کیسی آزادی؟ ثقلین مشتاق

ثقلین مشتاق چند روز پہلے14 اگست کا دن گزرا۔ حکمرانوں نے پرچشم کشائی کی، مختلف بیانات دیے، بہت نعرے لگے کہ ہم آزاد قوم ہیں۔ مجھے اس سب پر کچھ شرم بھی آئی اور کچھ ہنسی بھی۔\nساراسال عوام پر ظلم و ستم کر کے، مودی سے دوستی کی پینگیں بڑھا کر، اپنی آف شور کمپنیاں بنانے اور IMF سے قرضے لینے کے بعد عوام کی ہمددریاں حاصل کرنے کے لیے ان بیانات پر بقول خواجہ صاحب کچھ شرم ہوتی ہے کچھ حیا ہوتی ہے۔\nکیسی آزادی؟\nAPS سکول میں پھولوں جیسے بچوں کو شہیدکرنے، باچا خان یونیورسٹی میں ملک کے مستقبل کے معماروں کو مسمار کرنے، مائوں کی گودوں سے اُن کی لخت جگر چھیننے، وکلاء کی لاشوں پر سیاست کرنے، ماڈل ٹائون میں چودہ معصوم لوگوں کے قتل ہونے، قصور میں دو سو بچوں کے بےآبرو ہونے کا نام اگر آزادی ہے تو پھر اس آزادی کے پودے کی خوب نگہداشت کی گئی ہے۔\nآزادی محض زمین کا ٹکرا حاصل کرنے کا نام نہیں بلکہ بغیر کسی خوف، دباوْ اور دہشت گردی کے اپنے عقیدے کے مطابق زندگی گزارنے کا نام ہے۔\nجس قوم کے حکمران اُس کے فیصلے ڈالروں کی غرض سے دبئی کے فارم ہائوسز، لندن کے ہوٹلوں اور امریکا کے ایوانوں میں موجود کالی بھیڑوں سے کرواتے ہوں، جہاں ملک دشمنوں کو دندنانے کی اجازت ہو، جہاں عوام کے کھانے کے لیے دو وقت کی روٹی نہ ہو اور اشرافیہ کے کتے بھیPizza سے ناشتہ کرتے ہوں، جہاں قانون بڑوں کے لیے کھیل تماشا اور عوام کے لیے گلے کا طوق ہو، جہاں کسی شخص کو بغیر جرم کے پھانسی ہو جائے اور کئی قتل اور اربوں ڈالر کی کر پشن کرنے والے آزاد پھرتے ہوں، تو پھر کیسی آزادی؟ اور کیسی آزاد قوم؟\nیہاں آزادی پر بھی قبضہ مافیا کا راج ہے۔ اس نے آزادی کو اپنی لونڈی بنالیا ہے اور اْدھر غلامی کو ووٹوں کے بدلے عوام کو گفٹ کردیا ہے۔

Comments

محمد ثقلین مشتاق

محمد ثقلین مشتاق

محمد ثقلین مشتاق نیشنل یونیورسٹی آف سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی (نسٹ) اسلام آباد سے کیمیکل انجنیئرنگ کررہے ہیں. لکھنے پڑھنے کا شغف ہے، دلیل کے ذریعے اپنے خیالات قارئین تک پہنچاتے ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں