بے چارہ مرد کہاں جائے؟ خواجہ مظہر صدیقی

حق ہا..میرا بیٹا مجھ سے دور ہوگیا. خواتین کے عالمی دن پر اس نے مجھے ذرا یاد نہیں کیا. ماؤں کے عالمی دن کے موقع پر بھی وہ اپنی بیوی کے ساتھ ملک سے باہر تھا. میں اب سمجھ گئی ہوں، کہ میرا بیٹا اب میرا نہیں رہا. بس بیوی ملتے ہی اسی کا ہو کے رہ گیا ہے. پہلے ماں کے لیے تڑپتا تھا، بیوی کیا آئی، اس نے اس سے ماں کو بھی چھڑوا دیا. پہلے میری آنکھوں سے دور نہ جاتا تھا. اب مجھ سے آنکھیں چراتا ہے. اور پاس پھٹکنا گناہ خیال کرتا ہے. کئی کئی دن اسے دیکھ نہیں پاتی.

کسی سیانے نے صحیح کہا تھا کہ بیوی آتے ہی بہت جلد ماں کی جگہ چھین لیتی ہے. اور آج کل کی بیویاں تو ایسا کالا جادو کرتی ہیں، کہ ماں بیچاری اپنے ہی بیٹے کو شادی کے بعد ایک عجیب و غریب شے لگنے لگتی ہے. بیٹا ماں سے چڑنے لگتا ہے. بیوی کی آواز و انداز محبوب ہو جاتے ہیں. ماں کی آواز بدھی اور بے سری سی محسوس ہونے لگتی ہے. ماں کی باتیں فرسودہ اور خیال پرانے ہو جاتے ہیں. بیوی کے لچھن نئے دور سے ہم آہنگ معلوم ہوتے ہیں. ماں ابتدائی دنوں میں ہی قدیم اور بیوی جدید ہو جاتی ہے. ماں جو سایہ دار درخت ، رحمت اور دعاؤں کا خزانہ تھی. اب شادی کے بعد بیوی نصیب و مقدر بن جاتی اور خاوند پر غیر محسوس طریقے سے راج شروع کرتی ہے.

بہن کہتی ہے. بھابھی سیانی نکلی تھی. اس نے آتے ہی میرے سیدھے سادھے اور بھولے بھائی کو اپنا گرویدہ بنا لیا. مجھے لگتا ہے کہ میرے اکلوتے بھائی پر بھابھی کا جادو چل گیا ہے. میرا راجہ بھائی ہمیں نظر انداز کر کے بھابھی کا دم چھلا بن گیا ہے. پہلے سیر و تفریح کے لیے، شاپنگ اور دیگر امور کے لیے بھائی ہم سے مشورہ، رائے اور راہنمائی لیتا تھا. اب شادی کے بعد وہ بیوی کی فرماں برداری میں لگ گیا ہے. بلکہ اس کے ڈر سے ہمیں دیکھنا گوارہ نہیں کرتا. بھائی گونگا بہرہ اور اندھا تک ہو گیا ہے. اور نوبت یہاں تک پہنچی کہ وہ ایک ٹیلی فون کال کرنا بھی پسند نہیں کرتا. کال اب کون سی مہنگی ہے. چلو ایک میسج ہی کر دیتا کہ آج خواتین کا دن تھا. میرے شہزادے بھائی کے اوسان بھی اب خطا رہنے لگتے ہیں. خدشہ ہے کہ بھائی اس قدر خوف اور دہشت میں کہیں اپنا ذہنی توازن ہی نہ کھو بیٹھیں.

مجھے کبھی کبھی لگتا ہے کہ جیسے ہم نے اپنا بھائی بنا کسی رقم کے بھابھی کے ہاتھ بیچ دیا ہے. پہلے بھائی اپنی سالگرہ ہمارے ساتھ ہلے گلے میں مناتا تھا. ہمیں کسی بڑے ریسٹورنٹ میں کھانا کھلاتا تھا.اور قیمتی تحائف بھی دیتا تھا. اب... اب تو ہمارا نام سن کر جیسے اسے اوازاری سی ہونے لگتی ہے. بہن ٹھنڈی آہ بھرتے ہوئے کہنے لگی تھی ،کہ ہا..ہا... ہم اپنا بھائی کھو بیٹھے ہیں. بھابھی نے قبضہ مافیا والا کام کیا ہے. ہم بھائی کی بد نصیبی پر آنسو بہانے کے علاوہ اور کر بھی کیا سکتے ہیں. آج ماؤں کا دن تھا. کاش اس دن بھائی ہی یاد کر لیتا. ایک فون کال ہی کر دیتا. اس نے یہ بات پھر دہرائی. بھائی کی سنگدلی کی وجہ اور کوئی نہیں. یہ ہماری بھابھی ہی ہے. خدا ضرور بھابھی سے اسی دنیا میں پوچھے گا.

بیوی کہتی ہے کہ میرا خاوند اپنی ماں اور بہنوں کا دیوانہ ہے. شادی کے اتنے سالوں کے بعد بھی یہ مجھے اہمیت نہیں دیتا. چونکہ بہنوں کا راجہ ہے. تو اسی لیے ہر معاملے میں انہی سے مشورہ کرتا اور صرف ان کی مانتا ہے. اگر اسے ماں اور بہنیں اتنے ہی عزیز تھے تو پھر اس نے شادی کیوں کی تھی. کنوارہ رہ جاتا. کم از کم میں ایسی بے بسی کی زندگی سے تو بچ جاتی. میں اپنے خاوند پر حکمرانی کا کوئی حق ہی نہیں رکھتی. کیسی کم نصیب ہوں. کیا عجیب میری قسمت ہے کہ میں اپنے ہی خاوند کو اپنا نہ بنا سکی.

بیوی یہ بھی کہتی ہے کہ ان دنوں صورت حال یہ ہے کہ اپنے خاوند سے کچھ منوانا ہو تو میں اپنی اکلوتی بیٹی سے کہتی ہوں. وہ اپنی بیٹی کو ہرگز ناراض نہیں کرتے. اس کو تو ٹالتے بھی نہیں بلکہ بیٹی کو سر پہ چڑھا رکھا ہے. بیوی کی نسبت بیٹی کے لاڈ اور نخرے اٹھاتے ہیں. ماں اور بہنوں پر تو جان چھڑکتے تھے. اب ساتھ ساتھ بیٹی کو بڑی اہمیت دیتے ہیں. میری اپنے خاوند کی نظر میں کوئی قدر اور اہمیت نہیں. ماں اور بہنوں کا کیا ہوا جادو سر چڑھ کے بولتا ہے. اس کے لیے ماں، بہن اور بیٹی کی بہت اہمیت ہے. بیوی کی کوئی جگہ نہیں. خاوند کی خاطر اپنا سب کچھ قربان کیا. مگر یہ شخص ماں اور بہنوں کے شکنجے سے نکلے تو مجھے اہمیت دے.

کاش اس کا ضمیر جا گے اور کم از کم خواتین کے دن کے موقع پر تو اس کو یہ احساس ہو جائے، کہ میں ایک عورت ہوں اور اس کے گھر کی نگہبان اور اس کی شریک حیات ہوں. یہ اس خاض خواتین کے دن سے ہی صرف میرا ہو جائے..

اس صورتحال میں بےچارہ مرد کہاں جائے؟

Comments

خواجہ مظہر صدیقی

خواجہ مظہر صدیقی

خواجہ مظہر صدیقی بچوں کے ادیب، کالم نگار، تربیت کار و کمپیئر ہیں۔ تین کتابیں بعنوان نئی راہ، دھرتی ماں اور بلندی کا سفر، شائع ہو چکی ہیں۔ تجارت پیشہ ہیں، ملتان سے تعلق ہے

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */