پاکستان بچانا ہے تو کراچی بچانا ہے - حبیب الرحمن

کراچی سے جمع ہونے والے ٹیکسوں کی ایک جھلک نے اہل پاکستان کے احساس کو جگایا یا نہیں، اہل کراچی کے دل کو سر سے پاؤں تک لرزا کر ضرور رکھ دیا۔ جس شہر کی صرف لیاقت آباد المعروف لالو کھیت کی مارکیٹ، پورے لاہور کی ساری مارکٹوں کے کل ٹیکسوں سے کہیں زیادہ ٹیکس ادا کرتی ہو تو شہر بھر کے بازار کتنا ٹیکس ادا کرتے ہونگے۔

اعتراف وہ ہوتا ہے جو مخالف کی زبان سے ہو رہا ہو۔ ملک کے ایک نہایت معروف صحافی جو اگر کراچی سے نہیں تو کراچی کی سب سے بڑی سیاسی پارٹی اور اس کے قائد کے خلاف نہایت تلخ رائے رکھتے ہیں اور اگر گہرائی میں اتر کر دیکھا جائے تو اس کے پس پردہ وہ اہل کراچی کیلئے لئے بھی کوئی اچھی رائے نہیں رکھتے، کل ایک ٹی وی شو میں اپنی پھٹی پھٹی آنکھوں کے ساتھ کراچی کی مارکٹوں سے ادا ہونے والے ٹیکسوں کا ذکر کر کے اس بات کے معترف نظر آئے کہ کراچی کے ایک ایسے علاقے کی مارکیٹ جس کے اردگرد متوسط طبقے سے بھی کہیں نیچے زندگی گزارنے والے افراد لاکھوں کی تعداد میں اپنی زندگی کے دن گزارنے پر مجبور ہیں اور جس مارکیٹ میں چند بڑے شاپنگ مالوں کے، سارے کاروباری دکانیں کھوکھوں جیسی ہیں۔

اس ایک مارکیٹ سے جمع ہونے والا ٹیکس پورے لاہور کی مارکٹوں سے جمع ہونے والے ٹیکسوں سے کہیں زیادہ ہے جبکہ لاہور کی مارکٹوں میں ایک ایسی مارکٹ بھی ہے جو ملک کی سب سے بڑی مارکیٹ ہے جس سے پورے پنجاب اور کے پی کے تک کو مال سپلائی ہوتا ہے اور جس کے گرداگرد لاہور کا سب سے امیر طبقہ رہتا ہے نیز لاہور کی یہ مارکیٹ جو جو ملک کی سب سے بڑی مارکیٹ سمجھی جاتی ہے اس سے وصول ہونے والا ٹیکس 19 کروڑ روپے ہے جبکہ کراچی کا ایک پلازہ جس کا نام فورم پلازہ ہے وہ سوا 3 ارب روپوں سے زیادہ ٹیکس ادا کرنے والوں میں شامل ہے۔

افسوس کی بات یہ ہے کہ جس شہر کا صرف ایک پلازہ سوا 3 ارب روپوں سے زیادہ ادا کرتا ہو اور ایک غریب آبادی کے درمیان واقع آبادی کا بازار 94 ارب، جو لاہور کے بازاروں کے کل ٹیکس سے بھی کہیں زیادہ ہو، اس شہر کی اگر حالت یہ ہو کہ وہ کچرے کا ڈھیر بنا دیا گیا ہو، جس میں ٹرانسپورٹ کا سرے سے کوئی سسٹم ہی نہ ہو، جہاں کی سڑکوں اور چاند کی زمین میں کوئی فرق ہی نہ رہ گیا ہو، جہاں کی سیاسی پارٹی کو بھتہ خور اور قبضہ مافیا کے خطاب سے نوازہ جاتا رہا ہو، جہاں کے نوجوانوں پر کوٹا سسٹم لگا کر ان کا معاشی قتل عام کیا گیا ہو، جہاں کے بسنے والے مقامی پولیس میں نہ لئے جاتے ہوں، کسی بڑے سرکاری عہدے پر تعیناتی ملک کی سکیورٹی کیلئے خطرہ سمجھی جاتی ہو، جس شہر کے لوگوں کو اس قابل بھی تصور نہ کیا جاتا ہو کہ وہ بلدتی نظام کی مدت مکمل ہوجانے کے بعد کمشنر بنائے جا سکتے ہوں، جن کو ننگا بھوکا کہنے والوں پر پورا پاکستان منہ میں تالے ڈال کے بیٹھا رہتا ہو اور جہاں کے باسی را کے ایجنٹ تصور کئے جاتے ہوں وہاں کے لوگ اگر اتنے ملک دشمن ہونے کے باوجود اپنی ایک دو مارکٹوں سے نہایت دیانتداری کے ساتھ پورے پاکستان کے بازاروں سے کہیں زیادہ ٹیکس ادا کرتے ہوں تو یہ خستہ حال اچھے یا جن کے پاس کھیتوں کھلیانوں، ملوں اور کارخانوں کے ٹھٹ کے ٹھٹ لگے ہوئے ہیں، وہ بہتر ہیں۔

جو شہر پورے پاکستان اور اہل پاکستان کو پال رہا ہو، اس کی حالت زار کچرا کنڈی بنا کر رکھ دیا جانا اگر پاکستان کے وفاق کی نظر میں انسانیت کی معراج ہے تو یہ معراج اسے مبارک۔ ممکن ہے کہ وفاق صوبائی حکومت کو ذمہ دار ٹھہرائے تو میرا استدلال یہ ہوگا کہ پاکستان کی ہر مارکیٹ جو ٹیکس بھی ادا کرتی ہے وہ صوبوں کو نہیں وفاق کے کھاتے میں جاتا ہے۔ اگر صوبہ شہر کی ضرورتیں پوری نہیں کرتا تو کیا وفاق کو بھنگ کا گلاس چڑھاکر ٹن ہو جانا چاہیے؟۔

ان تمام باتوں کا اگر تجزیہ کیا جائے تو کراچی کا اصل مسئلہ نہ امن و امان ہے اور نہ ہی صرف سیاسی یا ایم کیو ایم سے نجات حاصل کرنے کا۔ اگر بات محض امن و امان کی ہوتی تو 40 سال سے موجود رینجرز کس لئے رکھی گئی ہے اور مختلف ادوار میں نام بدل بدل کر آپریشن در آپریشن کے نتائج ہر مرتبہ صفر کیوں نکلتے ہیں۔ اگر مسئلہ سیاسی ہے تو اس مسئلے کیلئے عسکری طاقت کا استعمال کیوں اور اگر مسئلہ ایم کیو ایم تھی تو اب جب اس کی تکہ بوٹی کر کے چیل کووں کو کھلادیے جانے کے بعد سب کچھ کیوں ٹھیک ہو کر نہیں دے رہا۔ ثابت ہوا کہ مسئلے وہ نہیں جن کو بار بار بیان کیا جاتا ہے، مسئلہ کراچی کے وسائل پر غالب آنے کا ہے۔ جس ملک کی چند مارکٹیں اور پلازے پورے ملک سے زیادہ "چمک" دے رہے ہوں اس کے سامنے کس کس کی آنکھیں خیرہ نہیں ہوتی ہونگی۔

سندھ کے سیاسی وڈیرے، ملک کی سیاسی پارٹیاں اور کراچی میں موجود عسکری قوتیں کراچی کے مسائل سے زیادہ کراچی کے وسائل میں زیادہ دلچسپی لیتی نظر آتی ہیں جو ہر مسئلے سے بڑے مسئلے کا روپ دھارتا جا رہا ہے۔

بات محض امن و امان کی ہوتی تو اس شہر کی پولیس کو برطانیہ جیسی پولیس بنایا جاسکتا تھا، مسئلہ سیاسی ہوتا تو بلا امتیاز ہر پارٹی سے صرف عسکری ذہن رکھنے والوں کو سمندر برد کیا جا سکتا تھا اور اگر کراچی کی سب سے بڑی پارٹی ہی ہر مسئلے کے حل کی راہ میں رکاوٹ تھی تو 2018 کے بعد کراچی کے تمام مسائل حل ہوجانے چاہئیں تھے۔

پورا پاکستان ہی نہیں، دنیا جانتی ہے کہ پورا پاکستان ہر لحاظ سے کراچی سے کہیں زیادہ ان تمام بیماریوں کا شکار ہے جس کو جواز بنا کر کراچی میں سیاسی وڈیروں، جماعتوں اور عسکری قوتوں نے ڈیرے ڈالے ہوئے ہیں جن کا کراچی ہی کے طواف اور کراچی کی سیاسی جماعتوں کو کبھی گرانا اور کبھی اٹھانے کا ایک سلسلہ ہے جس کا کوئی اختتام نظر آکر ہی دیتا۔

اگر کراچی کو کبھی جماعت اسلامی، کبھی پی پی، کبھی ایم کیو ایم اور کبھی پی ٹی آئی کے حوالے کرنے کا سلسلہ جاری رہا تو اس شہر کے مسائل کبھی حل نہیں ہو سکیں گے اور ایک ایسا شہر جو اس ناگفتہ بہ حالت میں بھی پورے پاکستان کا پالن ہار بنا ہوا ہے، کہیں بین الاقوامی قوتوں کی آماج گاہ بن کر نہ رہ جائے۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */