پلٹنا کیا ہے - ڈاکٹر عزیزہ انجم

زندگی کتنی عجیب سی ہوگئ ہے آجکل ۔وہ دن جن کے پلک جھپکنے میں گزرنے کی شکایت ہوتی تھی اور فرصت ایک نایاب شے بن گئ تھی وہی دن ہے کہ صبح سے شام نہیں ہو پاتی اور شام سے رات کا مرحلہ گزرے نہیں گزرتا ۔فرصت ہی فرصت ہے فراغت ہی فراغت ۔ دل کا عجیب حال ہے نہ اداسی کہ قید تنہائ کی رلا دینے والی قسطیں دیکھ کر غم غلط کیا جائے نہ اندر کے دکھ کا مداوا کرنے کیلئے فیملی فرنٹ سے محظوظ ہونے کی طلب

۔ٹی وی وہی گھسی پٹی خبریں دکھانے میں مصروف ہے ۔بے حس اور سفاک حکمران طبقے کی کانفرنسز اور امداد کی تفصیل ۔مرنے والوں کے اعداد و شمار اور غریب عوام کی غربت کا مذاق ۔وہی سر کے بال شانوں پر بکھیری ہوئ اینکرز وہی ان کی دوپٹّے سے بے نیازی ۔ کسی کو تھوڑا خیال آیا تو کسی مذہبی فرد کو بلا کر دعا کرالی یا عالم دین کا اپنے مطلب سے میل کھاتا بیان چلا دیا ۔
موبائل پر کتنی انگلیاں چلائ جائیں ۔اور موبائل بھی کیا دکھا رہا ہے ایک یکسر بدلی ہوئ دنیا ۔وائرس سازش ہو بیالوجیکل ہتھیار ہو یا آسمان سے اتری ابابیل اس نے بلاشبہ دنیا بدل دی ۔علم اور سائنس کی معراج پرپہنچے ہوئے انسان کی بے بسی آشکار کردی ۔کہیں مردہ جسموں کی قطاریں ہیں کہیں آنے والے دنوں میں موت کے فرشتے کی گنتی کے اندازے ۔سر سے پاؤں تک لپٹا ہوا پلاسٹک کا لباس ۔جن چہروں کیلئے زیبائش کے سینکڑوں طریقے تھے جو رخسار غازوں سے گل انار بنتے تھے جن ہونٹوں کی سرخی کم نہیں ہونے دی جاتی تھی سب سخت ماسک میں چھپے ہوئے ۔ایک ہی آواز ہے تلقین ہے ایک ہی سمجھداری کی بات ہے گھر پر رہیں باہر نہ نکلیں ۔اللہ تعالی کی صفات پر غوروفکر قرآن کے مطالعے کے دوران کتنی بار ہوا لیکن اللہ کی صفت العزیز پر ایمان اور یقین تو شاید اب نصیب ہوا ہے۔ حق الیقین کی جو کیفیت اب ملی ہے کبھی نہیں تھی ۔

واقعی وہ اپنے فیصلے اپنے احکام بزور نافذ کرنے والا ہے ۔کون مجھ سمیت سارے دوڑتے بھاگتے لوگوں کو کان پکڑ کر گھر بٹھا سکتا تھا ۔کس میں ہمت تھی ہمارے نہ چاہنے کے باوجود ہمارے شیڈول مرتب کرتا ۔ہم تو اپنے اختیار کو خوب خوب استعمال کر رہے تھے۔ ہم روز سجا بنا گھر چھوڑ کچی پکی نیندوں کا خمار اور تھکن سے نڈھال وجود سنبھالے اگلے دن پھر کارزار حیات کے مورچوں پر چلے جاتے تھے ۔گھر ماسی کے حوالے بچوں کی تعلیم اسکول ٹیچرز اور ٹیوٹر کی ذمہ داری اور دین جتنا قاری صاحب آدھے ایک گھنٹے میں پڑھا دیں کافی ۔تربیت کیا ہوتی ہے بچوں سے تعلق کیسے بناتے ہیں ان دل کے ٹکڑوں کو زندگی خوبصورت بنانےکے راز بتانا اور اس کے مقصد سے آگاہ کرنا ہم میں میں سے کس کی نیند اڑاتا تھا اور اپنی مصروفیات کو تج دیکر اپنی ترجیح بناتا تھا ۔ پچھلے دنوں ایک خاتون فزیو تھراپسٹ سے بات ہوئ ۔کہنے لگیں صبح دوبجے تک کی جاب پھر گھروں پر مریض دیکھنا وہ گیارہ بجے رات گھر پہنچتی تھیں میاں بھی اسی پیشے سے وابستہ اور چار بیٹے ۔ پیسے کی فراوانی زندگی کی تمام تر لگژریز اور نعمتوں سے بھرا گھر اور ان نعمتوں کو بغیر کسی روک ٹوک کے برتتے ہوئے ام میچور بچے ۔ یہ آج کی پروفیشنل عورت کی بھی مصروفیت ہے اور نان پروفیشنل کی بھی ۔ شام ہوتے ہی شاپنگ مالز کا رخ ۔ہر نئ آفر اور نئ سیل پر دوڑنا اور بٹوے خوشی خوشی خالی کرنا ۔

بیس پچیس لاکھ کی شادی ڈیڑھ دو لاکھ کا شادی کا جوڑا اور ناقابل یقین قیمت کا میک آپ ۔ظاہر کو سجانا اور اس مصنوعی سجاوٹ کا پھل میٹھا نہ پاکر ڈیپریشن میں چلے جانا ۔ گھر مکینوں کی محبت بھری گفتگو اور تعلق سے محروم ایک دوسرے کی حق تلفی اور اپنی اپنی گردن کا ٹیڑھا پن ۔بچے ادب اور تعظیم کے معنی سے بھی ناواقف ۔ میاں بیوی ایک دوسرے سے ناخوش ایک دوسرے کیلئے اجنبی پاس رہ کر بھی دور محبت کے رمز سے نا آشنا ۔اپنی ذات کے خمار میں گم نفس کی پرستش اور عبادت کے ظاہری مظاہر سے سجی محفلیں ۔ کیا ہم سب ایسی ہی زندگی نہیں گزار رہے تھے ایک ایسی مادہ پرست زندگی جو ظاہر سے باطن کا سفر ہی طے نہیں کرنے دیتی اپنے آپ سے ملنے اپنے اندر جھانکنے روح کا خالی پن دور کرنے کا موقع ہی نہیں دیتی ہم سب اس مادہ پرست زندگی کے پرستار تھے کہیں جبرا کہیں خود اختیار کر دہ ۔ظاہری سبب کچھ بھی ہو یہ دنیا اسباب کی دنیا ہے لیکن مشیت اس ایک جبار کی ہی چلتی ہے ۔اختیار کی آزادی اب بھی ہے اور یہ جبر کچھ ہی عرصے کا سہی لیکن یہ جبری گھروں میں نظر بندی کیا یہ نہیں سمجھا رہی ہے ۔کس کس ضروری چیز کے بغیر زندگی گزر سکتی ہے اور ٹھیک گزر سکتی ہے ۔وہی گھر جو مکینوں کو ترستا تھا اب وہاں سب رہ رہے ہیں ۔ عقلمند اہل خانہ ذمہ داری مل بانٹ کر ادا کر رہے ہیں ایک دوسرے کے ساتھ وقت گزار رہے ہیں ۔ جن شوہروں کی شکلیں دیکھنے کو بیویاں اور بچے ترس جاتے تھے اب وہ چو بیس گھنٹے اردگرد پائے جاتے ہیں ۔

کیا ہر مصروفیت واقعی بہت ضروری اور ناگزیر تھی ؟کیا ہم سب کی زندگی کا رخ ہماری مصروفیات کا قبلہ صحیح سمت میں تھا ؟یا زندگی اس ساری مصروفیت اور بھاگ دوڑ کے علاوہ بھی کچھ تھی ؟زندگی کا کوئ اعلی اور ارفع مقصد بھی تھا ؟معبود حقیقی کی پہچان اور اس کے احکام کے مطابق اپنی اور اپنے اہل و عیال کی زندگی گزارنا کبھی زندگی کی جہد کا حصہ بھی بنا ؟ پیغمبری کے اعلی منصب پر فائز جلیل القدر انسانوں نے رب کی طرف بلانے والے سارے دردمندوں نے یہی کہا رب کو پہچانو رب کی بات کو مان لو رب سے محبت کا رشتہ باندھ لو ۔ پیغمبری کے سلسلے کے آخری پیغمبر پیارے نبی صل اللہ علیہ وسلم ہمارے ماں باپ ہماری جانیں آپ پر قربان آپ نے کتنی بار سمجھایا دنیا آخرت کی تیاری میں گزارو اتنی مصروفیت اتنا سازو سامان نہ سمیٹو کہ پل صراط سے گزرنا مشکل ہو جائے ۔بے شک یہ آزمائش یہ سخت ہولا دینے والا وقت گزر جائے گا اس کے بعد کی دنیا کیسی ہوگی یہ الگ عنوان ہے لیکن انسان کو اللہ توبہ کا اپنی طرف رجوع اور پلٹ آنے کا موقع دے رہا ہے ۔توبہ یہ نہیں کہ تسبیح کے دانوں پر استغفار پڑھ لیا جائے اور زندگی اسی نہج پر چلتی رہے ۔توبہ پلٹنے کا نام ہے اپنی خوہشات اپنی ترجیحات اپنی مصروفیات کا جائزہ لینے اور اسے صحیح سمت دینے کا نام ہے ۔ بلاشبہ یہ انسانی تاریخ کا شدید کرب ناک وقت ہے ۔موت آس پاس گھوم رہی ہے اپنا اگلا شکار ڈھونڈ رہی ہے ۔قرآن کہتا ہے یا اییھا انسان ما غرک بربک الکریم اے انسان تجھے کس چیز نے کریم رب سے دور کیا دھوکے میں ڈالا ۔اے انسان پلٹ آ ۔اختیار کی آزادی کے باوجود پلٹ آ ۔سر تسلیم خم کردے ۔اپنے سر کو بھی اور اپنی زندگی کو بھی جھکا دے ۔ اپنے شعور کو اپنی عقل کو اپنی خواہشات کو سجدے کی لزت سے آشنا کردے ۔پلٹ آ رب کی اطاعت کی طرف پلٹ آ رب کی فرمانبرداری کی طرف پلٹ آ
۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com