دیپ- عثمان احمد خان

تمہارے دل میں جو دیپ چاہت کے جل اٹھے ہیں
یقیں ہے وہ میرے نام ہوں گے
اور ان دیوں سے نکلنے والی محبتوں کی حسین کرنیں
مری شبوں کو ضیا کریں گی
تمہارے ہونٹوں سے کھلنے والی یہ مسکراہٹ
مجھے حقیقت بتارہی ہے، مرا یقین بڑھا رہی ہے
محبتوں کو جگا رہی ہے، حسین نغمے سنا رہی ہے
مگریہ جاناں! خیال رکھنا
جو دیپ چاہت کے جل اٹھے ہیں
انہیں زمانے کی ہر بہکتی ہوئی نگاہ سے بچا کے رکھنا
محبتوں کی حسین کلیاں سکھانے والی
ہوا کے جھکڑ جو چل رہے ہیں
یہ دیپ ان سے بچا کے رکھنا
محبتوں کو جگا کے رکھنا
غموں سے خود کو بچا کے رکھنا
وفا کے دیپک جلا کے رکھنا

error: اس صفحے کو شیئر کیجیے!