کیا عینک لگا کرنماز پڑھ سکتے ہیں

عینک لگانے کی صورت میں اگر سجدہ صحیح طرح کیا جاسکتاہے تب کوئی حر ج نہیں۔ عینک لگا کر بھی نماز پڑھی جاسکتی ہے ۔اور اگر عینک لگانے کے بعد سجدے میں اور پیشانی اور ناک زمین پر صحیح طرح نہیں رکھی جاتی تو پھر عینک اتار کر نماز پڑھنی ہوگی۔

عینک (چشمہ) پہن کر دعا مانگنے میں تو حرج ہی نہیں دعا مانگ سکتے ہیں اور نماز بھی پڑھ سکتے ہیں بشرطیکہ سجدہ کرنے میں پیشانی اور ناک زمین سے لگ جائے اور چشمہ مانع نہ بنے۔رنگین لینز یا عینک پہن کر نماز پڑھنے میں کوئی حرج نہیں ہے۔

ہاں اگر عینک پہن کر ناک یا پیشانی نمازی کیلئے زمین پرلگانا دشوار ہو تو نماز سے قبل یا سجدہ کرتے وقت عینک اتارنا ضروری ہوگا۔بخاری: (812) اور مسلم : (490) میں ابن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: (مجھے حکم دیا گیا ہے کہ میں سات [اعضاء کی] ہڈیوں پر سجدہ کروں، اپنی پیشانی پر اور آپ نے اپنی ناک کی طرف اشارہ فرمایا، دونوں ہاتھ، دونوں گھٹنے، اور دونوں قدموں کے کناروں پر)