ایسے کچھ لوگ بھی مٹی پہ اتارے جائیں – حسان احمد اعوان

ایسے کُچھ لوگ بھی مٹی پہ اُتارے جائیں دیکھ کر جن کو خدوخال سنوارے جائیں ایک ہی وصل کی تاثیر رہے گی قائم کون چاہے گا یہاں سال گزارے جائیں تیرے مژگاں ہیں کہ صُورت کوئی قوسین کی ہے درمیاں آکے کہیں لوگ نہ مارے جائیں اِک جُنوں ہے کہ تُجھے پانا ہے دُنیا میں مزید پڑھیں

بھول یا بھول بھلیاں؟ فرح رضوان

ایک سے بڑھ کر ہر اک کوڑھ مغز بھنبھناتا ہوا بھنورا ہو یا گستاخ مگس سب کا کہنا ہے، ہمیں بھول کی ہے بیماری سینت کے رکھی ہوئی چیز نہ مل پائے کبھی بیچاری ہم جو کہتے ہیں کہ یہ عمر کا تقاضا ہے کیا کبھی یوں ہی سہی، گذرے کل میں جھانکا ہے؟ بھول مزید پڑھیں

آرزو – محمد علی نقی

یاسمین گارڈن کے ایک بینچ پہ بیٹھی آرزو اپنے تخیلاتِ منتشرہ کو مجتمع کرنے میں محو تھی کہ ہر آنے جانے والا اسے بھونڈی نگاہ سے دیکھ رہا تھا. آرزو کسی جوالا مکھی سے کم نہ تھی، ہرن نما آنکھیں،گوری رنگت پر ظاہری میک اپ کی ضرورت نہ تھی. اسلامی یونیورسٹی میں چوتھے سمسٹر کی مزید پڑھیں

دلِ بسمل از صدف زبیری – سہیل بشیرکار

فن پارہ کسی مخصوص صنف کے فنی اور جمالیاتی تقاضوں کے مطابق وجود میں آئے تب ہی فن پارہ کہلانے کا سزاوار ہوتا ہے۔ یہ مفروضہ، ادب و فن سے متعلق ہماری روایتی سوچ اور معیار کا زائیدہ ہے، لیکن آج نئی معاشرت اور ثقافت کی پیدا کردہ نظریاتی تکثیریت کے دور میں چونکہ زندگی مزید پڑھیں

ناگ سائیں (3) – ریحان اصغر سید

تیرو ہندو مذہب سے تعلق رکھنے والا خاندانی سپیرا تھا۔ وہ افسانوی شہرت کے حامل گاؤں لسبی کا رہنے والا تھا۔ گاؤں کی آبادی بمشکل چند سو نفوس پر مشتمل تھی، جو سب سپیرے تھے، لیکن انھیں گاؤں کی حدود میں سانپ پکڑنے کی اجازت نہیں تھی، کیونکہ گاؤں میں موجود ناگ داتا کے مندر مزید پڑھیں

ناگ سائیں (2) – ریحان اصغر سید

بابر علی ایک دبنگ صحافی تھا۔ اس نے اپنے کیرئیر کا آغاز ایک اخبار کے فیلڈ رپورٹر کے طور پر کیا۔ جلد ہی اس کی تحقیقاتی سٹوریز نے تہلکہ مچا دیا۔ اس نے کرپشن کے کئی بڑے سکینڈل بےنقاب کیے۔ اخبار میں کالم بھی لکھے اور پھر ایک نیوز چینل پر ایک سیاسی ٹاک شو مزید پڑھیں

آئیے اپنی زبان درست کریں (دوسرا حصہ) – سیّد سلیم رضوی

کچھ نجی مصروفیات کے باعث کئی ماہ پر محیط وقفے کے بعد ’’دلیل‘‘ کی محفل میں حاضری ہو رہی ہے۔ سب سے پہلے سلسلہ وہیں سے جوڑتے ہیں، جہاں سے ٹوٹا تھا۔ اِن شاء اللہ اب آپ احباب کے ساتھ رابطہ مستقل بنیادوں پر رہے گا۔ اِس تحریرسے پہلے مضمون کی تمہید میں عرض کِیا مزید پڑھیں

جہنم کا منظرنامہ – محمد علی نقی

ہر طرف گہما گہمی کا عالم تھا کہ لوگ برہنہ بدن شرق و غرب میں دوڑے جا رہے تھے، کہیں سے آہ کی آواز بلند ہو رہی تھی تو کوئی واہ واہ کہہ کر مسلسل داد دیے جارہا تھا کہ اتنے میں جہنم کے دروغے کی آواز بلند ہوئی، یہ عیش و عشرت کا زمانہ مزید پڑھیں

اسیرِ محبت – حنا نرجس

ابھی دفتر پہنچ کر میں اپنا لیپ ٹاپ میز پر رکھ ہی رہا تھا کہ موبائل پر میسج کی بیپ سنائی دی. بنا دیکھے ہی مجھے یقین تھا کہ میسج کس کا ہوگا، کس نوعیت کا ہوگا، پھر بھی ہاتھ جیسے اپنے آپ ہی جیب تک چلا گیا. Love you, dost! سکرین پر جگمگا رہا مزید پڑھیں

‎ناگ سائیں (1) – ریحان اصغر سید

رات کے دو بجے تھے۔ یہ ایک صحرائی شہر کے ضلعی گودام کے باہر کا منظر تھا۔ گودام میں اندرون ملک اور بیرون ملک سے آنے والی ہزاروں ٹن گندم سٹور تھی۔ یہ گندم علاقے میں خشک سالی اور قحط کی صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے کسی متوقع انسانی المیے سے بچنے کے لیے بھیجی مزید پڑھیں