بائیان کی ناکامی - ببرک کارمل جمالی

بلوچوں میں کراچی کے حوالے سے ایک چھوٹی سی تاریخی داستان بہت مشہور ہے۔۔۔۔۔۔۔ یہ داستان صدیوں سے بلوچستان کے باسی سنتے آ رہے ہیں۔۔۔۔۔

یہ اس وقت کی بات ہے جب کراچی شہر نیا نیا بن رہ تھا ۔۔۔۔ دنیا کے لوگ جوق در جوق کراچی کی طرف آرہے تھے۔۔۔۔۔۔۔ چھوٹی چھوٹی جھونپڑیاں اس وقت پکے گھروں میں بدل رہی تھی۔۔۔۔۔اس وقت چند بادلوں نے کراچی کو اپنا مسکن بنالیا تھا۔۔۔۔۔پھر ان بادلوں نے آہستہ آہستہ موتی برسانے شروع کردیئے تھے۔۔۔۔۔۔۔کراچی کا پانی سمندر برد ہورہا تھا۔۔۔۔ مسلسل دس دنوں تک نیلے آسمان سے موتیاں گرتی رہی۔

اس وقت کراچی کا سب سے امیر شخص بائیان تھا۔۔۔۔۔ وہ خوب موتیوں سے کھیلتا رہتا تھا خوشیاں مناتا رہتا تھا۔۔۔۔۔۔۔بائیان اس وقت اپنے گھر کی چھت پر چڑھ کر ٹینٹ لگا کر بیٹھ گیا۔۔۔۔۔۔۔ہر روز کراچی شہر کو ڈوبنے کا منظر دیکھتا رہتا ۔۔۔۔۔۔اور خوب انجوائے بھی کرتا۔۔۔۔۔۔ وہ زور زور سے چلا کر کراچی کے باسیوں کو بتاتا۔۔۔۔۔ ابھی فلانے شخص کا گھر گر گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔ ابھی فلانے کا گھر گیا ہے۔۔۔۔۔ ایک روز ایسی تیزی سے موتیاں برسی کہ بائیان کا گھر خود سمندر برد ہوگیا۔۔۔۔۔۔ پھر اس طوفان کا نام بھی (بائیان ء ھار) یعنی بائیان کی سیلاب میں ناکامی کا نام رکھ دیا گیا تھا۔

آج بھی بلوچستان میں طوفانی بارشیں ہوتی ہیں تو اس طوفان کا ذکر ضرور کیا جاتا ہے ۔۔۔۔۔ مگر کراچی کے سب اس طوفانی بارشوں کے بارے میں کچھ بھی نہیں جانتے ہیں حتیٰ کہ اس واقعہ کا ذکر تاریخی کتاب تاریخ بلوچستان میں بھی کیا گیا ہے۔

اس بار بھی محرم کی پہلی تاریخ تھی۔۔۔۔ جب بادلوں نے کراچی میں مسکن بنالیا ہے۔۔۔۔اور آہستہ آہستہ موتیاں برسنے لگے۔۔۔۔۔۔۔خدا کی قدرت! نہ جانے کہاں سے برستے بادل اٹھ کر کراچی پہنچ گئے۔۔۔۔۔ آئے اور دیکھتے ہی دیکھتے آسمان پر چھا گئے۔۔۔۔نہ کوئی گرج تھی۔۔۔۔ نہ کوئی چمک تھی۔۔۔۔۔ بس خاموشی سے چھوٹی چھوٹی موتیاں برسنے لگے۔۔۔۔۔۔۔ کراچی کے لوگ پہلے دوسرے دن خوب ان موتیوں سے کھیلتے رہے۔۔۔۔ سیلفیاں بناتے رہے ۔۔۔۔ خوشیاں مناتے رہے۔۔۔۔۔۔۔مسلسل چار دنوں تک ان موتیوں نے رکنے کا نام ہی نہیں لیا ۔۔۔۔کسی کو بائیان کا پتا نہ تھا۔۔۔۔ کہ وہ بھی اسی طرح ڈوب گیا تھا۔۔۔

