انا مارچ کی بھینٹ چڑھتا کشمیر! شیخ خالد زاہد

آج ہم سینسرز کے دور میں زندہ ہیں، کہیں جائیں تو حفاظتی دروازوں سے گزرتے ہیں، بغیر دربانوں کہ دروازے خود بخود سینسرز کی مدد سے کھل جاتے ہیں، سینسرز کی بدولت برقی قمقمے کم روشنی ہونے کی صورت میں خود بخود جل جاتے ہیں اور ایسے بہت سارے نظام و آلات انہیں سینسرز کی مدد سے اہم ترین ذمہ داریاں نبھا رہے...