قرآن مجید کو کیسے سمجھیں؟ عظیم الرحمن عثمانی

مطالعہ قرآن کے دو مقاصد ہیں۔
.
1. تذکر
2. تدبر
.
تذکر کے لیے اس سے آسان کتاب کوئی نہیں. تدبر کے لیے اس سے مشکل کتاب کوئی نہیں. تذکر ایک بار نیک نیتی سے پڑھنے سے حاصل ہوسکتا ہے. تدبر کی کوئی حد نہیں. ساری زندگی تحقیق کرتے رہیں. قرآن حکیم کے خزائن اللہ کی توفیق اور قاری کے ظرف و علم کے مطابق افشاں ہوتے رہیں گے.
.
اِرشاد خداوندی ہے:
’’(یہ قرآن) برکت والی کتاب ہے جو ہم نے آپ کی طرف نازل فرمائی تاکہ وہ اس کی آیتوں میں غور کریں اور تاکہ عقل مند لوگ نصیحت قبول کریں۔‘‘ (ص، 38:29)
.
تذکر کے حوالے سے قرآن یوں گویا ہوتا ہے
’’اور بے شک ہم نے نصیحت قبول کرنے والوں کے لیے قرآن کو آسان کیا، تو ہے کوئی نصیحت قبول کرنے والا‘‘. (القمر، 54:17)
.
تذکر اور تدبر کے بتدریج سفر کو شروع کرنے کے لیے چند تجاویز درج ذیل ہیں. یہ کوئی حتمی تجاویز نہیں ہیں مگر وہ طریق ہے جسے میں نے خود اپنے لیے اپنایا اور فائدہ مند پایا. ان سے اختلاف کیا جاسکتا ہے اور کئی اہل علم اس ترتیب سے اختلاف رکھتے بھی ہیں. لہٰذا اسے ایک کم علم انسان کا ذاتی سفر اور ناقص تجربہ سمجھیں.
.
1. قران مجید کا سادہ ترین ترجمہ لے لیں جو آپ کو سمجھ میں آتا ہو. کسی خاص مسلک یا عالم کا ہونا ضروری نہیں.
.
2. ساتھ میں تفصیلی تفسیر نہ ہو بلکہ سادہ ترجمہ ہو.
.
3. ایک نوٹ بک لے لیں جس میں آپ نوٹ بنا سکیں.
.
4. اللہ پاک سے دعا کریں کہ وہ آپ کو اپنی کتاب سمجھا دیں اور کسی طرح کی ملاوٹ سے محفوظ رکھیں.
.
5. اپنے دل میں مصمم ارادہ کر لیں کہ آپ اس کتاب کو مسلکی عینک سے نہیں پڑھیں گے.
.
6. پڑھنے سے پہلے تمام فرسودہ خیالات اور نظریات کو اپنے ذہن کی تختی سے کھرچ پھینکیں اور یہ ٹھان لیں کہ اس الہامی پیغام کے سامنے اپنا سر جھکا دیں گے.
.
7. اللہ کا نام لے کر آغاز کریں. اتنا پڑھیں جتنا شوق سے پڑھ سکتے ہیں. عربی ساتھ پڑھیں تو بہت اچھا ہے ورنہ سادہ ترجمہ پڑھیں. رک رک کر سوچ سوچ کر پڑھیں. ایک خاص وقت مقرر کر سکتے ہیں تو کرلیں.
.
8. جو آیت پسند آئے یا سمجھ نہ آئے، اسے نوٹ بک میں لکھ لیں.
.
9. کھل کر سوال پوچھیں اور سوچیں. آیت کے متعلق جو اشکال پیدا ہوں، انہیں سوالات یا طالب علمانہ اعتراضات کی صورت میں آیت کے نیچے بریکٹ لگا کر لکھ لیں. یہ سوالات آگے جا کر قرآن خود حل کردے گا. اگر کچھ سوالات پھر بھی نہ سمجھ آئیں تو بعد میں اہل علم سے پوچھ لیجیے. اس وقت تک جواب پر راضی نہ ہوں جب تک وہ آپ کو قلبی و فکری طور پر مطمئن نہ کردے.
.
10. ایک دفعہ قرآن شروع کردیا ہے تو اب رکیے نہیں. شروع میں شیطان خوب بہکائے گا، قرآن کے مزاج کو سمجھنے میں کافی مشکل ہوگی مگر ہمت ہارے بنا رب سے مانگ کر پڑھتے جائیں. دس گیارہ سپاروں کے بعد آپ کو ان شاءاللہ شدید لگاؤ پیدا ہو جائے گا اور نتیجہ میں پڑھنا بہت اچھا لگے گا.
.
11. اسی طرح پہلی بار قرآن مجید کو پورا ختم کریں. چار سے چھ مہینہ میں یہ پوراہو جائے گا. ایک بار جب ایسے پورا ہو جائے تو پھر اس کے بعد دوسری بار پڑھیں گے اور اس بار تحقیق کے زاویہ اور بھی گہرے ہوں گے. عربی زبان کو سیکھنا، اس کی لغت کو دیکھنا، شان نزول کو سمجھنا، مختلف مفسرین کی آراء کا تقابل کرنا، مضامین قرآن کو الگ الگ دیکھنا وغیرہ اس میں شامل ہوگا
.
واللہ اعلم بلصواب

Comments

عظیم الرحمن عثمانی

عظیم الرحمن عثمانی

کے خیال میں وہ عالم ہیں نہ فاضل اور نہ ہی کوئی مستند تحقیق نگار. زبان اردو میں اگر کوئی لفظ ان کا تعارف فراہم کرسکتا ہے تو وہ ہے مرکب لفظ ’طالب علم‘. خود کو کتاب اللہ قرآن کا اور دین اللہ اسلام کا معمولی طالب علم سمجھتے ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */