دُلہن ایک رات کی - نورین تبسم

زندگی، اے دُنیا کی زندگی!
تو ایک رات کی دُلہن ہی تو ہے، ہوش اُڑا دینے والے فریب کی خوشبو سے مہکتی، دسترس میں یوں کہ جیسے اب کوئی درمیاں دوسرانہیں،ہر پل نئے رنگ اور نئی چھب سے اپنی ذات کے بھید کھولتی۔

زندگی تو وہ مے اسرار ہے جس کا نشہ بن پیے ہی سرچڑھ کر بولتا ہے۔ کیا زاہدِ خشک اور کیا بادہ خوار، سب ترے در کے بھکاری۔ تِری اِک نگاہِ کرم کی آس میں، قربت کے خمار میں مسحور و مخمور۔ اتراتی ہے یوں کہ جہاں میں کوئی تجھ سا نہیں۔ ہاتھ تھامتی ہے کہ کبھی ساتھ نہ چھوڑے گی۔ ساتھ ہے تو اتنا قریب کہ سانس میں سانس مل جائے۔ اور جب آس کا فاصلہ رہ جائے تو اتنی چالبازی سے دور پھینکتی ہے کہ ٹھوکر کھانے والا اسے اپنی ہی کمزوری سمجھتا ہے۔ ایسی بےوفا محبوبہ جو خود بلاتی ہے، دور جانے نہیں دیتی اور پاس آتی بھی نہیں۔ رنگوں کی پچکاریاں بکھیر کر شرابور کر دیتی ہے اور خود دور کھڑی تماشا دیکھتی ہے۔ ایسی خوش گلو کہ اپنی آواز کے مدھم سروں سے کل عالم کو بےخود کردے اور انسان۔ اپنا شرف جو اس کافر ادا کی جان نکالنے پر قادر ہے، فراموش کر بیٹھے اور رینگنے والا بےضرر حیوان بن کر رہ جائے۔

یہی تو اس کا کمال ہے کہ لُٹنے والا سب لٹا کر بھی شانت۔ اور جب دو چار ہاتھ لب بام رہ جائے، یقین کی منزل سب آشکار کر دیتی ہے۔ زندگی تو فریب نظر سہی لیکن تو حقیقت بھی تو ہے، ایسی حقیقت کہ جس پر کھلی آنکھ سے چھو کر بھی یقین نہیں آتا۔ جیسے ہی آنکھ بند ہونے لگے، آنکھ کے نور کو چھو کر اس کے اندر اتر جاتی ہے۔ آنکھ کا یقین، عین الیقین، علم الیقین کے پائدان پر کھڑا انتظار کرتا رہا، اور حق الیقین سب ارمان حسرت بھری آنکھ میں سمیٹ کر رُخصت ہوا۔ سب فتح کرنے کا جنون انسان کو یہ بھلا دیتا ہے کہ یہ سنہری خواب گاہ دراصل جادو نگری ہے، فریب نگاہ ہے، وہ نگاہ جس کے بارے میں کہا گیا:
بےشک تو اس سے غفلت میں تھا، اب ہم نے تجھ پر سے پردہ اٹھا دیا تو آج تیری نگاہ تیز ہے۔ سورۂ ق، آیت 22

Comments

نورین تبسم

نورین تبسم

جائے پیدائش راولپنڈی کے بعد زندگی کے پانچ عشرے اسلام آبادکے نام رہے، فیڈرل کالج سے سائنس مضامین میں گریجویشن کی۔ اہلیت اہلیہ اور ماں کے سوا کچھ بھی نہیں۔ لکھنا خودکلامی کی کیفیت ہے جو بلاگ ڈائری، فیس بک صفحے کے بعد اب دلیل کے صفحات کی جانب محوِسفر ہے۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں