کرتار پور - صبا احمد

کرتارر پور شیخو پورہ لاھور میں سکھوں کا گوردوارہ ھے ۔یعنی ان کی عبادت گاہ ۔ گرو نانک کی جاۓ پیداٸش پچھلے دنوں ان کا یوم ولادت منانے کے لے دنیا پھر سے سکھہ یاتری پاکستان آۓ ہوۓ تھے ۔انہیں بہت سہولتیں فراہم کی گی ۔سکھہ برادری بہت شکر گزار تھی ۔یہ ہمارا فرض تھا ۔

عمران خان نے جب وزیر اعظم بننے کا حلف اٹھایا تھا ۔ان کے تقریب میں سدھو صاحب سابقہ کریکٹر نے ناصرف شرکت کی بلکہ بھارت جاکر نریندر مودی کے مخالفت بھی برداشت کی ۔اس کے پیچھے کیا مقصد تھا وہ سامنے آگیا ھے ۔کہ عمران خان صاحب انہیں بغیر ویظے کے راہداری دے رھے ھیں ۔عوام خاموش تماشائی بنے بیٹھے ھیں ۔کاٹھ کے الو کی طرح ۔کیوں ؟ وہ پاکستان کے محافظہ ھے مالک نہیں کہ وہ اپنی من مانی کرتے پھریں فوج کو بھی اپنی آنکھیں کھلی رکھنی چاھیے ۔آٸین کی پابندی اور سب کو ماننا اس کا احترام کرنا چاھیے سب کے لیے آٸین ایک سا ھونا چاھیے ۔عمران خان اپنے فیصلے مسلط نہیں کر سکتے عوام سے پوچھے اگر آپ مدینہ کی سی ریاست بنانے کا وعدہ لیے ہوۓھیں اور دعویٰ کرتے ھیں . آپ بغیر ویزے کے سکھوں کو ہمارے ملک میں آنے کی اجازت دینے سے پہلے سپریم کورٹ سے اجازت اور عوام سے لی ۔ ۔آپ نے کہا کے کے جیسے مسلمان حج وعمرہ کے لیے خانہ کعبہ اور مدینہ جاتے ھیں ان کے لیے اہم ھے ۔اسی طرح سکھوں کے لیے لاڑکانہ ۔اس میں کوئی شک نہیں . ھم اللہ اور نبیﷺ کے سرزمین پر ویزہ لے کر جاتے ھیں .

سعودی حکومت بھی ھمیں بغیر ویزے کے اپنے ملک میں آنے دے کیا انہوں نے بحثیت مسلمان کچھہ ایسا کیا نہیں ملکی سلامتی ان کی نزدیک زیادہ اھم ھے نسبتاٌ دوستی ۔ ملک کے ساتھہ مخلص ھےجواب دے ۔یاتریوں کی آڑ میں کالی بھیڑیں بھی ان میں شامل ھو سکتی ییں زیادہ دور مت جاٸیں کلبھوشن یادیو اس کی زندہ مثال ھے۔ جس کو پھانسی کی سزا پاکستان کی فوجی عدالت اور عالمی عدالت بھی دے چکی ھے ۔ جس پر عمل درآمدابھی ھونے جا رھا ھے ۔ کب یہ ابھی تک سوال بنا ھوا ھے ۔؟ عقل کے ناخن لیں ۔سقوط ڈھاکہ اور اب کشمیر کی آزادی بھی خطرے میں ھے ۔ بھارت نے شق ٣٧٠ختم کرکے استصواب راۓ کا حق بھی بھارت نے چھین لیا بیرونی دنیا خاموش ھے ۔ ان حالات میں ھمیں پھونک پھونک کر قدم رکھنا چاھیے ۔ ”پھر کیا ہوت جب چڑیاں چگ گٸ کھیت “ ۔بیرون ملک کے علاوہ بھارت سے بھی یاتری آٸیں گے اتنا بڑا خطرہ مو ل لینا کہاں کیی عقل مندی ھے ۔باشعور آدمی تو نہیں لے سکتا ۔ پچھلے دنوں گرونانک یو نیورسٹی کا افتتاح ھوا ۔ وزیر اعظم صاحب نے کیا ۔ڈیم بنانے کی لیے امداد کی پیش کش کی سکھہ برادری نے بیشک وہ ہماری اقلیت برادری ھے ان کے حقوق ھیں ۔ مگر ملکی سلامتی اور استحکام سب سے پہلے اس کو ہر فیصلہ کرنے سے پہلے مقدم رکھیں ۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com