عامر لیاقت جو دکھ دے گا - زبیر منصوری

کپتان!
آ پ کو جن لوگوں نے کپتان بنایا، مانا اور آپ کے لیے دل و جان نذر کر دی، وہ عامر لیاقت جیسے نہیں تھے۔

کپتان!
آپ نے بیس برس ایک لفظ تبدیلی پر فوکس کیے رکھا، لوگوں نے آپ پر توجہ نہیں دی، مگر آپ ڈٹے رہے جمے رہے۔ آپ نے ایک بار کہا تھا کہ میرا ووٹر ابھی گلیوں میں کرکٹ کھیل رہا ہے۔ آپ نے قاضی صاحب کی شفقت پائی، معراج محمد خان جیسے لوگوں کو متاثر کیا، آپ کے لہجے کی قوت نےجسٹس وجیہہ جیسے بوڑھوں میں توانائی اور امید کو جنم دے دیا، کمزور ہوتا ہوا باغی جاوید ہاشمی سب چھوڑ کر آپ سے ہم آہنگ ہوا، میں نے اسد عمر جیسے ORGANISATION DEVELOPMENT کے ماہرین کو سب چھوڑ چھاڑ کر آپ کی کشتی میں سوار ہوتے پایا، میں نے آپ کے مؤقف کی قوت سے برسوں پہلے ایسے لوگوں کو متاثر ہوتے دیکھا جنھیں میں ذہین اور دانا مانتا تھا۔

مگر پھر یہ کیا ہوا کہ
آپ فواد چوہدریوں، نذر گوندلوں اور اب عامر لیاقتوں کی دلدل میں اتر گئے؟
آپ کے مخلص لوگ، وہ لوگ جنھوں نے آپ کو بے پناہ چاہا، جنھوں نے آپ کو پچھتر لاکھ ووٹوں سے نوازا، جو آپ پر سب نچھاور کرنے کو تیار تھے، آپ نے انہیں دل شکستہ کر دیا!

مگر میں جانتا ہوں کہ
آپ نے ایسا کیوں کیا؟ ملک و قوم سے تمام تر اخلاص کے باوجود آپ جانتے ہیں کہ آپ کے پاس یہ آخری الیکشنز ہیں، MAKE OR BREAK ، ''آب و ہوا'' جتنی آج سازگار ہے، پہلے کبھی نہ تھی ''چھتریاں'' میسر ہیں اور آپ اس موقع کو کسی قیمت کھونا نہیں چاہتے۔ کراچی خالی ہے اور عامر کی ایک پوزیشن بھی۔

آپ جانتے ہیں کہ
آپ کا وفادار ورکر اس بار بھی ناخوشگواری کے ساتھ ہی سہی، بہرحال آپ کے ساتھ ہے۔ اور آپ وہ کھلاڑی ہیں جو کسی قیمت پر یہ آخری ورلڈ کپ نہیں ہارنا چاہتا۔

یہ بھی پڑھیں:   پاکستان کو لیڈر چاہیے یا مینیجر؟ - محمد عامر خاکوانی

مگر ذرا سوچیے!
آپ کو آپ کی شفیق ماں کی قسم!
ذرا ایک بار سوچیے!
اگر آپ ان بہروپیوں کے ساتھ، ان کرپٹ لوگوں کے ساتھ، جیت بھی گئے تو کیا یہ لوگ خیبرپختونخوا کے اکیس چوروں کی طرح اپنی قیمت نہیں لگوا لیں گے؟ کیا عامر وہی نہیں جس نے میر شکیل جیسے شخص کو دھوکا دیا جس نے اس کو نہ جانے کیا سےکیا بنا دیا تھا؟ جو اے آر وائی، جو بول، جو ایکسپریس، جو ایم کیو ایم کسی سے وفادار نہیں رہا، ہر ایک کو چھوڑا اور پھر ذلیل کر کے چھوڑا، آپ چند ماہ اس نفسیاتی مریض کی منہ کی فائرنگ کا فائدہ ُاٹھا تو لیں گے، مگر اس کی جو قیمت چکانا ہوگی، وہ بہت بڑی ہوگی۔

میں آپ کا کارکن نہیں۔ مجھے یقین ہے کہ اگلے پانچ برس (یہ بھی شاید کچھ زیادہ ہوں) میں آپ کی گڈگورننس کا مزہ بھی سب چکھ چکے ہوں گے، مگر مجھے اپنے بھائی سیاسی کارکنوں کے جذبات کا احساس ہے۔ آپ نے عامر کو انسان سمجھ کر، اسے اور اس جیسوں کو گلے لگا کر اپنے ہر مخلص کو دکھ دیا ہے، اس دکھ کی بھی خیر ہے مگر جو دکھ عامر آپ کو دے گا، وہ پتہ نہیں آپ کے لیے کتنے قابل برداشت ہو ں گے۔

Comments

زبیر منصوری

زبیر منصوری

زبیر منصوری نے جامعہ منصورہ سندھ سے علم دین اور جامعہ کراچی سے جرنلزم، اور پبلک ایڈمنسٹریشن کی تعلیم حاصل کی، دو دہائیاں پہلے "قلم قبیلہ" کے ساتھ وابستہ ہوئے۔ ٹرینر اور استاد بھی ہیں. امید محبت بانٹنا، خواب بننا اوربیچنا ان کا مشغلہ ہے۔ اب تک ڈیڑھ لاکھ نوجوانوں کو ورکشاپس کروا چکے ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

  • غیر اللہ کی قسمیں کھانا جائز نہیں نہ غير الله کی قسمیں دینا جائز ہے . احتیاط کریں