وبا کے دنوں میں عہد - محمد عامر خاکوانی

کوروناوائرس جس بڑے پیمانے پر خطرناک وبا کی صورت اختیار کر چکی ہے، اسے کنٹرول کرنے کے لئے صرف حکومت یا انتظامیہ کی کوشش کافی نہیں، سماجی تنظیموں اور خدمت خلق کا جذبہ رکھنے والوں کو بھی ہاتھ بٹانا ہوگا۔ یہ وقت ایک دوسرے پر تنقید کا نہیں۔

یہ بات البتہ ماننا پڑے گی کہ پاکستان کی چاروں صوبائی حکومتوں اور وفاقی حکومت میں سے سندھ حکومت کی کارکردگی سب سے بہتر رہی۔ ان بحرانی لمحات میں وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ اور ان کی ٹیم نے غیرمعمولی فعالیت اور مستعدی کا مظاہرہ کیا۔ بلوچستان سے آنے والے زائرین کو انہوں نے تیزی سے سنبھالا، سکھر میں بہت بڑا قرنطینہ قائم کیا۔ سندھ کابینہ نے جرات مندانہ اور مشکل فیصلے کئے۔

پی ایس ایل کی پروا نہیں کی، سرعت کے ساتھ بہت سے ایسے شعبے بند کئے جہاں اختلاط خطرناک ہوسکتا تھا۔اس وقت انٹر سٹی ٹرانسپورٹ، ٹرینیں بھی بندہوچکی ہیں۔ سوشل ڈسٹنس(Social Distance)کے حوالے سے جو پابندیاں حکومتی سطح پر ممکن ہیں ، وہ لگائی جا رہی ہیں۔ سب سے اہم یہ اعلان ہے کہ بیس لاکھ تک نادار لوگوں کے گھروں میں راشن تقسیم کیا جائے گا۔ اگر یہ کام کر لیا جاتا ہے توسابقہ نااہلی کے داغ دھل جائیں گے۔ بلاول بھٹو نے گزشتہ روز اپنی گفتگو میں معقول باتیں کیں، وفاقی حکومت پر تنقید سے گریز کرتے ہوئے عام آدمی کی مشکلات کم کرنے کی یقین دہانی کرائی۔ ویل ڈن بلاول بھٹو۔

وفاقی حکومت اور پنجاب کی صوبائی حکومت کی کارکردگی خاصی مایوس کن رہی ہے۔ عمران خان کا قوم سے خطاب عمومی طور پر ٹھیک تھا،انہوں نے مثبت باتیں کیں۔ یہ مگر حقیقت ہے کہ وہ عملی طور پر سست رہے۔ ان کی حکومت ایران سے واپس آنے والے زائرین کو بروقت روکنے اور سکریننگ کرانے میں ناکام رہی۔اسی نااہلی سے کورونا مرض پاکستان میں پھیلا۔ چین میں موجود پاکستانی طلبہ کو واپس نہ لانے کا حکومتی فیصلہ درست تھا۔ اس وقت میرے جیسے لوگوں کا خیال تھا کہ ہمیں اپنے طلبہ کو واپس لانا چاہیے ، مگر حکومت کا فیصلہ ٹھیک رہا۔ کاش عمران خان اور ان کی حکومت ایران سے واپس آنے والے زائرین کے حوالے سے بھی درست پالیسی اپناتے۔ تفتان میں قرنطینہ بنانا تو ایک بھیانک ، بھونڈے مذاق سے کم نہیں رہا۔ وہاں بالکل ہی سہولتیں موجود نہیں تھیں۔ فراہم کرنے کی کوشش بھی نہیں ہوئی۔قرنطینہ کا مقصد ہی یہ ہوتا ہے کہ اگر ایک شخص کو بیماری ہے تو وہ دوسرے کو نہ لگنے پائے ۔

اگر ایک کمرے میں کئی لوگوں کو رکھا جائے تو لامحالہ ایک بیمار سب کو بیمار کر دے گا۔ تفتان کے قرنطینہ میں ایسا ہی ہوا۔ وزیراعظم نے اپنی تقریر میں بلوچستان حکومت کی خواہ مخواہ تعریف کی، اس کا کوئی جواز نہیں تھا۔ بلوچستان کی صوبائی حکومت کی کارکردگی اوسط سے بھی کم رہی۔ عمران خان کو اعلیٰ ظرفی کا مظاہرہ کرتے ہوئے سندھ حکومت کی تعریف کرنی چاہیے تھی۔ انہوں نے ایسا نہیں کیا، اس سے ان کا اپنا ہی قد کم ہوا، سندھ حکومت کو کیا فرق پڑے گا۔ عمران خان اگلے روز ڈی جی خان کے قرنطینہ کیمپ گئے۔ یہ خوش آئند ہے۔ اگر عمران خان دس بارہ دن پہلے تفتان کا قرنطینہ کیمپ دیکھنے جاتے تو یقینی طور پر وہاں کی حالت سدھرجانی تھی۔پنجاب کی صوبائی حکومت اپنے نہایت کمزور سربراہ کے ساتھ ناقص کارکردگی دکھا رہی ہے۔ ڈی جی خان کے قرنطینہ کیمپ میں عثمان بزدار صاحب کو پہلے ہی چلے جانا چاہئیے تھا۔ افسوس کہ ہمارا وزیراعلیٰ وہ ہے جو کبھی کمانڈنگ پوزیشن میں نظر ہی نہیں آتا۔ اہل پنجاب کے ساتھ عمران خان نے سب سے بڑی دشمنی یہی کی کہ پنجاب کی تاریخ کا کمزور ترین وزیراعلیٰ مسلط کر دیا۔ اللہ پنجاب، پنجابیوں اور ہم سرائیکیوں پر رحم فرمائے کہ سب کو اسی بزدارسے گزارا کرنا ہے۔

کورونا وائرس کے حوالے سے اچھا پہلو یہی ہے کہ اس کا سورس یہاں موجود نہیں۔ ڈینگی وائرس چھونے یا سانس وغیرہ سے منتقل نہیں ہوسکتا ، مگر ایک لحاظ سے وہ خطرناک تھا کہ اس کا سورس یعنی ڈینگی مچھر یہیں موجود تھا۔ جب تک ڈینگی مچھر نہ ختم ہو، ڈینگی کا خطرہ ختم نہیں ہوسکتا۔ کورونا وائرس اس کے برعکس صرف ان چند سو یا چند ہزار لوگوں تک محدود ہے، جو چین یا ایران سے یہ وائرس لے کر آئے یا وہ کچھ لوگ جونادانستگی میں وائرس زدہ افراد کے قریب آئے۔ حکومت نے صرف یہ کرنا ہے کہ ان متاثرہ لوگوں کو دو ہفتوں کے لئے سخت حفاظتی انتظامات میں قرنطینہ میں رکھے۔ جس کی حالت زیادہ بگڑے ، اسے ہسپتال منتقل کیا جائے، باقی وہیں رہیں ۔ دو ہفتوں کے اندر کورونا وائرس کا لائف سرکل ختم ہوجائے گا اور یہ ازخود دم توڑ دے گا۔ اگر ابتدا ہی سے متاثرہ یا مشتبہ لوگوں کو قرنطینہ میں رکھا جاتا تو یہ مرض پھیل ہی نہیں سکتا تھا۔

اب چونکہ چند سو مشتبہ لوگ سکریننگ سے پہلے مختلف طریقوں سے واپس آ کر عوام میں گھل مل چکے ہیں، اس لئے خطرہ موجود ہے۔ اس کا علاج باہر نکلنے، ملنے جلنے سے گریزہے۔ اگر احتیاط برتی گئی تو انشااللہ اگلے دس بارہ دنوں میں اس کا زور ٹوٹنا شروع ہوجائے گا۔ممتاز صوفی سکالر اور صاحب عرفان بزرگ قبلہ سرفراز شاہ صاحب کی یہی رائے ہے، دیگر روحانی شخصیات بھی کچھ ایسا ہی منظر دیکھ رہی ہیں۔ سب کو اللہ کی رحمت سے امید ہے کہ مارچ کے اواخر میں زور ٹوٹنے لگے گا۔ اللہ ہم سب پرکرم فرمائے ،سلامتی سے رکھے، آمین۔

Comments

محمد عامر خاکوانی

محمد عامر خاکوانی

محمد عامر ہاشم خاکوانی کالم نگار اور سینئر صحافی ہیں۔ روزنامہ 92 نیوز میں میگزین ایڈیٹر ہیں۔ دلیل کے بانی مدیر ہیں۔ پولیٹیکلی رائٹ آف سنٹر، سوشلی کنزرویٹو، داخلی طور پر صوفی ازم سے متاثر ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.