پاکستان کا تقدس - محمدحسان

کٹ کی آواز کے ساتھ ابتدائی شوٹ مکمل ہوا۔ سرخ ریشمی فراک میں ملبوس خوبرو ماڈل کچھ دیر آرام کیلئے سیٹ کے ایک سائیڈ پر جا بیٹھی ۔ یہ تھائی لینڈ کا پرفضا مقام تھا ۔۔۔ جہاں پاکستانی اشتہار کے شوٹ کیلئے سیٹ لگایا گیا تھا ، کمپنی نے انڈین اور تھائی ایکسپرٹس کی خدمات بھی لے رکھیں تھی ۔ اشتہاری کمپنی کے سی ای اونے ماڈل کے کام کی تعریف کرتے ہوئے پوچھا : "تم کس ملک سے ہو ؟ " ازبک ۔۔۔ ماڈل نے پرجوش انداز سے جواب دیا .

"ارے واہ ۔۔ تم امام بخاری کے دیس سے ہو ؟" سی ای او نے گرمجوشی سے کہا تو ماڈل کے چہرے کا رنگ ایک دم تبدیل ہو گیا ۔۔۔ حیرت اور حیا کی ایک عجیب سی پرچھائی اس کے چہرے پر منڈلانے لگی تھی ۔۔ وہ قدرے ہکلاتے ہوئے بولی کہ" آپ کیسے جانتےہیں انہیں ۔۔۔ ؟ ""انہیں کون مسلمان نہیں جانتا ہوگا ۔۔۔؟ وہ عظیم ہستی تو ہمارے لئے انتہائی لائق احترام ہے" ۔۔ سی ای او کے لہجے میں احترام اور فخر جھلک رہا تھا ۔۔ کچھ خاموشی کے بعد سی ای او نے ماڈل سے پوچھا کہ تمھیں پاکستانی کیسے لگے ؟ اس کا جواب بڑا واضح تھا ۔۔"دنیا کے سب انسان ایک سے ہی ہوتے ہیں ۔ اچھے برے ہر جگہ ، آپ کے پاکستان میں بھی اچھے برے لوگ سب ہی موجود ہیں "۔یہ کہہ کر ماڈل خاموش ہو گئی ۔۔۔ مگر پھر مضبوط لہجے میں ایک ایسا جملہ بولا کہ سی ای او حیرت زدہ رہ گیا۔ "لوگوں کی بات نہیں کہ وہ کیسے ہیں مگر آپ کو شاید اندازہ نہ ہو کہ پاکستان ہمیں کتنا بہت پسند ہے ، . ہمارے دلوں میں آپ کے ملک کا بہت احترام ہے . ہم مکہ مدینہ کے بعد پاکستان کو سب سے مقدس سرزمین سمجھتےہیں ۔" میرے دوست سی ای او نے مجھے آپ بیتی سنائی تو کہا کہ حسان صاحب میری حیرت ختم نہیں ہورہی ۔۔ ایک ازبک ماڈل کے دل میں پاکستان کا اتنا احترام کیسے ہے ؟ میں نے میز پر ہاتھ مارتے ہوئے کہا کہ کہ سر کہانی ختم ہوئی مگر بات اب شروع ہوئی ہے ۔آپ کو پتہ ہے کہ ازبک ماڈل پاکستان کو مقدس کیوں سمجھتی ہے ؟ اس لئے کہ اسے یہ معلوم ہے کہ پاکستان دنیا کا واحد ملک ہے جو اسلام کے نام وجود میں آیا ۔

