ناز بلوچ پر عمران خان کا نامناسب تبصرہ - آصف محمود

عمران خان کی کرپشن کے خلاف جدوجہد جتنی شاندار اور مثالی ہے، ان کے مزاج کا عامیانہ انداز اس سے زیادہ افسوسناک ہے. ایک سیاسی رہنما کو اپنی گفتگو میں کم از کم مہذب انداز اختیار کرنے کی کوشش ضرور کر لینی چاہیے.

ناز بلوچ آج پیپلز پارٹی میں چلی گئیں. اس پر تبصرہ کرتے ہوئے نرگسیت فرماتی ہے،
"اچھا ہوا چلی گئی، ہمارے کسی کام کی نہیں تھی".
اس واقعے پر تبصرہ شائستگی کے ساتھ. بھی کیا جا سکتا تھا. نامعقول طرز بیان ضروری نہیں تھا.

ناز بلوچ نے اپنے باپ سے اختلاف کرتے ہوئے تحریک انصاف کا ساتھ دیا اور ایک عرصہ میڈیا پر پارٹی کا مقدمہ لڑتی رہی. تجوریاں یا جہاز نہیں ہوں گے اس کے ہاں لیکن خلوص سے اس نے پارٹی کا ساتھ دیا. وہ اگر کسی کام کی نہ ہوتی تو پیپلز پارٹی کا وزیر اعلی اور فریال تالپور اس کے ساتھ نہ بیٹھے ہوتے.

کہا تو بہت کچھ جا سکتا ہے لیکن صرف اتنی گذارش ہے کہ عمران خان کم از کم اتنی تہذیب نفس تو کر لیں کہ خواتین کا ذکر کرنے کے آداب سیکھ جائیں.

ایک نجیب آدمی کی نشانی ہے کہ سابق رفقائے کار کا ذکر کرتے ہوئے وضع داری کا دامن نہیں چھوڑتا. جس شخص کو بنیادی قدروں سے ہی آگہی نہ ہو کہ خواتین کا ذکر کرتے وقت شائستگی کے تقاضے کیا ہوتے ہیں؟ اس ہر افسوس ہی کیا جا سکتا ہے.
افسوس ہے اس نرگسیت پر

Comments

آصف محمود

آصف محمود

آصف محمود اسلام آباد میں قانون کی پریکٹس کرتے ہیں، روزنامہ 92 نیوز میں کالم لکھتے ہیں، روز نیوز پر اینکر پرسن ہیں اور ٹاک شو کی میزبانی کرتے ہیں۔ سوشل میڈیا پر اپنی صاف گوئی کی وجہ سے جانے جاتے ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں