ریاستِ مدینہ اور قول و فعل - راجہ کاشف علی خان

میرا تو یہ نظریہ ہے!
"جدا ہو دیں سیاست سے تو رہ جاتی ہے چنگیزی"اگر سراج الحق اسلامی انقلاب کی بات کرے۔اگر مولانا فضل الرحمٰن خلافتِ راشدہ کے نظام کے قیام کی بات کرے۔اگر کوئی اور دینی جماعت اسلام کے نام پر پاکستان کو چلانے کی بات کرے۔تو کہا جاتا ہے یہ مولوی دین کے نام پر عوام کو بیوقوف بنا رہے ہیں!ابھی کل عمران خان نے کہا تھا یہ مولوی دین بیچ رہے ہیں!

لیکن جنابِ عمران خان کو ہر بات کا استثنیٰ حاصل ہے؟آپ ریاست مدینہ کی بات کریں تو دین فروشی نہیں ہوتی؟آپ ریاست مدینہ کی بات کریں تو سیاست مذہب کی بنیاد پر نہیں ہوتی
چلیں مولوی حضرات تو ستر سالوں سے صرف بول ہی رہے ہیں نا انہیں ابھی حکومت تو نہیں ملی۔جنابِ عمران خان آپ تو وزیراعظم جس طرح بھی بن گئے ہیں اس کو ایک طرف رکھ کر دیں!

آپ ریاستِ مدینہ بنا لیں۔ہمیں کیا اعتراض؟

لیکن حضور آپ نے 15 ماہ میں ریاستِ مدینہ کے کوئی خدوخال تو طے کیے ہی ہوں گے وہ قوم کو بتائیں کیا ہیں؟صرف ریاستِ مدینہ، ریاستِ مدینہ کی تسبیح پڑھنے سے تو ریاستِ مدینہ بنے گی نہیں!آپ کوئی ایک اصول قوم کو بتادیں جو ریاستِ مدینہ میں ہوتا تھا اور اُسے آپ نے بھی اپنی ریاستِ مدینہ میں لاگو کردیا ہو؟دنیا کی پہلی حقیقی اسلامی فلاحی ریاستِ مدینہ کے خلیفۂ اول حضرت ابوبکرؓ کا طرز عمل دیکھ لیں کیا تھا؟خلافت کا حلف اٹھایا، اگلے دن کپڑوں کی گٹھری اٹھائی اور بیچنے چل دیئے۔ حضرت عمرؓ سے سامنا ہو گیا تو پوچھا اے امیرالمؤمنین کہاں چل دیئے؟ فرمایا اگر میں اپنا کاروبار نہیں کروں گا تو کھاؤں گا کہاں سے؟ حضرت عمرؓ نے جواب امیرالمؤمنین ریاست کی بھاری زمہ داریاں کون اٹھائے گا؟ تو طے ہوا ایک عام مسلمان کی آمدن کے برابر خلیفۃ المسلمین کا وظیفہ مقرر کردیا جائے!جنابِ عمران خان کیا آپ کا وظیفہ بھی پاکستان کے ایک عام شہری کی آمدن کے برابر ہے؟؟

یہ بھی پڑھیں:   کم ازکم بھاشن دینا کم کردیں - وقاص احمد

آپ اپنی تقریر میں روز مثالیں پیش کرتے ہیں! ایک ہماری بھی سن لیں!

منبر رسول پر کھڑے ہوکر حضرت عمرؓ فاروق خطبہ دے رہے تھے، ایک اصحابی اٹھے اور کہا اے عمرؓ ہم آپ کا خطبہ اس وقت تک نہیں سنیں گے جب تک آپ وضاحت پیش نہ کردیں کہ آپ کے کُرتے میں لگا یہ اضافی کپڑا کہاں سے آیا؟حضرت عمرؓ فاروق نے اپنے بیٹے عبداللہ بن عمرؓ کی گواہی پیش کی تو وضاحت ہوگئی اضافی کپڑا کہاں سے آیا تھا اور اصحاب اکرام مطمئن ہوگئے۔
جنابِ عمران خان فارن فنڈنگ کیس 5 سال سے الیکشن کمیشن میں چل جارہا ہے آپ کے وکیل روز تاخیری حربے استعمال کررہے ہیں ۔ اب آپ کی زمہ داری ہے آگے بڑھیں اور حضرت عمرؓ فاروق کی سنت کو زندہ کرتے ہوئے ایسی گواہی پیش کریں جیسی حضرت عمرؓ فاروق نے پیش کی تھی تاکہ مثال قائم ہوجائے!سب کو یقین آجائے کہ ہاں ہاں یہ وہ لیڈر ہے جو ستر سالوں بعد پاکستان کو حقیقی اسلامی فلاحی ریاست بنائے گا۔

لیکن "جمے لعل تے ونڈے کولے"آپ کا کوئی ایک قول آپ کے کسی ایک فعل کے مطابق ہے؟انصاف پر مبنی معاشرے کی مثال آپ نے پیش کرنی ہیں!قانون سازی آپ کا کام ہے!آپ اپنا کام کر نہیں رہے اور عدلیہ سے فرمائشیں فرمائی جارہی ہیں کہ غریب اور امیر کو ایک نظر سے دیکھیں!خان صاحب آپ کی اپنی نظر میں غریب امیر برابر ہیں؟نہیں ہیں۔اگر ہوتے تو آپ بنی گالہ کو ریگولرائز نہ کرواتے اور جہاں غریبوں کی چھتیں گرائی گئی آپ بھی کہتے بنی گالہ کی تعمیر قوانین کے مطابق نہیں غریبوں کے ساتھ میری چھت بھی گرا دی جائے یا جو سہولت مجھے مل رہی ہے سب کو دی جائے!

آج آپ کس منہ سے کہہ رہے ہیں نوازشریف علاج کیلئے لندن چلا گیا اور غریب مر رہے ہیں؟غریب پہلے نہیں مررہے تھے؟ جو آج مررہے ہیں؟ اور اگر آج مررہے ہیں تو کس کی زمہ داری ہے؟
جنابِ عمران خان یہ آپ کی زمہ داری ہے!تاریخ سے سینکڑوں مثالیں پیش کی جاسکتی ہیں جو ریاستِ مدینہ میں ہوتا تھا آپ کے پاس اُس پورا تصور ہی موجود نہیں!ریاستِ مدینہ کا اولین اصول سود ناجائز قرار دیا گیا آپ سود کی شرح بڑھاتے جا رہے ہیں!لہذا مہربانی فرماکر سیاست کریں لیکن ریاستِ مدینہ کے نام پر سیاست نہ کریں آپ اس پاکیزہ اور مقدس تصور کی توہین کے مرتکب ہورہے ہیں!