دلیل پر تحاریر کی سینچری - نورین تبسم

100 کا ہندسہ زندگی کے کلینڈر میں جس موڑ پر بھی آئے، اپنے اندر ایک عجیب سی کشش اور خوشی رکھتا ہے جیسے ایک سنگِ میل چھو لیا ہو۔ یوں کہ جیسے بہت کچھ مکمل ہو گیا ہو۔

انسانی عمر میں 100 برس اگر ناممکنات میں سے ہیں تو ذہنی وجسمانی قوا کی مجبور ی اور لاچاری کی علامت بھی ہیں۔ رب کی بنائی انسانی جان کی مشینری کا سو برس تک پہنچنا محال ہے۔ اس میں شک نہیں کہ سو تو بہت دور کی بات ہے، ہم انسان تو اسی سے نوے برس بھی اپنے مکمل ہوش و حواس، جسمانی اور ذہنی طاقت کے ساتھ زندہ نہیں رہ سکتے۔ پچاس کا ہندسہ پھلانگتے ہی انسانی عمر میں تنزلی کا سفر شروع ہو جاتا ہے اور یہاں تک آتے آتے انسان رب کی طرف سے عطا کردہ محدود مہلتِ عمر میں بد سے بدترین اور بہتر سے بہترین نشیب وفراز سے گزر چکا ہوتا ہے۔ آسمانِ دنیا پر نئی کہکشاؤں کو دریافت کرنے اور ذہن کے زور پر ساری دنیا پر حکومت کرنے والے اپنی زندگی اور صحت کے حوالے سے یہاں آ کر اپنے ہی جسم سے شکست کھا جاتے ہیں۔

جو بھی ہو سب جانتے بوجھتے اور سمجھتے ہوئے بھی ہم اپنی زندگی کے معاملات اور مشاغل میں اعدادوشمار کو بہت اہمیت دیتے ہیں۔ مثال کے طور پر کرکٹ کے کھیل میں "نروس 99" کی اصطلاح بہت عام ہے۔ اور سو رنز پورے ہوتے ہیں، کھلاڑی اگلی ہی گیند پر آؤٹ بھی ہو جائے تو نہ صرف دیکھنے والے بلکہ وہ خود بھی اطمینان کا سانس لے کر واپس لوٹتا ہے۔

اب بات دلیل پر میری سو تحاریر کے سنگِ میل کی۔ دلیل ویب سائٹ کا آغاز جولائی 2016ء ہوا۔ اپنی کسی بھی تحریر کی اشاعت سے بےپروا دو ماہ کے عرصے میں بحیثیت قاری دلیل سے تعلق جڑا رہا۔ دلیل انتظامیہ کی جانب سے اگست 2016ء کو میری پہلی تحریر" گود کی گور" شائع کی گئی۔ اپنا نام اور تحریر اچانک سے دلیل ویب سائٹ پر دیکھ کرخوشگوار حیرت ہوئی۔ بس اُس کے بعد سے جو سلسلہ شروع ہوا وہ تادمِ تحریر رُکا نہیں۔ دلیل انتظامیہ کی مشکور ہوں کہ آج تک میری طرف سے بھیجی گئی کسی ایک تحریر کو بھی رد نہیں کیا گیا اور نہ ہی کسی ایک لفظ کی کانٹ چھانٹ کی نوبت آئی۔ دو سال کی مدت میں سو تحاریر کی مسلسل اشاعت کے اس سفر میں گر ایک ماہ میں دس سے زیادہ تحاریر شائع ہوئیں تو دلیل کی طرف سے کسی تکنیکی مسئلے کی وجہ سے ایک یا دو ماہ کے وقفے بھی ہوئے۔ دلیل پر شائع شدہ 100 تحاریر کے اس گلدستے میں جہاں میرے احساس کے کینوس پر رنگ بکھیرنے والے مختلف النوع موضوعات کی جھلک ملتی ہے، وہیں رب کی طرف سے دی گئی صلاحیت اور اہلیت کو بروئے کار لاتے ہوئے یہ تحاریر ایک قاری ہونے کے ناطے اپنے لکھاریوں کی محبت کا احسان چکانے کی ادنیٰ سی کوشش بھی ہے۔ میرے نزدیک لفظ کا قرض لفظ سے ہی ادا کیا جا سکتا ہے۔ سوشل میڈیا کی بدولت آج کل "سب کہہ دو" کا زمانہ ہے۔ جس کے مثبت کے ساتھ منفی پہلو بھی ہیں کہ ہم اپنی عمر اور دوسرے کے تجربےکے ساتھ مسابقت بازی سے لے کر اپنی انا کی سربلندی تک پیچھے نہیں ہٹتے۔

میری تحاریر تو بلاگ یا کتاب کے معیار اور اصول و ضوابط کے ایک فیصد پر بھی پورا نہیں اترتیں کہ نہ تو میں نے ڈھیر ساری کتب پڑھی ہیں اور نہ ہی بلاگ پڑھنے کا دعٰوی کر سکتی ہوں۔ میں نے تو شاید اتنے بلاگ بھی نہیں پڑھے جتنے لکھ چکی ہوں۔ میری کم علمی سے صرفِ نظر رکھتے ہوئے اپنے بلاگز پر ایک ہلکی سی مسکراہٹ کے ساتھ آپ کے قیمتی وقت کی خواہش رکھتی ہوں۔ "شاید کہ ترے دل میں اتر جائے مری بات"۔

دلیل ویب سائٹ اور اس کی انتظامیہ کے اعتماد کے لیے تہہ دل سے ممنون ہوں کہ دلیل پر اشاعت سے میری تحاریر کی ایک منظم فہرست مرتب ہوئی۔ زندگی نے ساتھ دیا اور دلیل ویب سائٹ نے آئندہ موقع دیا تو اس کے پلیٹ فارم سے اپنی اب تک کی بہترین تحاریر ضرور سامنے لاؤں گی۔ ان شاءاللہ ۔

"دلیل" پر2016ء سے شائع ہونے والی تحاریر

٭۔ 2016ء (34) ۔۔۔۔ اگست (1) ۔۔ ستمبر (10) ۔۔ اکتوبر (11) ۔۔ نومبر(6) ۔۔ دسمبر(6)۔

٭۔ 2017ء (55) ۔۔ جنوری (7) ۔۔۔ فروری (7) ۔۔۔ مارچ (7) ۔۔۔ اپریل (4) ۔۔۔ مئی (3) ۔۔۔ جون (4) ۔۔۔ جولائی (2) ۔۔ اگست (5) ۔۔۔ ستمبر (2) ۔۔۔ اکتوبر (6) ۔۔۔ نومبر (6) ۔۔ دسمبر (2)۔

٭۔ 2018ء (11) ۔ مارچ (2) ۔۔ اپریل (1) ۔۔ مئی (3) ۔۔ جولائی (1) ۔۔ ستمبر (1) ۔۔ اکتوبر (3)۔

۔۔۔۔

٭ 1) گود کی گور۔۔۔31 اگست 2016ء

۔۔۔۔

٭2) عورت ۔ پیر کی جوتی ۔۔ یکم ستمبر2016

۔۔۔۔

٭3) لفظ اور کتاب سے دوستی۔۔3 ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭4) آہ ہم عوام،واہ ہم عوام۔۔5 ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭5) مستنصرحسین تارڑ۔۔عکس سے نقش تک۔7 ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭6) تین لفظ۔۔8 ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭7) زندگی کا زیرو پوائنٹ۔9ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭8) اشفاق احمد اور 7 ستمبر کی رات۔۔بانو قدسیہ۔۔15 ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭9) ماں کا دُکھ۔۔19 ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭10) بیٹی اور اُس کا دُکھ۔25 ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭11) پچیس برس کا سفرِزندگی مکمل ہونے پر ماں کا احساس بیٹے کے نام۔29 ستمبر 2016

۔۔۔۔

٭12) چاند اور زندگی کی چاندنی۔یکم اکتوبر 2016

۔۔۔

٭13) سوکن۔۔2 اکتوبر2016

۔۔۔۔۔

٭14) سرقہ۔6اکتوبر 2016

۔۔۔

٭15) آفتِ ارضی۔8 اکتوبر 2016

۔۔۔

٭16) رازِ زندگی 9 اکتوبر 2016

۔۔۔۔

٭17) کتے، کتاپن اور ہماری خواہشات۔ 18 اکتوبر 2016

۔۔۔۔

٭18) سال گرہ۔19 اکتوبر 2016

۔۔۔۔

٭19) اکرامِ میت۔23 اکتوبر 2016

۔۔۔۔

٭20) منتظمِ اعلیٰ اور استعفٰی۔25 اکتوبر 2016

۔۔۔۔۔۔

٭21) دھرنے اور آج کا اسلام آباد۔۔29اکتوبر2016۔

۔۔۔۔۔۔

٭22) کٹر پنجابی،کٹر پاکستانی اورکٹر اُردو ادیب۔۔ 31اکتوبر2016۔

۔۔۔۔۔۔

٭23) تبدیلی کی لہر کی واپسی اور جوان خون۔2 نومبر 2016۔

۔۔۔۔۔۔۔۔

٭24) خودغرضی کی بھوک۔15نومبر2016۔

۔۔۔۔۔

٭25) نکاح۔۔کاغذ کہانی۔۔18 نومبر۔2016۔

۔۔۔۔۔۔

٭26) سیاسی حمام اور لولی پاپ کی سیاست 19۔نومبر۔2016۔

۔۔۔۔۔۔

٭27) ساتھ اور لباس کہانی ۔،20 نومبر 2016

۔۔۔۔۔

٭28) خاتون خانہ، کھانا اور اہلِ خانہ۔ 23 نومبر 2016۔

۔۔۔۔

٭29) موت کیا ہے۔۔9دسمبر2016۔

۔۔۔۔۔۔

٭30) بلاگ کیا ہے۔11دسمبر2016۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

