کانفرنس جلسۂ عام نہیں ہوتا - افشاں نوید

وسیع وعریض پنڈال میں تل دھرنے کو جگہ نہ تھی ۔ بسیں آکر رک رہی تھیں ۔ قافلے،پنڈال بھرنے کے بعد شامیانے کے باہر روک دئے گئے ۔ دیکھنے کی چیز نظم وضبط تھا کوئی ہڑ بونگ نہیں ۔ قناعتیں زمین پر بچھا دی گئیں کھلے آسمان تلے وہیں صفیں بننا شروع ہوگئیں ۔

نظم وضبط کے کارکن فوج کی تربیت یافتہ کمانڈ لگتی ہے ۔ یہ الحمدللہ جماعت اسلامی کا خاصہ ہے ۔ ایک گروپ کا نظم وضبط ، ایک محدود پنڈال کا نظم وضبط اور ایک عوام کا جم غفیر ۔ ہر ایک کی کنٹرولنگ الگ تربیت چاہتی ہے ۔ ہم نے خواتین کے بڑے ہجوموں میں وہ ہڑبونگ اور افراتفری دیکھی ہے کہ الامان الحفیظ ۔
یہاں "ہجوم " نہیں ہوتے ، بلکہ ہجوم بننے نہیں دیا جاتا ۔ اعلی ترتیب ، بہترین نظم ونسق ، کسی کا ٹیمپر لوز نہیں ہوتا ، حالانکہ اس کیفیت میں کہ پنڈال میں جگہ بھر چکی ۔ بسیں آکر تب بھی رک رہی ہیں ۔ایسے میں توتے اڑ جاتے ہیں اچھےاچھوں کے ۔ یہاں ترتیب بنائی جارہی ہے ۔ ہر ایک تک پانی کی بوتلیں پہنچائی جارہی ہیں ۔ کسی کی تکریم میں کمی نہ ہو ۔ کہیں لہجوں کی شائستگی کرختگی میں نہ بدلی ۔۔ جگہ کم تھی میں پچھلے حصہ میں کھڑی تھی ۔ وہیں صفیں بننا شروع ہوگئیں ۔ سینکڑوں لوگ ترتیب سے کھڑے ہوتے چلے گئے ، کسی نے شکوہ نہیں کیا کہ ہم کھڑے ہونے نہیں آئے کرسی کا بندوست کیوں نہیں ؟ جب کھڑی ہوئی خواتین ہزاروں میں پہنچ گئیں .

جب کھڑی ہوئی خواتین ہزاروں میں پہنچ گئیں چند منٹ میں ۔ پنڈال کی پچھلی قناعت ہٹا کر آن کی آن میں ہزاروں کرسیاں مزید لگا دی گئیں ۔اب کوئی کھڑا نہیں تھا ۔لیکن اسلام سے پیار کرنے والی ، شریعت کی تابعدار عورتیں تھیں کہ اپنی شہادت ( گواھی ) لیے چلی آرہی تھیں کہ کراچی کو ، پاکستان کو ، دنیا کو پتہ چل جائے کہ یہاں خاندانی نظام کے خلاف سازشیں کامیاب نہیں ہونے دی جائینگی ۔ کانفرنس کا پیغام تھا کہ خواتین کے عالمی دن پر سنجیدگی سے خواتین کے مسائل کو فوکس کیا جائے ۔ لڑکیوں کی تعلیم ، دیہاتوں میں تعلیم وصحت کی سہولیات ، خواتین کے علیحدہ تعلیمی ادارے ، عورت کو رسموں کی بھینٹ چڑھآنے سے گریز کیا جائے ۔ آپس میں لڑنے کے بجائے مسائل سے نمٹا جائے ۔ ہمیں پاکستانی عورت کو مسائل سے نکالنا ہے ۔ مضبوط عورت ہی مضبوط خاندان اور مضبوط معاشرے کی ضامن ہے ۔ مہمانانِ گرامی اظہار خیال کر رہی تھیں ۔اب خواتین اسٹیج کے سامنے صفیں بنارہی تھیں دری پر ۔ وہ جگہ بھی بھر گئی ۔ قیمہ پاکستان دردانہ صدیقی کا لہجہ بھیگ گیا کہتے ہوئے کہ" آپ ہی پاکستانی عورت کی حقیقی نمائندہ ہیں ۔ ۔

آپ اسلام سےمحبت کرنے والی یہاں گواھی لے کر پہنچی ہیں کہ ہم اپنے خاندانی نظام کا تحفظ کرنا جانتی ہیں ۔ جب آپ نے ہمیں قانون ساز اداروں کے لیے منتخب کیا ہماری کاردگی پورے ایوان پر بھاری رہی الحمدللہ ۔سروے اس کے گواہ ہیں ۔" آج یہاں سبز اسکارفوں کی اپنی بہار تھی ۔ تندہی سے کانفرنس کی کوریج میں مصروف بہنیں دنیا کو دکھانے اور بتانے میں مصروف تھیں کہ پاکستانی عورت کا اصل چہرہ کیا ہے ۔ خوب صورت ترتیب ۔ پروفیشنل انداز میں انٹرویو ریکارڈ ہورہے تھے ۔ پنڈال سے جو آواز جاسکتی ہے چاھے وہ ڈیوٹی پر معمور سپاھی کی وردی میں ملبوس کوئی خاتون ہو یا واکر دھکیل کر لاتی کسی شیرخوار بچے کی ماں یا وہیل چیئر پر معذور مگر جذبوں سے بھرپور ایک سچی پاکستانی عورت سب کی آواز کو زبان دے رہی تھی میڈیا ٹیم ۔۔میڈیا ہاؤس جوبن پر رھا یہاں ۔ جب۔۔۔۔امیر جماعت نے "جلسۂ عام " کا صیغہ استعمال کیا تو ہمارا خود پر اعتماد بڑھ گیا کہ اسٹیج سے بھی جلسۂ عام ہی کا منظر ہے الحمداللہ ۔ صرف ہم ہی اجتماع عام کی خوش گمانی میں مبتلا نہیں ۔امیر جماعت نے کیا کہا وہ ہر دل کی آواز بن گئے ۔۔.

میں نے یہ جانا گویا یہ بھی میرے دل میں تھا۔فرما رہے تھے قرآن نے حضرت ابرہیم علیہ السلام کے ساتھ انکی زوجہ کا تذکرہ کیا تو دوسری طرف فرعون کے ساتھ اسکی عظیم اہلیہ کو نشانی بنا کر پیش کیا۔حضرت مریم کو مثال بنایا ۔سچ تو یہ ہے کہ حضرت عائشہ صدیقہ کی براءت اور پاکیزگی کی گواہی عرش سے اترتی ہے ۔ حضرت خدیجہ پر عرش سے جبرئیل امین سلام لے کر اترتے ہیں ۔ آج جماعت اسلامی خواتین کے انہی حقوق کا چارٹر پیش کررہی ہے جو چودہ سو برس پہلے بن مانگے عورت کو دئے جاچکے ۔ آج ہر مقرر نے عافیہ صدیقی کو یاد کیا ، مقبوضہ وادی کی مظلوم عورتیں جو ایک طویل کرفیو میں اپنے گھر میں قید ہیں ۔دنیا کی سب سے بڑی جیل میں عورتوں اور بچوں کے دکھ کس سے ڈھکے چھپے ہیں؟؟ ۔مزار قائد کے پہلو میں خواتین کی کتنی سچی گواہی تھی۔۔ہم نے واپسی میں مزار قائد پر نگاہ پڑتے ہی قائد اعظم کی روح کو ایصال ثواب پہنچایا اور انھیں یقین دلایا کہ آپ کے پاکستان کی حفاظت پاکستانی عورت جانتی ہے ۔ ہم آپ کے مان پر آنچ نہ آنے دیں گے ۔۔۔ہم جانتے ہیں کہ " قوموں کی عزت ہم سے ہے" .

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com