’’لائسنس ٹو کِل‘‘ اوریا مقبول جان

ریاست مدینہ کا تو ذکر کرتے ہوئے کسی بھی سیاستدان کو ہزار مرتبہ اپنے گریبان میں جھانکنا چاہیے‘ وہ تو اللہ کی حاکمیت کا اعلان اور اس کے قوانین کے تابع آخرت کی جوابدہی کے تصور سے عبارت ایک معاشرہ تھا جس کے کسی ایک چھوٹے سے تصور کی جھلک بھی کسی ریاست میں نظر آ جائے تو لوگ پکار اٹھتے ہیں کہ وہ دیکھو...