور اس پر یقین کیے رکھیں گے۔ نسیم طالب نے اس کے لیے 'بیانیے /کہانی کا مغالطہ' (Narrative Fallacy) کی اصطلاح وضع کی ہے۔\n\nہمارے ہاں چونکہ اکثر تجزیے تجزیہ کاروں کے نظریاتی میلانات کے زیراثر ہوتے ہیں مثلاً کچھ لوگ ہر چیز کی تشریح استعمار کی سازش کے طور پر کرتے ہیں اور کچھ لوگ پاکستان میں ہر برائی کی بنیادیں پدرسری نظام وغیرہ میں کھوج نکالتے ہیں تو اس بات کا ذکر بھی ضروری ہے کہ ٹیٹلوک کی تحقیق کے مطابق اس طرح کے تجزیہ کاروں کے تجزیے جو کسی ایک ہی تصور کی روشنی میں ہر تجزیہ کرتے ہیں، خاص طور پر غلط ہوتے ہیں۔ جبکہ ایسے تجزیہ کار جو مختلف امکانات کو مدنظر رکھتے ہیں ان کے تجزیے اول الذکر تجزیہ کاروں کی نسبت کم غلط ہوتے ہیں۔\n\nتو کیا ہمیں تجزیہ کرنا ہی نہیں چاہیے؟ ایسا ممکن نہیں ہے کیوں کہ ہم فطری طور پر تجزیے کرنے پر مجبور ہیں۔ مثلاً یہی ستم ظریفی ملاحظہ ہو کہ تجزیے کے خلاف لکھتے ہوئے راقم خود ایک طرح کے تجزیے کا مرتکب ہو رہا ہے۔ صرف اتنا عرض کرنا مقصود ہے کہ تجزیہ کار حضرات صرف ایک آدھ حقیقت اور اپنے نظریاتی میلانات کی بنیاد پر تجزیات کی بلند وبالا عمارات کھڑی کرنے کی روش پر نظرثانی کریں اور قارئین بھی تجزیات پڑھتے ہوئے یہ ذہن میں رکھیں کہ تفصیلی ترین ، گہرے سے گہرے اور بہت درست معلوم ہونے والے تجزیات بھی حقیقت نہیں بلکہ اسے سمجھنے کی ایک ناقص کوشش ہی ہوتے ہیں۔