جدیدیت کی عقلی بنیاد اور شعورِ انسانی - مجیب الحق حقّی

مجیب الحق حقی نئی اصطلاحات میں آپ نے جدیدیت Modernism ضرور سنی ہوگی، یعنی جدّت پسندی۔ جدیدیت کو عام تو کیا اکثر تعلیم یافتہ بھی لفظی معنوں میں ہی قبول کرتے ہیں یعنی جدید بمعنی نیا new ۔گویا عام لوگوں کے خیال میں جدیدیت میں جدید سائنسی دریافتیں اور نئے طرز ِ زندگی اور فیشن وغیرہ شامل ہیں۔ جبکہ درحقیقت ایسا نہیں ہے۔\n\nحالانکہ جدیدیت کے رد میں ایک اور فلسفہ مابعد جدیدیت Post-Modernism بھی متعارف ہوچکا ہے، جس کے مطابق جدیدیت ناکام ہوچکی ہے اور انسان کا تعارف نئی بنیادوں پر ہونا ہے، لیکن ہمارے اس محدود اور سطحی جائزے کے حوالے سے ان میں خاص جوہری فرق نہیں بلکہ دقیق فلسفیانہ اختلاف ہے۔ آئیے ہم جدیدیت کوبہت سادہ طور پر سمجھتے ہیں۔\n\nجدیدیت:\nجدیدیت کی آمد سے پہلے دنیا میں الہامی اور خدائی تہذیب کا دور دورہ تھا۔ انسان کسی نہ کسی پیرائے میں خدا کی حاکمیت کو مانتا اور اپنے دنیاوی اور روحانی مسائل کے لیے اس کی طرف رجوع کرتا تھا۔ لیکن اٹھارویں صدی میں خاص طور پر صنعتی انقلاب نے سوچ کے نئے افق متعارف کرائے۔ اس لہر نے فنون لطیفہ سے سفر کرتے ہوئے پورے معاشرے کو متاثر کیا۔ تبھی جدید فکر یعنی جدّت پسندی یا جدیدیت modernism کے فلسفے نے سر اٹھایا اور کمزور پڑتے مذہب کی اتھارٹی کو للکارا اور انسان کو ہر طرح کی پابندی سے جو اس کی سوچ پر قدغن لگاتی ہو، آزاد ہوجانے کا راستہ دکھایا۔ یہ مذہب اور خدا سے کھلی بغاوت کی ابتدا تھی۔\n\nخدا کے بجائے انسان کی عقل کو رہبرمان لیا گیا۔ انسان بندے کے بجائے آزاد ارادے کا حامل قرار پایا۔ مذہب سمٹ کرگھر اور ذات میں مقید ہوگیا۔ معاشرے میں خدائی احکام اور پیغمبرکی جگہ فلسفی معتبر ٹھہرے۔ فلسفی معاشرے کے رہنما بن گئے۔ ہر چیز کا محور اب انسان ہوا۔ انسان کے لیے ریاست قائم ہوئی جہاں پر قوانین کا منبع رائے عامہّ بنی، یہی جمہوریت کہلائی۔ گویا قوانین اور معاشرتی اصول کی تدوین انسان نے خدا سے لے کر کلّی طور پر اپنے ہاتھ میں لے لی۔\n\nجدیدیت میں صرف اور صرف انسان ہی حقیقت ہے، وہ مختار و قادر ہے اور ہر طرح کی بیرونی رہنمائی سے بے پرواہ اپنی ذات میں مکمّل اور ہدایت سے مبرّا ہے۔ فلسفہ ٔجدیدیت کے مطابق انسان ہی مرکز ِکائنات ہے، خدا مرکز ِکائنات نہیں کیونکہ انسان کے وجود میں شک نہیں! انسان ہی عقل کُل ہے۔ اسی جدیدیت کی فکر سے ہی کمیونزم، سوشلزم، لبرل ازم، سیکولرازم، جمہوریت، تحریک ِ نسواں اور دوسرے نظریات نکلے۔ اس فکر کو جدیدیت یا ماڈرن ازم کا نام دیا گیاجس کی منشا یہ ہے کہ ماضی کے ہر آثار کو جسے عقل قبول نہ کرے، تاریخ کے کوڑے دان میں ڈال دینا چاہیے۔