اپنے آپ کو بہتر بنائیں - صدف خالد

آج کل بچے موبائل پر خوب گیمز کھیل رہے ہیں ۔ایک اچھی ماں ہونے کے ناطے مجھ کو بھی ضرور نظر رکھنی ہوتی ہے۔اور باری باری کھیلنا بھی ہوتا ہے۔اس میں ایک گیم ہے Find The Difference ، اسمیں کبھی پانچ، کبھی دس اور کبھی بیس ڈفرنس تلاش کرنے ہوتے ہیں، وقت بھی مخصوص ہوتا ہے۔مجھےیہ کھیل بہت پسند ہے۔تلاش کرنا اور دھونڈنا کیونکہ بیٹھے بیٹھے کھیل سے نبٹ جاتے ہیں ۔

اسی کو دیکھتے ہوئے اور کھیلتے ہوئے میں سوچ رہی تھی کہ ہمیں بھی اللہ نے رمضان کا وقت دیا اور شیطان کو بند کر دیا کہ ہم اپنے آپ کو تنہائی میں سوچیں، تلاشیں کہ ہم اصل میں کون ہیں، ہمارا مقصد کیا ہے؟ ہمیں اللہ نے کیوں پیدا کیا ہے؟ مقصود اپنی عبادت ہے(سورت الملک کی آیت ۲)۔ہم کو غلام پیدا کیا ہے، کیا کبھی ہم نے غوروفکر کیا کہ غلام کون ہوتے ہیں؟ غلام وہ جو آقا سے بھاگنے کے طریقے نہیں سوچتے بلکہ آقا کے حکم اور ایک اشارے کے منتظر رہتے ہیں، اب جب کہ رمضان ختم ہو چکا ہے، شیطان کھل چکا ہے، اس سے پہلے کہ ہم نے جوقرآن کا اور نیک اعمال کا حصار اپنے گرد لگایا ہوا ہے ،اسمیں شگاف پڑے، ہم نے اس حصار کو فصیل بنانے کے طریقے سوچ کر عمل بھی کرنے ہے، کیونکہ وہ کھلا دشمن ھماری تاک میں ہے، بس اب سے اگلے رمضان تک اپنے آپ میں پائی جانے والی کمزوریاں اور دنیا کی محبت کو نکال کر،اپنے آپ کو پہلے سے بہتر اورمضبوط مومن بنانا ہے ۔

متقی بننا ہے،ڈر اور خوف کا رشتہ بس اللہ سے برقرار رکھنا ہے، انا کے سارے بت گرا دینے ہیں۔،جنت کی طرف جانے والی شاہراہ پر جو قدم رکھے ہیں ،انکو شیطان کے وسوسوں سے الجھنے سے بچانا ہے ۔مایوسی کے اتھاہ اندھیروں میں اللہ رسول کی محبت کے نور سے مزین، ،صحیح عقائد اور قرآن کی شمع بجھانے نہیں دینی ہے

حسن کردار سے نور مجسم ہو جا

کہ ابلیس بھی تجھے دیکھے تو مسلمان ہو جائے۔