ترکی نے ایران کے ساتھ اپنی سرحدی چوکیوں کو بند کر دیا

ہم اس وقت تک اس متعدی بیماری کو ترکی سے دُور رکھنے میں کامیاب رہے ہیں لیکن ایران میں بیماری کی موجودگی ترکی کے لئےالارم کی حیثیت رکھتی ہے: وزیر صحت فخر الدین کھوجا . ایران میں کورونا وائرس کی وجہ سے ہلاکتوں کے بعد ترکی نے ایران کے ساتھ اپنی سرحدی چوکیوں کو عارضی طور پر بند کر دیا ہے۔

وزیر صحت فخر الدین کھوجا نے پریس کانفرنس میں جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ 32 ممالک میں کورونا وائرس کے مریضوں کی تعداد 80 ہزار تک جا پہنچی ہے۔ ہم اس وقت تک اس متعدی بیماری کو ترکی سے دُور رکھنے میں کامیاب رہے ہیں لیکن ایران میں بیماری کی موجودگی ترکی کے لئےالارم کی حیثیت رکھتی ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ اس وقت تک ایران میں کورونا کے مریضوں کی تعداد 43 اور مرض کی وجہ سے ہلاکتوں کی تعداد 8 ہے۔ وزیر صحت نے کہا ہے کہ ہم نے حفظ ماتقدم کے طور پر ایران کے ساتھ اپنی تین سرحدی چوکیوں اور ایعدیر اور ناہچیوان کی طرف کھلنے والی دیلوجو سرحدی چوکی کو عارضی طور پر بند کر دیا ہے۔
انہوں نے کہا ہے کہ زمینی اور ریلوے راستوں کے ذریعے ایران سے ترکی میں داخلے کو آج شام 5 بجے سے عارضی طور پر روک دیا گیا ہےاور تمام بین الاقوامی پروازوں کو بھی یک طرفہ شکل میں اور عارضی طور پر بند کر دیا گیا ہے۔

فخر الدین کھوجا نے کہا ہے کہ مختصر یہ کہ ایران سے ترکی میں داخلے کو روک دیا گیا ہے تاہم ترکی سے ایران میں داخلہ جاری ہے۔ کل اور پرسوں 8 ایرانی باشندوں کو وائرس کی علامات کی وجہ سے ترکی میں داخلے کی اجازت نہیں دی گئی۔ ضلع وان میں نزلے زکام کی وجہ سے ہسپتال داخل کئے جانے والوں میں بیماری کی علامات نہیں ملیں اور ان کے ٹیسٹ نیگٹیو رہے ہیں۔