\n\nجدید انسان:\nجدید انسان وہ ہے جو صرف شعوری، حواسی، تجرباتی اور سائنسی ذرائع علم پر بھروسہ اور یقین رکھتا ہے کہ یہی سچ ہے اور ہر اس علم اور ہدایت کو مسترد کرتا ہے جس کی انسان کے حواس تصدیق نہ کرسکیں جیسا کہ وحی۔ اسی لیے وحی اور اس سے ماخوذ قوانین اس کی نظر میں دقیانوسی، غیر عقلی اور جہالت کے دور کے پروردہ ہوتے ہیں۔\n\nہمارے اس تجزیے کے حوالے سے یہ ضروری ہے کہ جدیدیت کے نظریے نے انسان کو جس ارفع مقام پر لا کھڑا کیا، اس کی تصدیق سائنس، منطق اور حقائق کی روشنی میں کریں کہ کیا واقعی انسان کا مرتبہ یہی ہے۔\n\nجدیدیت کی عقلی بنیادیں:\nاوپر درج سطور سے آپ نے ملاحظہ کیا ہوگا کہ اس فلسفے میں کس شدّ و مد سے انسانی شعور و عقل کو رہبرِاعلیٰ مانا اور ان کے فیصلوں کو سچ کا درجہ دیا جارہا ہے کہ جیسے یہی حتمی اور مستند سچّائی ہو۔ چلیے کچھ حقائق پر ایک نظر ڈالتے ہیں۔ یاد رکھیں کہ اگر کوئی فلسفہ حیات ٹھوس بنیادوں پر نہ ہو یعنی خود انسان اور اس کی عقل اور شعور کی ابتدا اور ماہیّت جانے بغیر اگر فلسفہ تخلیق کیا جاتا ہے تو اس کی بنیاد پر سوال ہمیشہ اٹھتے رہیں گے۔ فلسفی کے دلائل بےشک بڑا دقیق علم لیے ہوتے ہیں لیکن ان کی بنیاد کبھی مناسب اورمضبوط منطق سے خالی بھی ہوتی ہے۔\n\nفلسفی کی سواری اس کا شعور ہی تو ہے، لیکن اس شعور میں موجود فلسفی یہ کیوں نہیں جاننا چاہتا کہ: شعور کیا ہے؟ کیا وہ خود شعور ہے؟ جو کہ نہیں ہے کیونکہ وہ شعور کا حوالہ دیتا ہے، تو پھر وہ خود کہاں ہوتا ہے؟ کیا وہ ایک خیال abstract ہے جبکہ جسم اس کا لباس اور شعور اس کا ہتھیار؟ انسان شعور میں ہے یا شعور انسان میں؟ عقل کا منبع کیا ہے؟ کیا یہ یہاں سے پہلے بھی کہیں تھی؟ اگر تھی تو کہاں؟، اور نہیں تھی تو یہاں کیسے وارد ہوئی؟\n\nجدیدیت نے انسان کی عقل کو رہبر تو مانا لیکن دوسری طرف انسان اور کائنات کی اصل پر اسی عقل کے اُٹھائے ہوئے بےشمار سوالات کا جواب جدید افکار میں ندارد ہے۔ اس کی وجہ غالباً یہ ہے کہ ان کے فلسفوں کی بنیاد یہ ہے کہ انسان نہ کہیں سے آیا اور نہ ہی اسے کہیں جانا ہے بلکہ یہیں ظاہر ہوا اور اسے یہیں معدوم ہونا ہے۔\n\nآپ کو آگے چل کر اندازہ ہو جائے گا کہ آخر کیوں جدیدیت Modernism، مابعد جدیدیت Post-Modernism اور دوسرے نظریات، ان میں پسماندہ طبقات کے علمبردار اشتراکیت کو بھی شامل کر لیں، ہر طرح کے دعووں کے باوجود صدیوں میں بھی انسان کو فلاح نہ دے سکے۔\n\nاس صورتحال میں ایک سوال اٹھتا ہے کہ اس نظریے کی عقلی بنیاد میں کیا کوئی تضاد یا جھول ہے؟\nیہ ایک بڑے کینوس پر پھیلا ہوا سوال ہے جس کا جواب بھی وسیع پیرائے یعنی انسان کی حقیقی صلاحیتوں اور ان کی وسعت کار میں تلاش کرنا ہوگا۔ یعنی خود انسان کی تعمیری جبلّت اور اجزائے ترکیبی کی ماہیت کا علم اس کی ذہنی اُپچ کے پیرائیوں کا اظہار کرے گا۔ تو آئیے سب سے پہلے تخلیق کے پیرائیوں پر ایک نظر ڈالتے ہیں۔\n\nتخلیق کے مدارج:\nانسان کی اپنی ڈیزائن کردہ تخلیق کے تکمیل پذیر ہونے کے تین مدارج ہیں؛ ارادہ، عمل اور تشکیل پذیری، جو ہمارے حواس اور عقل و قوّت کے استعمال کا حاصل ہے۔ گویا خام شکل سے تکمیل تک مراحل کے تین درجے ہوئے:\nشے کی خام شکل میں موجودگی یا اس کا قدرتی منبع، پہلا مرحلہ\nاس کی تخلیق کسی علم اور عمل سے کی گئی، دوسرا مرحلہ\nانسان کی بنائی شے وجود پذیر ہوئی، تیسرا مرحلہ\nدیگر الفاظ میں یہ تینوں مدارج کسی بھی تخلیق کے وجود کی حقیقت آشنائی کے پہلے سے دوسرے پر محیط و متّصل تین دائرے ہیں۔ انسان کی ہر تخلیق ان تینوں مدارج ارادہ (پلاننگ)، عمل اور ظہور یا تکمیل کی عقلی اور تحریری تشریح رکھتی ہے۔ وجود خواہ جاندار ہو یا بےجان حقائق کے تین دائروں میں مقیّد ہوتا ہے۔ پہلا دائرہ مادّی وجود، اس پر محیط دوسرا دائرہ تخلیقی مدارج اور اس پر محیط تیسرا دائرہ تخلیقی علم کی تمام جہتیں بشمول خالق۔ خالق تخلیقی عمل کے تیسرے وسیع تر دائرے میں مقیم ہوتا ہے خواہ کوئی کیوں نہ ہو۔ فطری آثار کی سائنسی جانچ اُلٹ یعنی معکوس سمت میں چلتی ہے یعنی تحقیق کی ابتدا شے کی موجودگی یا تخلیق کی تکمیل سے شروع ہو کر تمام تخلیقی عمل کو پرکھتے ہوئے تخلیق کی ابتدا پر ختم ہوتی ہے۔ اس کے آگے کا مرحلہ خالق کی شناخت ہے۔\n\nاب ایک اور رخ پر توجّہ فرمائیں۔\nانسان بھی فطرت اور کائنات کا حصّہ ہے۔ انسان خود بھی موجود ہے، یہ سچائی ہے۔ کیسے پیدا ہوا اور بڑھا؟ اس کا علم سائنسی علوم سے کشیدہ سچائی ہوئی۔ اب انسان کے حوالے سے یہی عقل استفسار کرتی ہے کہ،\nانسان ظاہر ہونے سے پہلے کہاں تھا یا کیا تھا؟ اس کی خام کیا ہے؟ یہ کیوں بنا؟\nیہ منطقی اور سائنسی سوالات ہیں جن کا جواب بھی سائنس، عقل یا حواس کے بموجب تلاش کیا جائے گا کیونکہ یہ اُٹھے ہی انہی بنیادوں پر!\nمگر حقیقت یہ ہے کہ ہمارے حواس اور عقل جدید ترین سائنسی علوم کی روشنی میں انسان کے وجود کی تشریح طبعی مدارج تک ہی کر پاتے ہیں جبکہ طبعی وجود سے قبل کے مرحلے کے حوالے سے متعلق سوال ہر سائنسی و فلسفیانہ دماغ کو معطل اور زبان کو گُنگ کر دیتا ہے! آپ دیکھیں گے کہ جدیدیت، لبرل یا کوئی بھی جدید حیاتی فلسفہ بمع سائنسی علوم ان سوالات کا ایسا مکمل عقلی اور منطقی جواب دینے سے قاصر ہیں جو جدیدیت کے ممدوح انسان کو ہر طرح مطمئن کرسکے۔\n\nاس کا حل کیا ہے؟\nکیا ہم یہ سوال کوڑے دان میں ڈال دیں کہ انسان پیدائش سے پہلے کہاں ہوتا ہے؟ اس کی ہیئت کیا ہوتی ہے؟ اس کا شعور کہاں ہوتا ہے؟ اس میں زندگی کیوں آتی ہے؟