زینب کے مجرم - حافظ یوسف سراج

زینب کا قاتل پھانسی کے پھندے سے جھول گیا۔ ظاہر ہے، اس طرح تو ہوتا ہے، اس طرح کے کاموں میں۔ آدمی جو بوتا ہے، جلد یا بدیر وہ اسے کاٹنا ہی پڑتا ہے۔ زمانہ بہت دیر کسی کا قرض اٹھا نہیں رکھتا۔ ایک سفاک مجرم اپنے منطقی انجام کو پہنچا۔ خس کم جہاں پاک۔ زینب کیس ملکی تاریخ کا مہنگا ترین اور تیز ترین کیس...