٭31) تضاد۔۔14دسمبر۔2016۔

۔۔۔۔۔۔

٭32) ہم اور پودے۔25دسمبر۔2016۔

۔۔۔۔۔

٭33) بےنظیر، واہ زرداری، آہ زرداری ۔۔27دسمبر۔2016۔

۔۔۔۔۔۔

٭34) دلہن ایک رات کی۔31دسمبر2016۔

۔۔۔۔۔۔۔

٭35) فیصلے اور آخری فیصلہ۔۔3جنوری۔۔2017۔

۔۔۔۔۔

٭36) والدین کے ساتھ حسنِ سلوک۔6جنوری۔2017۔

۔۔۔

٭37) عورت اور تحفظ عدم تحفظ۔۔۔جنوری 8۔۔۔2017

۔۔۔۔۔

٭38) قیام پاکستان اور آج کے لکھاری –13جنوری 2017

۔۔۔۔۔۔

٭39) رات کے راز۔۔19 جنوری 2017

۔۔۔۔۔۔

٭40) روح وجسم۔۔25جنوری2017

۔۔۔۔۔

٭41) پچاس برس کی رام کہانی۔31 جنوری 2017

۔۔۔۔

٭42) راہِ رواں اور بابا صاحبا۔۔۔9 فروری 2017

۔۔۔۔۔

٭43) ہماری خوشیاں ہمارے غم۔۔۔13فروری2017۔

۔۔۔۔

٭44) جیم کا فساد۔۔۔15فروری 2017۔

۔۔۔۔

٭45) زندگی کیا ہے؟۔۔۔۔18فروری 2017۔

۔۔۔۔

٭46) اعراب القران۔۔۔23فروری 2017

۔۔۔۔۔

٭47) عورت نادان یا انجان۔۔۔25فروری2017

۔۔۔۔۔

٭48) فیض کِسے نئیں پایا۔۔۔27فروری 2017

۔۔۔۔۔

٭49) منیلا میں چند روز۔۔۔ 2 مارچ 2017۔

۔۔۔

٭50) شرک کا انکار،شکر کا اظہار۔۔۔5مارچ 2017۔

۔۔۔۔

٭51) سانپ سیڑھی کا کھیل۔۔9مارچ 2017۔

۔۔۔۔۔

٭52) قاری اور لکھاری۔۔12 مارچ 2017

۔۔۔۔۔

٭53) نیند اور موت۔۔17مارچ 2017۔

۔۔۔۔

٭54) ذرا عمرِرفتہ کو آواز دینا۔۔۔25 مارچ 2017

۔۔۔۔۔

٭55) لمبی جدائی۔۔۔29 مارچ 2017۔

۔۔۔۔

٭56) دائرے کا سفر۔۔2اپریل 2017

۔۔۔۔

٭57) انسان اور شیطان۔۔۔5 اپریل 2017

۔۔۔۔

٭58) برہنگی۔۔۔۔11 اپریل 2017

۔۔۔۔۔۔

٭59) بھریا میلہ۔۔۔28اپریل 2017

۔۔۔۔۔
٭60) ہم وہ ہرگز نہیں جو نظر آتے ہیں۔2 مئی 2017۔

۔۔۔۔۔۔

٭61) ہمسفر کہانی 12 مئی 2017۔۔

۔۔۔۔

٭62) اللہ اور ماں۔۔۔14مئی 2017۔۔

۔۔۔۔۔

٭63) قرآن پاک اور اللہ تعالیٰ کےنام ۔۔ یکم جون 2017

۔۔۔۔۔

٭64) موسم کہانی۔۔یکم جون 2017

۔۔۔۔۔

٭65) قرآن پاک میں تذکرۂ انبیاء۔۔۔17 جون 2017

۔۔۔۔۔۔

٭66) دلیل کا سفر اور کارواں کی تشکیل۔۔۔23جون 2017

۔۔۔۔۔۔

٭67) رمضان، روزہ اور ہم۔ 9جولائی2017

۔۔۔۔۔۔

٭68ٰ) ایک عورت ہزار داستان۔۔21جولائی 2017

۔۔۔۔۔۔

٭69) قلم کار اور تنقید نگار ۔۔4اگست 2017

۔۔۔۔

٭70) وطن کی مٹی گواہ رہنا۔۔11 اگست 2017

۔۔۔۔۔

٭71) فیروزہ دائی۔۔۔15 اگست 2017

۔۔۔۔

٭ 72) انقلاب اور اندھی عقیدت۔18 اگست 2017

۔۔۔۔۔

٭73) اپنا خیال رکھنا۔22اگست 2017

۔۔۔۔۔

٭74 ) سوال جواب۔۔27ستمبر2017

۔۔۔۔

٭75) انٹرنیٹ ۔۔29ستمبر2017

۔۔۔۔۔

٭76) کرب و بلا۔۔۔یکم اکتوبر 2017

۔۔۔۔۔

٭77) کچھ یادیں انشاءجی کی۔۔6 اکتوبر2017

۔۔۔۔۔

٭78) لاپتہ۔۔16 اکتوبر 2017

۔۔۔۔

٭79) رنگ باتیں کریں۔20اکتوبر2017

۔۔۔۔

٭80) ممتازمفتی اور وہ۔۔27 اکتوبر2017

۔۔۔۔

٭81) ممتازمفتی کی تحاریر سے انتخاب۔۔28 اکتوبر2017

۔۔۔۔۔

٭82) ممتازمفتی کی تلاش۔۔6نومبر2017

۔۔۔۔۔

٭83) علی پور کا ایلی سے اقتباسات۔۔9 نومبر2017

۔۔۔۔

٭84) ہیرامنڈی سے ہیرے تک۔۔13نومبر2017

۔۔۔۔۔

٭85) تنہائی۔۔14 نومبر 2017

۔۔۔۔۔

٭86) مرد وعورت کا رشتہ۔15 نومبر 2017

۔۔۔۔۔

٭87) خواب اور زندگی۔22 نومبر2017

۔۔۔۔۔

٭88) صدقۂ جاریہ ۔ یکم دسمبر 2017

۔۔۔۔۔

٭89) لباسِ مجاز ۔ 9 دسمبر 2017

۔۔۔۔

٭90) سجدہ ۔۔ 16مارچ 2018

۔۔۔

٭91) مستنصرحسین تارڑ کی کتابیں۔20مارچ 2018

۔۔۔

٭92) قیدی ۔۔ 28 اپریل 2018

۔۔۔۔

٭93) میکن ایک تاثر ۔۔ 3 مئی 2018

۔۔۔۔

٭94) اور نظر لگ گئی۔۔9 مئی 2018

۔۔۔

٭95) دردِ زہ۔۔14 مئی2018

۔۔۔

٭96) فیصلے کا دن 16 جولائی 2018

۔۔۔

٭97) سرکاری ملازم ۔۔ 30 ستمبر2018

۔۔۔

٭98) ماں کی ڈائری سے ۔ 13 اکتوبر 2018

۔۔۔

٭99) آٹوگراف۔۔17 اکتوبر 2018

......

٭100) دلیل پر 100 تحاریر ۔۔ دسمبر 2018
"سامان سو برس کا"

Comments

نورین تبسم

نورین تبسم

جائے پیدائش راولپنڈی کے بعد زندگی کے پانچ عشرے اسلام آبادکے نام رہے، فیڈرل کالج سے سائنس مضامین میں گریجویشن کی۔ اہلیت اہلیہ اور ماں کے سوا کچھ بھی نہیں۔ لکھنا خودکلامی کی کیفیت ہے جو بلاگ ڈائری، فیس بک صفحے کے بعد اب دلیل کے صفحات کی جانب محوِسفر ہے۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.