\nجب ہر موجود شے سچ کے تین مدارج کے ساتھ انسان کے علم میں ہے یا ہو سکتی ہے تو خود انسان کیوں نہیں؟ یعنی انسان ظاہر ہونے سے پہلے خود کیا تھا؟ اس کا شعور کہاں تھا؟ زندگی کہاں سے وارد ہوئی؟ تخلیق کے ان مدارج کو جانے بغیر عقل کیسے مطمئن ہوگی اور جدیدیت کی آزاد خیالی کو منطقی جواز کیسے ملےگا؟\nاس کا جواب ہر اس نظریۂ حیات کو دینا ہوگا جو انسانیت کی رہنمائی کا دعویدار ہے۔ کیا جدیدیت یا مابعد جدیدیت اس کی وضاحت کر سکتے ہیں؟ نہیں!\n\nاس کی وجہ یہی ہے کہ ان مکاتب فکر کی ابتدا انسان کے جہاں ہے اور جیسے ہے کی بنیاد سے شروع ہوتی ہے جبکہ اس کے وجود سے پہلے کے مراحل کو نظرانداز کر دیا جاتا ہے کیونکہ اس کی مناسب عقلی تشریح ان کے پاس نہیں۔ ان ہی محدود زاویوں اور نامکمل علم کے بموجب تمام فلاسفر زندگی کے حقائق کا تجزیہ کرتے چلے آرہے ہیں اور نت نئے نظریات پیش کرتے رہے ہیں جن پر ریاستوں نے عمل بھی کیا۔ اب تو تاریخ خود ہی گواہ بن چکی ہے کہ ہر فلسفہ ایک دور کے بعد اپنی خامیاں ظاہر کرتا ہے اور فلسفی نئے نظریات کی تلاش میں لگے رہتے ہیں۔\n\nتو پھر انسان کا مقام متعیّن کرنے کی تحقیق میں خامی کہاں ہے؟ آئیے اس کی وضاحت کرتے ہیں۔\nانسان اپنی تخلیق پر کنٹرول رکھتا ہے جس کی وجہ سے انسان کی اپنی تخلیق کے تینوں درجے: یعنی(1) تخلیق کا شعوری علم اور قدرت، (2) تخلیقی پراسس یا طریقوں کا اطلاق اور (3) تخلیق کی تکمیل۔ انسانی حواس کی گرفت میں رہتے ہیں اور انسان مکمل تخلیقی علم کے ساتھ اپنی ہر تخلیق کا خالق بن کر عیاں تو ہوجاتا ہے مگر دوسری طرف انسان کی بنائی کوئی بھی چیز اپنے تیاّر کنندہ کو نہیں جان سکتی۔ فلسفوں کی ناکامیوں کی وجہ یہی سامنے آتی ہے کہ مغربی فلسفیوں کے پاس حقیقت کے تیسرے دائرے کا علم نہیں ہے یعنی عدم کا علم کہ جہاں انسان کا خام شکل میں ہونا منطقی ہے اور کسی خالق کی شناخت بھی اتنی ہی ضروری۔ لیکن یہاں یہ سوال اٹھتا ہے کہ انسان کس طرح عدم اور خالق کو جان سکتا ہے جبکہ اس کی اپنی تخلیق اس کو نہیں پہچانتی؟\n\nخالق کا عرفان:\nایک چڑیا اگر گھونسلہ بناتی ہے تو یہ اس کی تخلیق ہے۔ گھونسلہ پہلے صرف بہت سے بکھرے تنکے ہوتا ہے۔ اسی طرح انسان کی بنائی مشین پہلے خام لوہا ہوتی ہے۔ کیا گھونسلہ یا مشین جان سکتے ہیں کہ ان کو کس نے بنایا؟ یقیناً نہیں کیونکہ ان میں شعور نہیں ہے۔ گویا کوئی جاندار کسی بےجان کی تخلیق کرنے میں اپنا تخیّل تو طبعی شکل میں تخلیق میں منتقل کردیتا ہے لیکن اپنی ذات کاشعور نہیں کر پاتا، اسی لیے نہ ہی گھونسلہ اور نہ مشین جان سکتے ہیں کہ ان کو کس نے بنایا۔ جب تک کوئی تخلیق کار اتنا قادر نہ ہوجائے کہ اپنی تخلیق میں اپنی ذات کی پہچان کے عناصر پیوست کردے، اس کی تخلیق اس طور پر ادھوری رہے گی کہ وہ اُسے پہچان نہ سکے گی جبکہ کمال درجے کی تخلیق اور مخلوق وہی ہوگی جس میں اپنے خالق کو پہچاننے کی جبلّت بھی ہو۔\nاگرچہ انسان مصنوعی شعور اور ذہانت بنانے کا علم حاصل کرتا جا رہا ہے، پھر بھی فی الحال کوئی انسانی تخلیق اپنے خالق (انسان) کے وجودی پیرائے نہیں جان سکتی الِّا یہ کہ انسان کسی طرح مادّے سے خود انسانی شعور کو بنا کر اپنی تخلیق میں منتقل کرسکے! ایسی صورت میں ہی انسان کی بنائی چیز انسانی شعور کی رمق لے کر شاید انسان کوجان پائے لیکن یہ واضح رہے کہ اُس صورت میں اس کی وجہ خالق (انسان) اور تخلیق کی جبلّت کی کچھ نہ کچھ ہم آہنگی ہوگی۔ یعنی انسان کسی طرح اپنے علم، شعور یا وجود کے کسی گوشے کی رمق یا راز اپنی ہی تخلیق کے حوالے کرکے اسے اپنی ذات کی سمجھ کا وسیلہ دے دے توصرف اسی صورت میں انسانی ایجادات اپنے بنانے والے کی حقیقت جان پائیں گی، دوسرے لفظوں میں اپنے خالق کا عرفان حاصل کرلیں گی۔\n\nتخلیق اکبر:\nاب خالق کی ذات کی پہچان کے عناصر یا عنصر وہی مئوثر ہوں گے جو اس کی ذات سے ہی متعلق ہوں کیونکہ اسی طرح فطری طور پر مخلوق میں اور خالق میں ایک غیر مرئی ہم آہنگی پیدا ہوگی جس کے باوصف مخلوق کسی نہ کسی پیرائے میں خالق کو جان سکے گی۔ اب اس پہچان کے درجے کا انحصار خالق کی مرضی پر ہوگا کہ وہ کیا چاہتا ہے اور تخلیقی علم اور تخلیقی عمل پر کتنی قدرت رکھتا ہے؟ اس کو اس طرح بھی سمجھیں کہ انسان کی بنائی ہوئی چیزیں انسان کو نہیں جان سکتیں کیونکہ انسان اپنی صلاحیتوں اور حاصل علوم کے باوصف ان کی تکمیل پر اپنے اُس علم کے کمال پر پہنچتا ہے جو طبعیات تک محدود ہیں لہذا اس کی تخلیقات زیادہ سے زیادہ طبعی پیرامیٹر تک ہی محدود رہ جاتی ہیں۔ جبکہ دوسری طرف خود انسان کے اندر کیونکہ انسان کے خالق نے اپنی ذات کی صفات اور کچھ نادیدہ قوت ودیعت کر دی ہیں جس کی وجہ سے انسان اپنے خالق کو جاننے کی نہ صرف صلاحیت رکھتا ہے بلکہ اس کے وجود اور عدم وجود کے سوالات کے ساتھ ہی ہر فلسفۂ حیات کی ابتدا پر مجبور ہوتا ہے۔ گویا انسان کے خالق نے اپنی ذات کے حوالے سے بنیادی سوال انسان کی جبلّت میں پیوست کردیے ہیں۔\nقصّہ مختصر! اگر خالق نہیں ہے تو اس سے متعلّق سوال بھی معدوم ہوتا! ہم یہ سوال کرتے ہی کیوں ہیں کہ خداہے یا نہیں، یا خدا کو کس نے بنایا؟ یہی عالیشان تخلیق کی جیتی جاگتی مثال ہے۔ ہمارے علم کے پیرائے میں یہی تخلیق ِاکبر ہے۔ ابھی جدید سائنس کو بھی پتہ نہیں کہ خیال کیوں آتے ہیں۔ اسی لیے خدا سے انکار ہی غیرفطری ہے۔\n\nشعور:\nانسانی شعور کیا ہے؟ یہ بہت اہم سوال ہے کیونکہ شعور سائنسی طور پر موجود ہے! اب اگر شعور کا موجود ہونا قابل قبول ہے تو منطقی طور پر شعور کی بھی کوئی تخلیقی سائنس یا کیمسٹری تو ہوگی، تو وہ کیا ہے؟ کیا اس کا جواب جدیدیت یا جدید سائنس کے پاس ہے؟\nدرحقیقت انسانی و حیوانی شعور ایک پہیلی ہے جو جدیدیت اور الحاد کے مفکّرین و فلسفیوں کے لیے عذاب سے کم نہیں۔ ان کا مسئلہ یہی ہے کہ اس سے انکار بھی نہیں کرسکتے کیونکہ یہ عیاں حقیقت ہے، مگر آج تک کوئی اسکالر، کوئی فلاسفر، کوئی منکر خدا، کوئی سائنسدان شعور کی ماہیت کی تشریح نہیں کرسکا، نہ بتا پایا کہ یہ جانداروں میں کہاں سے اور کیوں آیا؟\nحقیقت شعور سے لاعلمی ہی وہ کمزوری ہے کہ جس کی وجہ سے فکرجدید کی اڑان صرف مذکورہ دو حقیقتوں کے دائروں میں ہی محو پرواز رہتی ہے جبکہ انسانی وجود کے حوالے سے کائناتی حقیقت درج ذیل تین پرَتی دائروں میں گردش کرتی مجموعی حقیقت ہے۔\nپہلادرجہ ذیلی سچائی (مادّہ) ہے جو موجود ہے یعنی مادّی وجودیت کا دائرہ۔\nاس دائرے پر محیط ایک اور دائرہ ہے جو حواسی اور شعوری سچائی یا حقیقت یعنی طبعی علوم کائنات کا دائرہ۔\nاور اس پر محیط الوہی علم کا لا محدود دائرہ، ایک ابدی، اُلوہی یا روحی سچائی ہے جو تخلیق کا اصل عالم ہے، جہاں ایک ارادہ ہے۔ بالکل اُسی طرح جس طرح انسان اپنی تخلیقی دنیا میں ایک طبعی خلّاقی کے دائرے میں ہوتا ہے۔\nجدید انسان دوسرے دائرے کے کنارے پر کھڑا، مگر آگے کے سامانِ سفر سے تہی دست مسافر ہے۔\n\nحقیقت اکبر:\nاپنے شعور کے تئیں انسان کے طبعی حواس کے لیے یہی اُلوہی عالم حقیقت اکبر ہوگا، مگر انسانی علوم کی وہاں تک نارسائی کی وجہ یہ ہے کہ اس وقت علوم کے میرکارواں جدیدیت کے پیروکار اسکالر و فلاسفر ہیں۔ انسان ان کے غیرحقیقی نظریات کی وجہ سے حقیقت اکبر تک نہیں پہنچ سکتا کیونکہ جدیدیت روح کو مسترد کرتی ہے اور شعور کی حقیقت سے بھی نابلد ہے جبکہ شعور روح سے منسلک ڈائمنشن ہے۔ یہ روح کی طرح ہمارے وجود کا غیرمرئی گوشہ ہے۔ گویا موجودہ صورتحال میں شعور کی تخلیقی جہتیں یا تخلیقی منازل کا علم ہی جدید سائنس کو حقیقت کبریٰ کی سمجھ کی طبعی قوّت دے گا۔ تو ثابت یہی ہوتا ہے کہ جب تک انسان مادّے اور شعور کا تعلّق، اس کی جہتیں اور کیمسٹری نہیں جان لیتا، وہ مادّی اور طبعئی طور پر حقیقت ِاکبر کی پرچھائیں تک بھی نہیں پہنچ سکتا خواہ طبعی سائنسی علوم آسمان کی بلندی تک ہی نہ جا پہنچیں۔ وجہ اس کی یہی ہوگی کہ انسانی عقل الوہی علوم کے حقائق تک رسائی کے ذرائع یعنی روحی خصوصیات کی امداد سے محروم رہے گی۔\n\nمنکرین کا مسئلہ:\nمنکرین کا مسئلہ یہی ہے کہ وہ علم کے اہم ذریعے یعنی وحی کو مسترد کرتے ہیں لہذٰا وہ روح اور روحانی صفات کی قوّتوں سے بےگانہ ہوجاتے ہیں جبکہ یہی واحد ذریعہ ہے جو ہر تخلیق کے منبع یعنی انسان کے خالق تک لے جاتاہے۔ یہی انکار ایک سختی سے پیوست تاثر ہوتا ہے جس کی وجہ سے ہر منکر فلاسفر عقل کی سرحد پر پہنچ کر ایک ناقابل عبور دیوار پاتا ہے تو راستہ بدل بدل کر حواسی حقائق کے بھنور میں بھٹکتا ہی رہتا ہے۔ یہی وہ مقام ہے جس کا تذکرہ شروع میں کیا گیا کہ انسان ان خود ساختہ رکاوٹوں کے تئیں اس دیوار کے اندر ہی سینکڑوں سال سے مقید ہے اور فلاسفر نئے نئے فلسفے سوچ رہے ہیں کہ اس بھول بھلیّاں سے کسی طرح نکل جائیں۔ جدیدیت کی غلطی یہ ہے کہ اس نے عقل کے بموجب روح کو مسترد کیا جبکہ خود عقل بھی روحی ڈائمنشن کا جز ہے۔ یہ واضح رہے کہ مذہب میں روح کا تصوّر سائنسی ہے کیونکہ شعور، لاشعور، تحت الشعور، جذبات، خیالات اور دوسرے غیر مرئی آثار جیسے خواب وغیرہ اسی سے منسلک ہیں۔ شعور بھی انسانی روح کی ایک جہت ہے جو انسان کے تخیل کے پیرائیوں کو وہ مہمیز عطا کرتی ہے کہ انسان حواسی سچّائی کا بیرئیر توڑ کر برتر تخلیقی اور روحانی علوم کی حدود میں جا پہنچتا ہے۔ اس عالم سے تعلّق انسان کو پس پردہ حقیقتیں آشکارا کرتا ہے جو اس کی روح کو آسودہ کرتا ہے۔ یہی تعلّق انسان کو اس کے ہر سوال کا جواب سمجھاتا ہے۔\n\nعقیدے کی فصیل:\nہر انسان اپنی عقل کی بنیاد پر ایک عقیدے کو قبول کرتا ہے اور انسان کے خیالات اسی خود مرتّب کردہ عقیدے کی فصیل میں ہی مقید ہوجاتے ہیں۔ کسی نئے خیال کی قبولیت کا انحصار اس قلعے کی وسعت اور کُھلے دریچوں پر ہوتا ہے۔ جدیدیت اور الحاد بھی عقیدہ ہے جس کی بنیاد عقل پر رکھی گئی ہے. اب ظاہر ہے کہ اس کی بےثباتی کا اس سے بڑا ثبوت اور کیا ہوگا کہ الحاد خود اپنی بنیاد یعنی عقل کی تشریح سے نہ صرف قاصر ہے بلکہ اسی عقل کے اُٹھائے سوالات کے جواب بھی نہیں رکھتا۔ یہی فکر کی بھول بھلیّاں ہے جس میں جدیدیت غلطاں ہے اور حقیقت کی طرف صرف دو منازل چڑھنے کے بعد ہانپ رہی ہے۔ انسان کی قیادت جب سے انسان (فلسفی ) کے ہاتھ آئی ہے، کبھی ذرائع پیداوار اور طبقات کی بنیاد پر ڈاکٹرائن بنتے ہیں، کبھی انسانی آزادی اور بنیادی حقوق پر نظریات تشکیل پاتے ہیں، کبھی کمیونزم اور سوشلزم کے نعرے لگتے ہیں اور کبھی کچھ کبھی کچھ، اب مابعد جدیدیت نے سب درہم برہم کردیا. تو انسان جتنا نظریاتی گمراہ آج ہے پہلے کبھی نہ تھا۔\n\nان گزارشات سے یہ عیاں ہوا کہ فلسفیانہ نظریات جیسے جدیدیت، مابعد جدیدیت اور الحاد وغیرہ حقیقت آشنائی کے صرف دو دائروں میں مقیّد سوچ ہیں جو انسان کو اس کی اصل بتانے سے قاصر ہیں۔ کئی سو سال میں جدیدیت کے پروردہ بڑے بڑے نامور سائنسدان، اسکالر اور فلاسفر ان ہی دو دائروں میں گھومتے اپنے نظریوں اور فلسفوں کی تشنہ کہانیاں سنا کر چلے گئے۔ آج کے اسکالرز بھی انھی غلام گردشوں میں گردش میں ہیں اور ان کے ساتھ جدید انسان بھی۔ انسانیت آج بھی نظریاتی طور پر یتیم ہی ہے۔\nاس کے مقابلے میں اسلام انسان کو فکر کے ایک کُشادہ تر ماحول کا ادراک عطا کرکے مکمل حقیقت آشنا بناتا ہے اور اس کو اس ماحول سے تعلّق کا موقع عطا کرتا ہے جہاں پر انسان کا لامحدود پیار کرنے والا خالق جلوہ افروز ہے۔ روح اس ذات باری کی ہستی کے کسی گوشے کا عکس ہوسکتی ہے جو انسان کو وہ ذرائع عطا کرتے ہیں کہ وہ ان سے اپنے خالق کو جان سکتا ہے۔ روح کا علم انسان کو کم دیا گیا ہے لیکن اتنا ضرور دیا گیا ہے کہ حقیقت اکبر کو سمجھ لے۔ اسی لیے جدیدیت کے مقابل اپنے وسیع تر افق کے ساتھ مذہب اسلام ایک عالیشان نظریہ حیات کے ساتھ آج بھی جلوہ گر ہے۔ میٹا فزکس اور فزکس کا بہترین امتزاج لیے یہ مذہب ہی ہے جو انسان کی اصل کیمسٹری کو جانتا ہے اور روح کی قوّت اور اس کی صفات و پرواز کے تئیں اس حقیقت کبریٰ تک انسان کو رسائی دیتا ہے جس کی جانکاری کے لیے جدیدیت اور جدید الحادی سائنس سو سال سے زائد سے بھٹک رہی ہیں۔\nہمیں یہاں چند لمحے رک کر سوچنا ہوگا کہ کیا ہم بھی ازل اور ابد سے اپنے تعلّق سے حقیقی طور پر واقف ہیں؟ ہم یہاں کیوں آئے اور کہاں جانا ہے۔ اس سوال کا جواب ہم کو بتا دے گا کہ باطنی طور پر ہم کیا ہیں؟ جدیدیت کے پروردہ یا اپنے خالق کو جاننے والے۔\n\nذرا سوچیں!\nتو دوستو، ہمیں اس سوچ کو خیرباد کہنا ہوگا کہ سائنس اور اسلام دو جدا چیزیں ہیں۔ یہ تاثر کہ سائنس برتر ہے، غلط ہے۔ جدید سائنس دراصل خالق کائنات کی برتر سائنس کی تشریح کر رہی ہے۔ کائنات کی تخلیق کو خالق کی سائنس سمجھیں، جو بہت برتر تخلیقی سائنس ہے جو کہ ہر طرح کی تخلیق میں جاری اور ساری ہے۔ انسان میں شعور، نفس، ضمیر اور عقل اس کی برتری اور پراسراریت کی مثال ہیں۔اسلام اِسی برتر سائنس کا نمائندہ ہے۔ جس دن مادّہ پرستی میں غرق اور بھٹکی ہوئی جدیدیت کو روح کی حقیقت کا سائنسی ادراک ہوجائے گا، جدیدیت اپنا رخ خود بدل لے گی۔ ہم انتظار کرتے ہیں، وہ بھی کریں۔\n\nامید ہے ان سطور سے قارئین کسی حد تک واقف ہو گئے ہوں گے کہ جدّت پسندی اور جدیدیت کی اصل جڑ root کیا ہے اور کتنی، فطری، منطقی اور عقلی ہے اور انسان کا اپنے آپ کو مر کزِ کائنات کہنا اس کی ذہنی اختراع ہی ہے جس کا کوئی ثبوت نہیں. یہ بھی غیر عقلی ہے۔

Comments

مجیب الحق حقی

مجیب الحق حقی

مجیب الحق حقّی پی آئی اے کے ریٹائرڈ آفیسر ہیں۔ اسلام اور جدید نظریات کے تقابل پر نظر ڈالتی کتاب Understanding The Divine Whispers کے مصنّف ہیں۔ اس کتاب کی اردو تشریح " خدائی سرگوشیاں اوجدید نظریاتی اشکال " کے نام سے زیر تدوین ہے۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com