ان موتیوں نےسڑکیں تالاب بنا دیں۔۔۔۔انہی موتیوں نے روڈوں پہ ندی نالوں کے مناظر پیش کرنے شروع کر دیئے۔۔۔۔۔۔۔ انہی موتیوں نے دکانیں بند کردیں۔۔۔۔۔۔۔ انہی موتیوں نے سمندر کنارے کشتیوں کی جھرمٹ کھڑی کر دی۔۔۔۔۔۔۔انہی موتیوں کی وجہ سے سیلفیاں تھم گئیں۔۔ ۔۔۔۔ انہی موتیوں نے سب کی خوشیاں پانی برد کر دیں۔۔۔۔۔۔موتیوں سے کھیلے جانے والے کھیل تھم گئے۔۔۔۔۔۔ گھر ڈوبنے لگے۔۔۔۔۔۔ کچی سڑکیں تنکوں کی طرح ختم ہونے لگے۔۔۔۔۔۔۔ بھاری سواریوں نے شہر کے اندر جانا بندکردیا۔۔۔۔۔۔۔مال مویشی منڈیاں بند ہوگئیں۔۔۔۔۔ سبزی منڈی سیلاب کا منظر پیش کر نے لگ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔ ان موتیوں کے سامنے جو کچھ آیا ان سب کو بہا کر لے گیا۔ بائیاں کے گھر کی طرح۔۔۔۔

کراچی تو پاکستان کا دل ہے۔۔۔۔۔ اس دل کا کوئی پرسان حال نہیں ہے۔۔۔۔ نہ وزیر اعظم۔۔۔۔نہ صدر ۔۔۔۔نہ وزیر اعلیٰ۔۔۔۔ نہ گورنر جنرل۔۔۔۔میرے دماغ میں کچھ سوالات جنم لے رہے ہیں۔۔۔۔۔آخر اتنا بڑا شہر ڈوب کیسے رہا تھا۔۔۔۔۔۔ کراچی کو ڈوبنے سے آخر کوئی کیوں بچانے نہیں آ رہا تھا۔۔۔۔۔۔کراچی کو کس نے دن دھاڑے پانی برد کردیا۔۔۔۔۔۔ اتنے بڑے سمندر کے قریب شہر آخر کیسے ڈوب گیا؟

کراچی مجھے کئی بار جانے کا اتفاق ہوا ہے۔۔۔۔۔۔کراچی جب میں پہلی بار گیا۔۔۔۔۔ تو اس وقت بھی کراچی میں چار پانچ دنوں تک موتیاں خوب برسے تھے۔۔۔۔۔مگر کراچی نہیں ڈوبا تھا۔۔۔۔ تمام پانی سمندر برد ہو گیا تھا۔۔۔۔۔ پھر کیا تھا چند سالوں بعد دوبارہ کراچی جانے کا اتفاق ہوا۔۔۔۔۔اس وقت بھی اسی اگست کا مہینہ تھا۔۔۔۔۔۔ میرے چھوٹے بھیا کا آپریشن ہوا تھا۔۔۔۔۔۔ مگر اس وقت بھی تین چار دنوں تک خوب جم کر بادلوں نے موتیاں برسائی تھی۔۔۔۔۔۔۔ہاں اس وقت بڑے بڑے نالے چھوٹے ہونے لگ گئے تھے۔۔۔۔۔ جس کی وجہ سے کچھ پانی سڑکوں پر جمع ہوگیا تھا۔۔۔۔۔۔۔پچھلے سال دوبارہ کراچی جانے کا اتفاق ہوا۔۔۔۔۔۔ کراچی کی کشادہ سڑکوں کو مزید چوڑا کیا گیا تھا ۔۔۔۔۔ اور ساتھ نکاسی آب کے سسٹم کے لیے چھوٹی چھوٹی نالیاں بنائی گئی تھیں۔۔۔۔۔۔بڑی بڑی سڑکیں تعمیر کرنے کے ساتھ نکاسی آب پہ کبھی توجہ نہ دی گئی تھی۔۔ ۔ جس کی وجہ سے اس سال دوبارہ کراچی ڈوب گیا۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */