"خسارے کا سودا" - رعایت اللہ فاروقی

سادہ سی بات یہ ہے کہ بلوچستان میں نون لیگ حکومت کے خاتمے اور چیئرمین سینٹ کے الیکشن کے موقع پر ہم دیکھ چکے کہ پیپلزپارٹی فوج کے شانہ بشانہ کھڑی ہے۔ عمران خان اور ان کی پی ٹی آئی تو خیر سے شانہ بشانہ نہیں بلکہ فوج کی گود میں ہی جلوہ افروز ہے۔ اسی فوج کی خوشنودی کے لیے جماعت اسلامی بھی قیلولہ افروز ہے۔ مولانا فضل الرحمن کا فوج سے حالیہ جھگڑا 2018 کے انتخابات میں ان کے لیے مقرر کیا گیا حصہ حسب وعدہ نہ دینے پر ہے۔ عین لانگ مارچ کے دوران وہ بھی جنرل باجوہ سے ملاقات فرما چکے۔ ایسے میں نون لیگ نے سوچا کہ ووٹ کو عزت دو تحریک کا سودا کرکے وہ بھی "سواد اعظم" کا حصہ بن جائے تو اسی میں خیر ہے ورنہ ہاتھ کچھ نہ لگے گا۔ مال کی دلالی کے لئے چنا بھی تو ایک وہ جو صالحین کی اولاد ہے، دوسرا وہ جو قومی اسمبلی میں مشرف کو للکارنے کی تاریخ رکھتا ہے، اور تیسرا وہ جو فوجی اسلاف کی آل ہے۔ مگر اگلوں نے مال سونگھ کر صاف کہدیا

"باسی ہے، ہمیں نہیں چاہیے"

اب اس صورتحال میں اگر کوئی بھی لیڈر کہتا ہے کہ میں اینٹی اسٹیبلیشمنٹ ہوں لھذا میرا ساتھ دیا جائے تو یہ اکیسویں صدی کا سب سے بڑا جھوٹ کہلائے گا۔ کوئی بھی اینٹی اسٹیبلیشمنٹ نہیں۔ زمانہ وہ آگیا ہے کہ سواد اعظم کے حمام میں نواز اور زرداری چھوڑئیے طارق جمیل اور وینا ملک بھی سرشار کھڑے ہیں۔ سو ایسے دور میں اس خوش فہمی کا مزید شکار نہیں ہوا جاسکتا کہ پاکستان میں کوئی پرو اسٹیبلیشمنٹ یا اینٹی اسٹیبلیشمنٹ سیاسی تقسیم موجود ہے۔ اگر نون لیگ یہ کہے کہ اسٹیبلیشمنٹ کی چھتری تلے موجود جماعتوں میں سے سب سے بہتر ہم ہیں کیونکہ ہم ڈیلیور کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ لھذا ہمارا ساتھ دیا جائے۔ تو میں یہ بات تسلیم کرنے کو تیار ہوں، میں اسٹیبلیشمنٹ کی چھتری تلے موجود جماعتوں میں سے نون لیگ کو ہی چنوں گا۔ لیکن اگر نون لیگ آج کے بعد یہ کہتی ہے کہ ہمارا ساتھ اس لئے دیا جائے کہ ہم اینٹی اسٹیبلیشمنٹ ہیں تو اس بکواس کو مزید تسلیم کرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

میاں جی ! آپ نے لندن سے جو خطاب فرمایا وہ ووٹ کی عزت کے لیے نہیں تھا۔ بلکہ فوج کی طرف سے آپ کے دلالوں کو ٹھینگا دکھانے پر آپ کا ردعمل تھا۔ آپ اسٹیبلیشمنٹ کی چھتری تلے گھسنے کو بیتاب ثابت ہوچکے، وہ تو اگلوں نے آپ کو قبول نہ کیا تو آپ براستہ ٹویٹر انقلابی بن بیٹھے۔ اور اگلوں نے 48 گھنٹے میں آپ کے انقلاب کی ساری ہوا نکال کر رکھدی۔ آپ ووٹ کو کیا عزت دلوائیں گے، آپ تو خود ووٹر سے جھوٹ بول رہے ہیں۔ آپ نے تو ہم ووٹر سے ہی اپنی سودے بازی کی کوشش چھپانے کی کوشش کی۔ آپ نے ہماری آواز اور ہماری تحریروں کا سودا کرنے کی کوشش کی۔ آپ نے ہمارے خلوص کو لیلائے اقتدار کے گھونگرؤں پر وارنے کی کوشش کی۔ آپ کوئی انقلابی نہیں، آپ اقتدار کے بہت سے سوداگروں میں سے ایک سوداگر ہیں۔ اللہ کا شکر ہے آپ کا مال نہیں بکا، آپ نے خسارے کا سودا کرنے کی کوشش کی، آپ خسارے میں رہیں گے !

Comments

رعایت اللہ فاروقی

رعایت اللہ فاروقی

رعایت اللہ فاروقی سوشل میڈیا کا جانا پہچانا نام ہیں۔ 1990ء سے شعبہ صحافت سے وابستگی ہے۔ نصف درجن روزناموں میں کالم لکھے۔ دنیا ٹی وی کے پروگرام "حسبِ حال" سے بطور ریسرچر بھی وابستہ رہے۔ سیاست اور دفاعی امور پر ان کے تجزیے دلچسپی سے پڑھے جاتے ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */