اور ہم خوار ہوۓ تارک قران ہو کر - سمیر بن رحیم

آج پوری دنیا پر نظر ڈالنے کے بعد یہ نظر آتا ہے کہ اللہ تعالی کے سوا کوئی خدا نہیں جس کے سامنے ساری دنیا بے بس ہے۔ امریکہ, روس جیسے بڑے بڑے طاقتور ممالک جو اسلام میں رکاوٹ پیدا کرتے ہے, چین جو اس قدر اسلام کے خلاف ہو چکا تھا کہ قرآن جلادۓ گۓ۔

مسجدیں کبھی کبھی انہوں نے بند کروائی اور بات یہاں تک پہنچی تھی کہ اگر کسی غیر مسلم چینی کا کوئی اعضاء خراب ہو تو وہ مسلمان سے زبردستی وہ اعضاء چھین لیا کرتے۔
غرض یہ کہ مسلمانوں پر ظلم کیا جارہا ہے۔ ان ممالک کی بات چھوڑیں شام, فلسطین ,جو بھی ممالک ان کافروں کی ذد میں آۓ ہوۓ ہے ان مظلوموں کی کوئی بات بھی نہیں کرتا۔ ایسا کیوں ہے کہ مسلمان ممالک چھپ ہے, یہ بات واضع ہے جو اس وقت پوری مسلم قوم کا رہنما ہونا چاہیئے وہ شراب, فحاشی کاموں میں مبتلا ہے اور اس وجہ سے مسلمانوں کو بہت نقصان اٹھانا پڑتا ہے اب مسلمان ممالک کا حال دیکھو, کون ان مظلوموں کی بات کررہا ہے؟

ہر کوئی اسلام سے دور ہے, چاہے ان کی ذاتی زندگی ہو یا سماجی زندگی ہو۔ آج یہ ممالک پوری دنیا کے رہنما ہونے چاہیے مگر وہ تو دور کی بات یہ تو خود کے رہنما بھی نہیں۔ چند ممالک آج بھی اسلام کا ساتھ دے رہے ہیں جیسے ترکی وغیرہ ۔ آج پوری دنیا بے بس ہے, ایک وبا جسےکورونا وائرس کہا جاتا ہے, نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لیا ہے۔ یہ کیسی حالت پیدا ہوگئی؟ کسی کو کچھ سمجھ ہی نہیں آرہا, خواہ وہ مسلم ہو یا غیر مسلم۔

ایسا تو ہونا ہی تھا, انسان جب حقیقی معبود سے منہ موڈ دیتا ہے تو اسے عذاب الٰہی کا ذیاده انتظار نہیں کرنا پڑتا۔ دراصل وجہ یہ ہے, معزز دوستو, کہ جو انقلاب ہمہ گیر ہدایت انقلاب, آفرین پیغام, عالمگیر اور ابدی کتاب, سر چشمہ ہدایت, سرمایہ حیات, دائمی نظام, نعمت لاذوال اور کتاب بے مثال, قرآن مجید جو اللہ کا کلام ہے ہم نے اسے چھوڑا ہے۔ یہی وہ کتاب ہے جس کی وجہ سے دنیا میں انسانیت ہموار لگی, کائنات جھومنے لگی, امن کا پرچار ہوا اور ایک وقت وہ تھا کہ نگاہ مرد مومنہ ہی دشمن کے قدم اُکھاڑنے کے لیے کافی تھی اور اب یہ حالت ہے کہ ہماری نگاہ بزدلی کی وجہ سے اوپر ہی نہیں اُٹھتی۔ اور مسلمان قرآن کو بُھلا کر نصرت خداوندی خوچکے ہے۔

میاں کار ساز میں سامان نہ کر تلاش

ممکن ہیں خدا کی حضوری نصیب ہو

معزز قارئین کرام اور ملت اسلامیہ کے شاہین نوجوانو, ذرا سوچو, یہ ذلت کیوں اُٹھانی پڑتی ہے؟ اس کی وجہ یہ تو نہیں کہ ہم نے درس انقلاب کو بھلا دیا؟ ہاے افسوس! صدا افسوس! یہ ہم کیا کر بیٹھے قرآن سے دوری اور غفلت ہماری بربادی اور تذلیل کا سبب بنی۔

وہ زمانے میں معزز تھے مسلمان ہوکر

اور ہم خوار یوئے ترک قرآن ہوکر

قرآن ہم سے کہتا ہے کہ"یہ وہ کتاب ہے جس کو ہم نے تمہاری طرف نازل کیا تاکہ تم لوگوں کو تاریکیوں سے نکال کر روشنی کی طرف لاؤ"(سورہ ابراہیم) مگر ہماری مثال اسی مسافر جیسی ہے جس کی کوئی منزل نہیں ہے اور جو راہ سے بھٹکا ہوا ہو۔معزز دوستو غیر مسلم لوگ اسی بات پر یقین رکھتے ہے کہ قرآن مجید آج کی سائنسی دور میں ہماری مددگار ثابت ہو سکتی ہے, برطانیہ کے وزیر اعظم نے ایک بار یہ کہا تھا کہ "میری حکومت دیر تک قائم رہےگی کیوں کہ میں قرآن کا مطالعہ کرتا ہو۔"
لیکن ہمارا حال یہ ہے کہ

گنوادی ہم نے اسلاف سے جو میراث پائی تھی

ثربا سے زمین نے ہم کو دے مارا

بلاشبہ قرآن حق ہے, اسے دستور حیات بنانا چاہیئے۔ قرآن مسلمانوں کی جان ہے, ایمان ہے, سرمایہ حیات ہے, ضابطہ اخلاق ہے, فلاح و نجات ہے۔ اس میں سب راست ہے,جو مایوس ہوتے ہیں انہے حوصلہ دیتا ہے , بھٹکوں کو راہ دکھاتا ہے, نادانوں کو شعور بخشتا ہے۔ لیکن جب اس کی روشنی سے انسان دور چلاجاتا ہے تو کیا ہوتا ہے

قیمت نہ کچھ شان و شوکت رہی

نہ قوت نہ کچھ استقامت ری

یہی حال ہمارا ہے, بحیثیت امت ہم ختم ھوگئے۔ آج پوری دنیا میں مسلمانوں کو مظلوم قوم کی طرح سلوک کیا جاتا ہے۔ یہ حال اس قوم کا ہے جو دوسروں کے لئے آئی تھی جس کی ہیبت سے پہاڑ سمٹ کرائی ہوئے تھے, جس سے دریاؤں کے دل دیل جایا کرتے تھے, سمندر کانپتے تھے۔ لیکن ہمارا حال اب ایسا نہیں ہے, ہم بکھر گئے ہے, ہمیں اپنے اپنے فرقوں کے علاوہ کچھ نظر ہی نیہں آتا, اس کا سب سے زیاده اثر ہندوپاک پر پڑا ہے۔

اب ستم یہ ہے کہ مسلمان بے بس ہوچکے ہے اور مسلمان کے لیے غلامی سے بڑھ کر کوئی ذلت نہیں کاش ہم نے قرآن کو سمجھا ہوتا تو یہ روز بد دیکھنے کو نہ ملتے۔ اب تو قرآن مجید کی تلاوت محظ "برائے ثواب" کرتے ہیں, حالانکہ اس سے پوری دنیا کو چلانا تھا۔ اس کے احکام پوری دنیا پر نافذ کرنے تھے۔ پوری دنیا کی چھوڑو ہم تو خود پر اس کے احکام نافذ نہیں کرپاتے, شاعر مشرق علامہ اقبال کا قول ہے کہ

تیرے ضمیر پر جب تک نہ ہو نزول قرآن

گرہ کشا ہے رازی, نہ صاحب کتاب

الله قرآن کو ہمارے دلوں کے لیے بہار بنائے اور پوری انسانیت کے لئے رہبر و رہنما بنائے۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com