خوش آئند فیصلہ - رانا اعجازحسین چوہان

پاکستان سپریم کورٹ کے 5 رکنی لارجر بینچ نے پاناما کیس کا تاریخی فیصلہ سناتے ہوئے وزیراعظم میاں محمد نواز شریف کو تاحیات نااہل قرار دے کر فوری عہدہ چھوڑنے کا حکم دیا۔ بینچ کے تمام ججوں نے متفقہ طور پر انہیں نااہل قرار دیتے ہوئے 25صفحات پر مشتمل تحریری فیصلے میں کہا کہ وزیراعظم صادق اور امین نہیں رہے،عدالت نے فیصلے میں میاں محمد نواز شریف، حسن، حسین، مریم نواز، ان کے داماد کیپٹن صفدر اور وزیرخزانہ اسحاق ڈار کے خلاف ریفرنس دائر کرنے کا بھی حکم دیا۔ اس فیصلے کے بعد میاں محمد نواز شریف اپنی ذمہ داریوں سے سبکدوش ہوگئے ہیں۔ جبکہ اسمبلی رکنیت سے نااہلی کے بعد میاں محمدنوازشریف پارٹی صدر بھی نہیں رہ سکیں گے، کیونکہ پولیٹیکل پارٹیز آرڈر2002ء کے تحت اسمبلی رکنیت سے نااہل شخص پارٹی عہدہ بھی نہیں رکھ سکتا۔

پاکستان سپریم کورٹ کے اس تاریخ ساز وفیصلے پر جہاں حکومتی اراکین ماتم کررہے ہیں وہاں پاکستان تحریک انصاف کے اراکین جشن منارہے ہیں جبکہ پاکستانی عوام سرزمین پاکستان سے کرپشن کا خاتمہ اور احتساب کا موثر نظام چاہتی ہے۔ ملکی وقار اور سا لمیت کو نقصان پہنچانے والے اور ملکی دولت لوٹنے والے ہر شخص کا بلاامتیاز احتساب، خواہ وہ کوئی سیاست دان ہو، جج ہو، جرنیل ہو، بیوروکریٹ ہو یا کسی بھی ادارے سے تعلق رکھتا ہو۔ اور بلاامتیاز احتساب کے عمل میں پہلا قطرہ یا پہلا قربانی کا بکرا چاہے کوئی بنے عوام کو اس سے کوئی سروکار نہیں۔ کیونکہ مملکت خداداد پاکستان میں شروع ہی سے احتساب کا سسٹم انتہائی کمزرور ہا ہے، جس کی وجہ سے یہاں برسر اقتدار آنے والے ملکی دولت بے دردی سے لوٹ کر ملک کی جڑیں کھوکھلی کرتے رہے، اور اس طرح بے شمار قدرتی وسائل سے مالا مال ہونے کے باوجود ملک نت نئے بحرانوں، معاشی تنزلی اور انحطاط کا شکاررہا۔ یہاں قرضے میں ڈوبے عوام بھوک و افلاس کی زندگی بسر کرنے پر مجبور، جبکہ حکمران طبقہ عوامی مسائل سے بے خبر اپنی عیاشیوں میں بد مست رہا، ان کی میگاکرپشن، بد عنوانی اور سفارش کے کلچر نے سب کچھ تباہ کرکے رکھ دیا ہے۔ حکمرانوں کی جانب سے کرپشن کے آگے بند باندھ کراس کی راہیں مسدود کرنے کی بجائے ہر نئے دور میں ان کو مزید وسعتیں دی گئی، یہی وجہ ہے کہ ملک کے بیشتر سرکاری شعبہ جات میں بدعنوان لوگ پیدا ہوتے رہے اور آج ان بدعنوان لوگوں کی بھرمار نظر آتی ہے، اگر کچھ نظر نہیں آتا تو حکمرانوں اور کرپشن کرنے والوں کو نظر نہیں آتا۔ آج صورت حال یہ ہے کہ ملک سود در سود قرضوں کے بوجھ تلے دبا ہواہے، پیپلز پارٹی کی حکومت کے اقتدار میں آنے سے قبل تک حکومتوں نے جو قرض حاصل کیے تھے ان کی مجموعی مقدار سے زیادہ پانچ سال میں قرض حاصل کیا گیا، اور اسی طرح مسلم لیگ ن کی حکومت نے بھی قرضوں کے حصول میں پیپلز پارٹی کے دور کا ریکارڈ توڑ دیا۔ یہ قرض حکومت میں آنے والے لوگ اس ملک میں حاصل کر رہے ہیں جس ملک سے سیاستدان، بیورو کریٹ، تاجر، سرمایہ کار اور دیگر حلقوں کے لوگ کئی سو کھرب ڈالر کا سرمایہ بیرون ملک لے گئے جس میں کالے دھن کی تعداد اور مقدار زیادہ ہے۔

