سوال ڈگری نہیں تربیت پراٹھتا ہے- محمداظہرعالم

گزشتہ دنوں انصاف کے علمبردار انسانیت کے ہمدردوں اور مسیحا خانہ پر حملہ آور ہوتے ہیں ذاتیات اور پیشہ کی توہین پر اٹھنے والے جذبات کی آگ فریق مخالف کو ہی نہیں بلکہ کئی جانوں کو اپنی لپیٹ میں لیکر ملک نہیں بلکہ دنیا کی تاریخ کا ایسا واقعہ رقم کردیتی ہے جس میں انصاف کے علمبرداروں سے انصاف کی امیدیں ہی دم نہیں توڑنے لگتی بلکہ اس ملک کا سر بھی شرم سے جھک جاتا ہے جس کا معاشی حب انسانیت کے دکھوں پر مرہم رکھنے میں سرفہرست ہے۔

سانحہ کے بعد وکالت کے عظیم پیشہ سے تعلق رکھنے والا سمجھ دار طبقہ شدید مذمت افسوس اور ندامت کا اظہار کرتا ہے لیکن اسی پیشہ سے تعلق رکھنے والا بڑا طبقہ انسانیت کو شرمسار کردینے والے اس سانحہ کا صرف دفاع ہی نہیں بلکہ اس گھٹیا فعل کو بطور مذاق شئیر کرتا نظر آتا ہے۔سانحہ کے بعد تعلیم، ڈگریوں اور اداروں پر بات شروع ہوجاتی ہے مذہبی تعلیمی نظام سے تعلق رکھنے والے اپنے نظام و نصاب کا دفاع اسلئے کرتے ہوئے نظر آتے ہیں کہ انہیں اپنی ہی قوم و امت سے تعلق رکھنے والے افراد، کا مذاق اڑانا اور تازہ ایشو کی اس لہر میں اپنا بے فائدہ حصہ ملا کر لائیکس، شئیر اور کمنٹس سمیٹنے ہیں۔جبکہ ایک طرف اس سانحہ پر ایک طبقہ وہ بھی تھا جو قوم کی تربیت پر ماتم کرنے کے بجائے اس پر لطیفے بکھیر کر خود اپنی ہی قوم کا مذاق اڑاتا رہا۔

تعلیمی نصاب میں فرق اور نصاب میں تبدیلی کی بات اپنی جگہ لیکن اس سانحہ پر سوچنے والی بات یہ تھی کہ بحیثیت قوم ہماری تربیت کہاں گئی؟ ہم نے کیوں اخلاق و تربیت سے دور صرف ایک شخص کی وائرل ویڈیو پر ہسپتال میں اودھم مچا کر انسانیت کا سر جھکا دیا؟جس امت کو گالی کے جواب میں خاموشی کا طریقہ سکھایا گیا اس نے کیوں گالی کا جواب ڈنڈے سے دیا؟اور ماتم صرف ان پر نہیں جنہوں نے قوم کا سر جھکایا بلکہ نوحہ تو اس سوچ پر بھی پڑھا جائے جو آج دل پر بوجھ بن جانے والے واقعہ کا دھڑلے سے ناصرف دفاع کر رہے ہیں بلکہ وکالت اور ڈاکٹری سے جیسے انسانیت کے ہمدرد پیشوں کے مابین گھٹیا لطیفہ بنا کر اس سانحہ سے لطف اندوز ہورہے ہیں۔

سوال وکیل، ڈاکٹر، انجینئر، صحافی ، مولوی اور سیاست دان ہونے اور مذہبی عصری نصاب کی تفریق پر نہیں بلکہ من حیث القوم ہماری تربیت پر اٹھنے چاہیے اور اس بات کی فکر کرنی چاہیے کہ کیسے اس قوم کے ہر پیشہ، ہر نصاب کو پڑھنے اور ہر طبقہ سے تعلق رکھنے افراد اپنی مذہبی اور روایتی تربیت کا شاندار نمونہ بن سکیں۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */