اَخلاقی اقدار کا زوال - پروفیسر مفتی منیب الرحمن

مفتی منیب الرحمنآج کل ماشاء اللہ ہمارے میڈیا اسٹارز کے لیے موضوعات کی بہتات ہے، پاناما لیکس، بہاماس لیکس، قرض معافی مافیا، میڈیا کو سیکرٹ میٹنگ کی لیکنگ یا فیڈنگ، سپریم کورٹ آف پاکستان اور الیکشن کمیشن آف پاکستان میں اعلیٰ شخصیات کی نااہلی کے بارے میں متعدد ریفرنس اور 2 نومبر کو اسلام آباد کے محاصرے اور حکومت کومفلوج کرنے جیسے امور تو چل ہی رہے تھے، اِس اثنا میں جنابِ مصطفی کمال اور گورنر ڈاکٹر عشرت العباد خان نے تودھماکا ہی کر دیا۔ سو اب ہمارے اینکر پرسنز اور کالم نگاروں کے وارے نیارے ہیں۔ بیچ میں چٹنی اور چٹخارے کے طور پر امریکہ کے صدارتی انتخابات کو بھی بروئے کار لایا جاسکتا ہے اور انڈیا میں ہمارے اداکاروں کی بےتوقیری الگ سے ایک عالَمی اور آفاقی مسئلہ ہے۔ بعض پاکیزہ ذہنوں پر نازل ہونے والے عالَمِ غیب کے الہامات، بشارتیں اور وعیدیں اِس سے سِوا ہیں۔ الغرض ٹیلی ویژن اسکرین اور اخبارات کے صفحات پر ہر سو رونق ہی رونق ہے۔ بدھ کو موضوعات کے دباؤ کے باعث جناب ڈاکٹر فاروق عبدالستار کے لیے بھی گنجائش نہیں نکل پائی اور وہ رات انہوں نے شاید سکون سے گزاری ہوگی یااُن کے لوگ اسکرین آؤٹ ہونے پر مضطرب ہوں گے۔\n\nایران میں ایک اصطلاح ’’اصلاح طلبان‘‘(Reformist)کی رائج ہے اور موجودہ ایرانی صدر جنابِ حسن روحانی کا تعلق اِسی طبقے سے ہے، اِن کے مقابل’’محافظانِ انقلاب‘‘ یا ’’قدامت پرست‘‘ کہلاتے ہیں۔ اس وقت ہمارے ہاں سیاسی محاذ آرائی انتہا پر ہے، اس لیے توازن و اعتدال، میانہ روی، اصلاحِ احوال اور ہوش مندی کی بات کرنا یا لکھنا غیر مقبول (Unpopular) موضوع ہے، کیونکہ اس طرح آپ پر مصلحت پسندی، مطلب براری، ضمیر فروشی یا منافقت، الغرض کوئی بھی فتویٰ لگ سکتا ہے۔ آپ اگر لشکرِ حسین میں نہیں تو یزیدی ہیں، اس سے قطع نظر کہ آپ فریقِ مخالف کے حامی ہوں یا نہ ہوں۔ کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا کہ ’’مقامِ حسین رضی اللہ عنہ ‘‘ کواتنا گرادیا جائے گا کہ ہر شخص کے پاس اپنے آپ کو ’’ظِلِّ حسین‘‘اور اپنے مخالفین کو ’’یزیدی‘‘ قرار دینے کا لائسنس ہوگا اور وہ ہوائے نفس کے تحت یا بربنائے اخلاص ہی سہی جو بھی معرکہ بپا کرے گا، وہ اکسٹھ ہجری کے بعد معرکۂ کربلا کا ہم پلّہ قرار پائے گا، کسی نے کہا تھا:\nہر بوالہوس نے حُسن پرستی شعار کی\nاب آبروئے شیوۂ اہلِ نظر گئی\n\nجواب ندارد:\nہم اور ہم جیسے چند دیگر کوتاہ فہم مسلسل لکھ رہے ہیں کہ جب بظاہر تمام سیاسی جماعتیں ہمارے ریاستی نظام کی کرپشن سے تطہیر کو اپنا مقدس مشن بنا چکے ہیں، تو یہ سب لوگ یکسوئی کے ساتھ کم از کم وقت میں اس مقصدکے لیے جامع قانون سازی کرنے کے لیے کیوں تیار نہیں ہیں؟۔ اگر ہمارا نظامِ ریاست کسی نظامِ آئین وقانون کے تحت چل رہا ہے تو ہر چیز قانون، قانون نافذ کرنے والے اداروں اور نظامِ عدل کے تحت ہونی چاہیے اور جہاں پہلے سے قانون موجود نہیں ہے یا قانون میں خلا (Lacuna) ہے یا قانون کسی خاص فرد یا طبقے کو تحفظ دے رہا ہے یا وہ جامع نہیں ہے، تو اِس موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے سب مل کر اتفاقِ رائے سے جامع قانون سازی کیوں نہیں کر پا رہے؟۔ لیکن اس کا جواب میدانِ سیاست میں متحارب فریقوں اور حکومتی اداروں سمیت کہیں سے نہیں آرہا اور یہی قرائن نیتوں کو مشتبہ قرار دینے کے لیے کافی ہیں۔\n\nاَخلاقی زوال:\nایک وقت تھا کہ اِختلافِ رائے کے باوجود لوگوں میں کسی نہ کسی درجے میں باہمی احترام کی روایت موجود تھی اور کچھ اَخلاقی اقدار تھیں، جن کی پاس داری کی جاتی تھی۔ اگر فریقِ مخالف کا احترام ملحوظ نہ بھی ہوتا، تب بھی اپنے شخصی وقار و اعتبار اور اپنی وضع داری اور بھرم کو قائم رکھنے کے لیے باوقار لوگ اَخلاقی اقدار کی ایک اوسَط سطح سے نیچے نہیں گرتے تھے۔ قریشِ مکہ، جو سیدالمرسلین رحمۃ للعالمین سیدنا محمد رسول اللہ ﷺ کے جانی دشمن تھے، وہ بھی اِس حد تک نہیں گرے کہ آپ کو العیاذ باللہ! کاذب اور خائن کہا ہو یا آپ کے کردار پر کوئی طعن کیا ہو۔ جب اللہ نے یہ آیت نازل فرمائی:\n’’اور (اے رسول!) آپ اپنے قرابت داروں کو( للہ کے عذاب سے) ڈرائیے، (الشعراء:214)‘‘۔ اِس حکمِ ربانی کی تعمیل میں آپ ﷺ کوہِ صفا کی بلند چوٹی پر چڑھے اور ندا دی: یَا صَباحَاہ! (واضح رہے کہ اُس زمانے میں عالَمِ عرب میں یہ صدا کسی ہنگامی صورتِ حال میں لگائی جاتی تھی)۔ سب متوجہ ہوئے اور کہا: یہ کون ہیں؟، اُس زمانے میں جو شخص خود موقع پر نہ جا پاتا تو وہ خبر لینے کے لیے اپنا کوئی نمائندہ بھیجتا۔ چنانچہ ابولہب اور قریش کے سردار آ کر جمع ہوگئے، پھر آپ ﷺ نے فرمایا: اگر میں تمہیں یہ خبر دوں کہ اس پہاڑ کے عقب سے شہسواروں کا ایک لشکر تم پر اچانک حملہ کرنے والا ہے، تو کیا تم میری خبر کی تصدیق کرو گے؟، سب نے یک زباں ہو کر جواب دیا: یقینا کریں گے، کیونکہ ہم نے پوری زندگی آپ کو کبھی جھوٹ بولتے نہیں دیکھا، [pullquote](سُبل الھُدیٰ والرَّشاد فی سِیْرَۃِ خیرِ العباد ،ج:2،ص:323)[/pullquote]‘‘۔\n\nسو زمانۂ کفر میں بھی رواداری کا ایک معیار قائم تھا ۔\n\nاِسی طرح جب ابوسفیان شام کے تجارتی سفر پر تھے، تو ھِرَقْل (قیصرِ روم) نے رسول اللہ ﷺ کے بارے میں معلومات حاصل کرنے کے لیے اپنے رؤساء اورترجمان کو بلایا اور قریشِ مکہ کے تجارتی قافلے کو دربار میں طلب کر کے سیدنا محمد رسول اللہ ﷺ کے بارے میں پوچھا: تم میں سے نسبی اعتبار سے اِس مُدّعیِ نبوت کا سب سے قریب کون ہے؟، ابوسفیان نے کہا: میں ہوں، اُس نے کہا: آپ میرے قریب آجاؤ، میں اس شخص کے بارے میں چند سوالات کرنا چاہتا ہوں۔ ابوسفیان کہتے ہیں: اللہ کی قسم! اگر مجھے یہ حیا نہ ہوتی کہ مجھے جھٹلا دیا جائےگا، تو میں ضرور اُن کے بارے میں جھوٹ بولتا (یعنی اُسے انتہائی عداوت کے باوجود اپنے وقار و اعتبار کا اتنا پاس تھا)، اُن میں سے چند سوال جواب یہ تھے:\nہرقل: اُس کا نسب کیسا ہے؟\nابوسفیان: وہ ہم سب میں عالی نسب ہیں۔\nہرقل: تمہارے خاندان میں پہلے بھی کسی نے نبوت کا دعویٰ کیا ہے؟\nابوسفیان: نہیں۔\nہرقل: تم میں کوئی بادشاہ گزرا ہے؟\nابوسفیان: نہیں۔\nہرقل: اُس کے پیروکار اشرافیہ کے طبقے سے تعلق رکھتے ہیں یا سماجی اعتبار سے کمزور لوگ ہیں؟\nابوسفیان: نچلے طبقات کے لوگ ہیں۔\nہرقل: اُن کی تعداد بڑھتی جا رہی ہے یا گھٹ رہی ہے؟\nابوسفیان: بڑھتی جارہی ہے۔\nہرقل: اُس کا دین قبول کرنے کے بعد کسی نے اُس کے دین کو چھوڑا بھی ہے؟\nابوسفیان: نہیں۔\nہرقل: کیا نبوت کا دعویٰ کرنے سے پہلے تم لوگوں نے اُس پرکبھی جھوٹ کا الزام لگایا ہے؟\nابوسفیان: نہیں۔\nہرقل: کیا اُس نے کبھی عہد شکنی بھی کی ہے؟\nابوسفیان: نہیں۔\nیہاں ابوسفیان کہتے ہیں: میں اتنی ہی گنجائش نکال پایا کہ میں نے کہا: ہمیں اپنے وطن سے آئے ہوئے کافی دن ہوگئے ہیں، اگر ہمارے بعد کوئی ایسی چیز صادر ہوگئی ہو تو اُس کا ہمیں علم نہیں۔\nہرقل: تمہاری اُس سے جنگ بھی ہوئی ہے؟\nابوسفیان: ہاں!۔\nہرقل: اس جنگ کا کیا نتیجہ نکلا؟\nابوسفیان: جنگ میں کبھی ہمارا پلڑا بھاری ہوجاتا اور کبھی اُن کا۔\nہرقل: اُس کی تعلیمات کیا ہیں؟\nابوسفیان: وہ کہتے ہیں: اللہ وحدہٗ کی عبادت کرو، اُس کے ساتھ کسی کو شریک نہ ٹھہراؤ، اپنے آباؤاجداد کی (ناحق باتوں )کو چھوڑو اور وہ ہمیں نماز، سچ بولنے، پاکبازی اور صلۂ رحمی کی تعلیم دیتے ہیں۔\n\nقیصرِ روم نے اپنے ترجمان کے ذریعے کہا کہ میرے سوالات کے جواب میں؛\nتم نے بتایا: وہ عالی نسب ہیں اور اللہ تعالیٰ عالی نسب لوگوں ہی کو اپنی قوم میں رسول بنا کر بھیجتا ہے۔\nتم نے بتایا: ہمارے خاندان میں اِن سے پہلے نبوت کا دعویٰ کسی نے نہیں کیا، اگر ایسا ہوا ہوتا تو میں کہتا کہ یہ شخص ماضی کی روایت کی پیروی کر رہا ہے۔\nتم نے بتایا: اِس سے پہلے تمہارے خاندان میں کوئی بادشاہ نہیں گزرا، اگر تمہارا جواب اِثبات میں ہوتا تو میں سوچتا: یہ شخص اپنی گم گشتہ بادشاہت کا طلب گار ہے۔\nتم نے بتایا: دعوی ٔ نبوت سے پہلے اِس شخص پر جھوٹ کی کوئی تہمت بھی نہیں لگی (واضح رہے کہ تہمت اُس الزام کو کہتے ہیں جو ثابت نہ ہوا ہو)، اگر تمہارا جواب اثبات میں ہوتا تو میں سوچتا: جو شخص لوگوں پر جھوٹ بول سکتا ہے وہ اللہ پر بھی بول سکتا ہے۔\nتم نے یہ بھی بتایا کہ اُس کے پیروکار اَشرافیہ طبقے کے لوگ نہیں ہیں بلکہ زیریں طبقات کے لوگ ہیں اور ابتدا میں رسولوں کے پیروکار ہمیشہ پِسے ہوئے طبقات کے لوگ رہے ہیں۔\nتم نے یہ بھی بتایا کہ اُس کے پیروکار بڑھتے چلے جا رہے ہیں اور دعوتِ نبوت کا سفر اِسی طرح آگے بڑھتا چلا جاتا ہے۔\nتم نے یہ بھی بتایا کہ جو اُس کا ہوجائے، پھر وہ اُس کا ساتھ کبھی نہیں چھوڑتا، ایمان کی حقیقت بھی یہی ہے کہ جب دل میں گھر کر جائے تو وہ مٹائے نہیں مٹتا۔\nتم نے اُن کی تعلیمات بھی بتائیں، اگر تمہارا بیان سچ ہے تو ایک وقت آئے گا کہ وہ میرے قدموں کی جگہ کے بھی مالک ہوجائیں گے، (صحیح البخاری: 7،تلخیص کے ساتھ)‘‘۔\n\nابوسفیان مکے کا سردار اور غزوۂ اُحد میں کفارِ مکہ کے لشکر کا سپہ سالار تھا، لیکن دشمنی کے باوجود اُس نے قیصرِ روم کے سوالات کے جوابات میں رسول اللہ ﷺ کے بارے میں غلط بیانی نہیں کی، کیونکہ اُسے اپنے منصب کا پاس تھا۔\n\nاس موضوع کی طرف میرا ذہن اس لیے متوجہ ہوا کہ جنابِ مصطفی کمال اور گورنر عشرت العباد کے تنازعے پر ایک معروف دانش ور نے کہا: شرافت، وضع داری اور اَقدار کے اعتبار سے ہمارا معاشرہ زوال پذیر ہے، حالانکہ انہوں نے کہا: میں اپنے مخالف سے ٹکرا جانے والا آدمی ہوں، گالیوں کے بارے میں خود کفیل ہوں اور گالیوں کی نئی لغت بھی ایجاد کرسکتا ہوں، لیکن کبھی کسی سے تعلق رہا ہو تو حیا آتی ہے۔ پس ہم مجموعی حیثیت سے حیا باختہ قوم بنتے جارہے ہیں، اللہ تعالیٰ ہمارے حال پر رحم فرمائے۔\n\nنوٹ: روزنامہ دنیا میں چھپنے والے میرے کالموں کی پہلی جلد کا دوسرا ایڈیشن، دوسری اور تیسری جلد کا پہلا ایڈیشن چھپ چکا ہے اور ’’ضیاء القرآن پبلی کیشنز، اردو بازار لاہوراور کراچی‘‘سے دستیاب ہے ۔

Comments

مفتی منیب الرحمن

مفتی منیب الرحمن

مفتی منیب الرحمن، چیئرمین مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان، صدر تنظیم المدارس اہلسنت پاکستان، سیکرٹری جنرل اتحاد تنظیمات مدارس دینیہ پاکستان، مہتمم دارالعلوم نعیمیہ اہلسنت پاکستان

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */