بڑے بڑے شہروں کی چھوٹی چھوٹی باتیں - شہلا خضر

ہمارے معاشرے کی عورت کتنی پاورفل ہے،یہ دیکھنا ہے تو پھر مارچ کے مہینے کے ہنگامہ خیز ی دیکھ لیں بہترین تجزیہ کرنے کا موقعہ ملے گا ۔یوم خواتین “ کے موقع پر بیرونی ایجنڈے کی حامل ، “آزادی مارچ “ کی پر وردہ ٹولی کی تمام تر پلاننگز زومعنی نعروں ،دعوت عام دیتی حسینائوں ،مہینوں کی ریہرسیل اور سب کچھ دھرے کا دھرا رہ گیا ۔

الحمدللہ جماعت اسلامی حلقئہ خواتین اپنی بہترین ٹیم ورک ، پر خلوص قیادت اور جزبۂ ایمانی اور کامیاب ترین سلوگن “ قوموں کی عزت ہم سے ہے” کے ساتھ ان “آدھی تیتر آدھی بٹیر “ زہنیت کی حامل خواتین کو “Nock out” کر دیا -سازش کرنے والوں نے تو خوب سوچ سمجھ کر ہمارے معاشرے کی مظلوم اور پسی ہوئ عورت کو سبز باغ دکھا کر اپنے ہی نگہبان اور محافظ کے خلاف بغاوت اور مسابقت پر اکسانے کی ناکام کوشش کی ، اور یہُ بھی ایک تلخ حقیقت ہے کہ ہمارے معاشرے میں عورت کو دین کے مطابق مقام نہی دیا جا رہا پر پھر بھی پاکستانی عورت اپنے باپ بھائ ،بیٹے اور شوہر کی نظریں شرم سے جھکی ہوئ نہی بلکہ فخر سے اٹھی ہوئ دیکنے کو ترجیح دیتی ہے ۔

لبرل ازم کی پیروکار شائید یہ نہی جانتی ہیں کہ آج اخلاقی تنزلی کے اس گۓ گزرے دور میں بھی سینکڑوں عورتیں ایسی ہیں کہ جو اپنی مرضی سے اپنے بیمار شوہر کے علاج کے لیۓ گھروں کے کام کرتی ہیں ،انگنت بیٹیاں ایسی ہیں کہ جو والدین کو فکر و پریشانی سے بچانے کے لیۓ سسرال کے ہر ستم کو صبر سے برداشت کرتی ہیں ، لاکھوں بہنیں ایسی ہیں جو یتیم ہو کر بھی اپنےچھوٹے بہن بھائیوں کو اعلیٰ تعلیم دلوانے کے لیۓ گھر پر سلائ کڑھائ کرتے بوڑھی ہو جاتی ہیں ۔۔۔۔یہ ہے ہماری پاکستانی عورت کی اعلیٰ ظرفی کی جھلک :
آزادی مارچ “ کی پہلے سے ہی “کافی آزاد بہنوں ۔۔۔ مجھے تم سے ہمدردی ہے” کیونکہ تم جو ہو نہی ہو ، وہ بننے کی کوشش کر رہی ہو۔

اس کوشش میں تم اپنی اصلی پہچان اور حقیقی مرکز سے دور جا رہی ہو ۔ تم جانتی نہی کہ جن آزاد فضائوں کو حاصل کرنےکے لیۓ تم سماج اور مزہب کے سارے بندھن توڑ کر اونچی اڑان بھر نے کے لیۓ بے تاب ہورہی ہو ، یہٗ آزادئ نسواں “ کے سراب کے سوا کچھ نہی ،اور دراصل یہ تمہیں” نفس کی غلامی “ کے گہرے اندھے کنونیں “ میں دھکیلنے کی سازش ہے ۔،جس کی گہرائ کا تمہیں اندازہ بھی نہی ۔تمہاری یہ جلد بازی اور اوتاولہ پن دیکھ کر مجھے تم سے دلی ہمدردی محسوس ہو رہی ہے ۔۔۔۔کیونکہ تمہیں فریب دیا جا رہا ہے اور تمہیں علم ہی نہی ۔۔۔۔
ان نۓ eye catching اور bold سلوگنز کا نشہ جب اترے گا تو تم خود کو مطلب پرست ،اور بے دین لوگوں کے رحم وکرم پر پائو گی ۔۔۔۔۔۔اللہ ۰نہ کرے کچھ ایسا ہو تمہارے ساتھ ۔۔آخر تمُ ہماری اپنی ہی ہو ۔

میری عزیز بہنوں ، خود کو سنبھالو ، کسی سے بھی مرعوب ہونے کی ضرورت نہی ،تمُ امت مسلمہ کی عقل و شعور رکھنے والی سمجھدار عورت ہو ۔ دنیا اور آخرت دونوں کی کا میابی کے تمام تر ” گولڈن پرنسپل “اسلا م ہی میں ہیں ۔۔کیونکہ اسلام دین فطرت ، پاکیزہ اور ganuine ہے ۔۔۔۔اس کےعلاوہ جتنے نظام حیات موجود ہیں وہ سب flop اور fake ہیں ۔آخرمیں میں ہمارے معاشرے کے خاندانی یونٹ کے قوام و محافظ مردوں سے یہ کہناچاہتی ہوں کہ آج سڑکوں پر شرمناک حلیۓ اور بے باک نعروں کے ساتھ جو خواتین نظرآرہی ہیں اس سب ،کے زمہ دار کہی نہ کہیں آپ بھی ہیں ۔

اگر خواتین کے جو حقوق آپ پر اسلام نے عائد کیۓ ہیں ان سے آپ نے انحراف نہ کیا ہوتا تو شائید دشمن آج اسلام کے عطا کردہ مظبوط پاکیزہ رشتوں کے بیچ دڑاڑ ڈالنے کی جرائت ہی نہی کرتا ۔اس بارے میں وقت نکال کر ضرور سوچیں ، کیونکہ کہیں ایسا نہ ہو کہ آپ کی غفلت سے سچ مچ میں دیر ہی ہو جاۓ ۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com