آپ اسلام کا نام پاکستان سے نکال دیں تو اس زمین کا سارا تقدس ختم ہو جائے گا اور آپ یہ جانتےہیں کہ اس زمین کے ٹکڑے کو سب سے پہلےکس نے "مقدس" قرار دیا تھا ؟ کس نے ؟ سی ای او کے چہرے سے لاعلمی عیاں تھی ۔ "سید مودودی نے ۔۔ !" پاکستان کے بنتے ہی سید مودودی نے اس زمین کو مقدس قرار دے دیا تھا اور کہا تھا کہ "ہمارے نزدیک یہ خطہ ارضی مسجد کی مانند ہے ۔۔۔ اس کے ایک ایک انچ کی حفاظت ہم پر واجب ہے ۔ " اگر مولانا مودودی پاکستان بنتے ہی اس زمین کو مقدس قرار نہ دیتے ، 6 جنوری 1948 کو ہی مطالبہ اسلامی نظام کی مہم نہ چلاتے تو آئین میں قراداد پاکستان مقدم نہ ٹھہرتی ۔۔سید مودودی سوشلزم کے اسیر دانشوروں پر اسلامی نظام کی حقانیت واضح کرکے شکست فاش نہ دیتے ۔۔ تو روس کے ستر سالہ جبر سے آزاد ہونے والی مسلم ریاستوں میں سید مودودی کی علمی فکری دعوت نہ پہنچتی اور وہاں کے مسلمان سید مودودی کی تفہیم القرآن ، سلامتی کا راستہ ، دینیات اور خطبات جیسی شہرہ آفاق کتب پڑھ کر دین سے اپنی وابستگی کو برقرار نہ رکھتے تو آج یہ ازبک ماڈل پاکستان کو مکہ مدینہ کے بعد سب سے مقدس سرزمین نہ کہہ رہی ہوتی ۔۔ جناب والا ازبک ماڈل کے الفاظ کے پیچھے سید مودودی اور انکی جماعت اسلامی کی ستر سالہ علمی فکر دعوتی اور فلاحی جدوجہد اور بیش بہا خدمات ہیں اور بتاوں ۔۔۔ ؟ یہ صرف ازبک خاتون کی سوچ ہی نہیں ۔۔۔ بلکہ یہ سوچ دنیا بھر کے اسلامی فکر کے حامل مسلمانوں کی بھی ہے ۔

دنیا بھر کی اسلامی تحریکوں نے سید مودودی کی فکر سے استفادہ کیا ہے ، وہ جانتےہیں کہ عالمی طاغوت کا مقابلہ کرنا ہو، سوشلزم ، کمیونزم ، سیکولرازم اور لبرازم کی یلغار کے آگے بندھ باندھ کر اسلامی خطوط پر اپنے معاشرے کا تحفظ کرنا ہو تو #حل_صرف_فکر_مودودی ہے ۔ ابھی حال ہی میں سمعیہ راحیل قاضی نے استنبول لائبری کی تصاویر شیئر کی ہیں وہاں سید مودودی کی ڈھیروں کتب ترکش زبان میں ترجمہ کی صورت میں موجود ہیں اور نوجوان لڑکے لڑکیوں کے زیر مطالعہ ہیں ۔ وہ جانتےہیں کہ #حل_صرف_فکر_مودودی ہے ۔ اس قبل جب قاضی حسین احمد ترکی جایا کرتے تو انکا عوامی استقبال ظاہر کرتا تھا کہ ترک عوام قاضی حسین احمد اور جماعت اسلامی کیلئے کس قدر عزت اور محبت کے جذبات رکھتے ہیں ، یو ٹیوب پر ویڈیوز ملاحظہ کریں آپ خود پکار اٹھیں گے حل صرف فکر موددی ہے ۔ میرا دوست سی ای او انتہائی انہماک سے سن رہا تھا اور میرے جوش میں اضافہ ہوتا جا رہا تھا ۔۔ نائنٹیز کی بات ہے ، دنیا بھر کی اسلامی تحریکوں کا اجلاس ترکی میں جاری تھا ۔پولیٹیکل اسلام نیٹ ورک کے اس اجلاس میں پاکستان سے قاضی حسین احمد شریک تھے ، مصر ، ترکی ، قطر ، سوڈان ، مراکش ، ملائیشیا ، بھارت ، بنگلہ دیش ، تیونس سمیت متعدد ممالک کے رہنماؤں نے قاضی حسین احمد سے کہا کہ پاکستان ہماری امیدوں کا مرکز ہے ۔ باطل قوتیں اس کی ایٹمی صلاحیت کے درپے ہیں آپ ساری توجہ اس کی حفاظت پر مرتکز رکھیں ۔

وہ جانتے تھے کہ #حل__صرف_جماعت_اسلامی ہے ۔ میرے پاس بتانے کو ابھی اور بھی اہم باتیں تھی مگر اس نے مسکراتے ہوئے لیپ ٹاپ کا رخ میری جانب کیا میں نے جب اسکرین پر اس کی ٹویٹ دیکھی تو وہاں تین ہیش ٹیگ جگمگا رہے تھے .
#حل_صرف_جماعت_اسلامی ہے ۔ #حل_صرف_سراج_الحق ہے ۔ #حل_صرف_فکر_مودودی ہے ۔