اگر یہ دولت پاکستان میں واپس آجائے تو نہ صرف سارے قرضے ادا ہو جائیں بلکہ ملک خوش حال ہو اور غربت و افلاس کا جڑ سے خاتمہ ہو جائے۔ آج ہر ہر پاکستانی ایک لاکھ روپے سے زائد کا مقروض ہے۔ لوگ غربت کے باعث کہیں انفرادی اور کہیں اجتماعی خودکشیاں کر رہے ہیں۔ بے روزگاری، غربت، مہنگائی، بجلی اور گیس کی بدترین لوڈشیڈنگ، کرپشن، بدعنوانی، اور اقرباء پروری نے عوام کا جینا دوبھر کردیا ہے، بیس کروڑ عوام اکیسویں صدی میں بھی حقیقی بنیادی حقوق سے یکسر محروم اور جانوروں جیسی زندگی بسر کرنے پر مجبور ہیں۔ ان بیس کروڑ لوگوں میں اکثریت ایسے لوگوں کی ہے جو خط غربت سے نیچے زندگی بسر کررہے ہیں۔ انہیں کھانے کے لیے دو وقت کی روٹی، پینے کے لیے صاف پانی،رہنے کے لیے مناسب رہائش نصیب نہیں۔ ان کروڑوں خاندانوں کے افراد ہر سال کسی نہ کسی بیماری میں مبتلا ہو کر علاج کی سہولتیں نہ ہونے کے باعث موت کی نیند سو جاتے ہیں کیونکہ ان میں سے بیشتر کو صحت اور ہسپتال کی مناسب سہولتیں میسر نہیں۔ ان گھمبیر حالات میں ملک میں پروان چڑھی کرپشن سے ملک کا بچہ بچہ واقف ہے مگر پانامہ لیکس نے بہت سے لوگوں کو بے نقاب کرتے ہوئے ان کی کھربوں ڈالرز کی آ ف شور کمپنیاں سب کے سامنے نمایاں کردیں، جوکہ ٹیکس بچانے کیلیے کھولی گئیں تھیں، بعض سیاستدانوں اور بیورو کریٹس نے قومی خزانے کو لوٹ کر بھی آف شور کمپنیاں بنائیں۔ پاناما لیکس سکینڈل سے کچھ لوگوں کی جائز اور ناجائز سرمائے سے بیرون ملک خریدی گئی جائیدادوں اور شروع کیے گئے کاروباروں سے بھی پردہ اٹھا ہے، اس سے قبل سوئس بنکوں میں موجود پاکستانیوں کے دو سو ارب کی موجودگی کے انکشاف پر موجودہ حکومت نے یہ رقوم پاکستان لانے کا اعلان کیا تھا مگر اس پر ہنوز عمل نہیں ہوسکا۔

جس طرح ملک میں کرپشن کی رات سیاہ ترین ہوچکی تھی اس سے لگتا ہے کہ اب پانامہ کیس سے ملک میں روشن صبح، اور موثر احتساب کا آغاز ہورہا ہے، اور مستقبل میں پاکستان سپریم کورٹ کے اس تاریخ ساز فیصلے کی بدولت ملک سے کرپشن اور بدعنوانی کا خاتمہ ممکن ہوسکے گا۔ آج آئین وقانون کی بالادستی کے غیر متزلزل و پختہ عزم اور یقین و ایقان کے جذبوں سے لیس ہماری عدالتیں اگر اپنی یقینی موجودگی کا اظہار کر رہی ہیں تو یہ سنہری موقع عوام کو غنیمت جاننا چاہئے، اور احتساب کے سسٹم میں معاون بننے والوں پر تنقید کی بجائے عدلیہ کے مثالی کردار کو سراہنا چاہیے تاکہ مستقبل میں بھی احتساب کا یہ سلسلہ جاری رہے، بلاشبہ ملک چاہے کتنا طاقتور کیوں نہ ہو معتبر عدالتوں کے بغیر اپنا وجود برقرارنہیں رکھ سکتا، مہذب اور جمہوری معاشرے میں شخصیات نہیں بلکہ ملکی وقار اور ادارے اہم ترین ہوتے ہیں۔ اگر پاکستان سپریم کورٹ حقیقت چھپانے پر میاں محمد نواز شریف کو نااہل قرار نہ دیتی تو ملک میں کرپشن کا رواج بدستور قائم رہتا اورآئندہ کوئی ادارہ موثر احتساب کا آغاز نہ کرتا، اور اس صورتحال سے عوام پاکستان کی مایوسیوں اور مسائل میں مزید اضافہ ہوتا۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */