کیا دنیا مہذب ہوچکی ہے؟ جمیل اصغر جامی

تاریخ کا کوئی بھی عہد ہو، وہ بنیادی انسانی جبلتوں کا زمانی اور مکانی اظہار ہوتا ہے۔ تمدن میں بھی وحشت کی صورتیں پنہاں ہوتی ہیں اور وحشت میں بھی متمدن رویے تلاش کیے جاسکتے ہیں۔ درحقیت تمدن اور وحشت کی یہ زمانی تقسیم ہی غلط ہے۔ کسی ایک عہد کو وحشت سے منسوب کر مزید پڑھیں

چند مسلم ممالک اتنی سی طاقت بھی کیونکر حاصل کر سکے؟ – حامد کمال الدین

سلسلۂ مضامین: ’’عالم اسلام کے گرد گھیرا؛ پوسٹ کولڈ وار سیناریو سمجھنے کی ضرورت‘‘ 4 عالم اسلام میں جو کچھ ’بڑے سائز‘ کے ملک پائے جاتے ہیں یا کچھ مضبوط فوجوں یا اہم سٹرٹیجک حیثیت کی مالک ریاستیں ہیں، ان کے ساتھ دشمن کی بےرحمی پچھلے سات عشروں کے دوران ایک حد سے نہیں بڑھ مزید پڑھیں

’پوسٹ کولڈ وار‘ سیناریو سمجھنے کی ضرورت (3) – حامد کمال الدین

دشمن صرف آپ کا ”آج“ نہیں دیکھتا کچھ بڑی مسلم آبادیاں اور کچھ مضبوط عسکری امکانات کی مالک مسلم ریاستیں – اپنے یہاں اسلام نافذ نہ ہونے کے باوجود – اسلام دشمنوں کی آنکھ میں کھٹکتی آئی ہیں۔ البتہ اِس ”مابعد سرد جنگ دور“ میں یہ اُن کی جارحیت کا نشانہ بھی ہو سکتی ہیں۔ مزید پڑھیں

’پوسٹ کولڈوار‘ سیناریو سمجھنے کی ضرورت (2) – حامد کمال الدین

کافر کی ہمارے خلاف جنگ کا پہلا محور: ’’مسلمان‘‘ کو کسی بڑی جغرافیائی اکائی کے طور پر روئےزمین سے ختم کر ڈالنا یہ جنگ جو عالم اسلام کے حق میں محض کچھ وقائع نہیں بلکہ ایک ’’دور‘‘ ہے، اور جس نے سرد جنگ ختم ہونے کے اگلے ہی دن جزیرۂ عرب میں ڈیرے لگا دیے مزید پڑھیں

’پوسٹ کولڈوار‘ سیناریو سمجھنے کی ضرورت – حامد کمال الدین

سرد جنگ کے خاتمہ کے ساتھ ہی، آپ دیکھ رہے ہیں، عالم اسلام کے متعدد خطے جنگ کا میدان بننے لگے۔ کچھ سٹرٹیجک مسلم خِطوں پر باقاعدہ فوجی قبضے مانند افغانستان، عراق، مالی (اور خلیج و مشرقِ وسطیٰ کی آبی گزرگاہیں)۔ کچھ جو پہلے سے مقبوضہ تھے ان پر ازسرنو مظالم مانند کشمیر و فلسطین مزید پڑھیں

بقا کی جنگ – قاضی حارث

پہلی اور دوسری جنگ عظیم کے بعد ایک دور سرد جنگ کا بھی شروع ہوا. یہ سرد جنگ دراصل نظاموں کی جنگ تھی جو ابھرتے ہوئے سرمایہ دارانہ نظام (کیپٹلزم) اور اشتراکیت (سوشلزم) کے مابین تھی جو بالترتیب امریکہ و سوویت یونین میں رائج تھے۔ یہ سرد جنگ سوویت یونین کے ٹوٹنے پر ختم ہوئی مزید پڑھیں