کھانے کے پیچھے چھپی محبت - راحیل جاڈا

آج دوران درس یہ حدیث آئی جس کا مفہوم یہ ہے کہ سرور دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم نے کھانے میں کبھی عیب نہیں نکالا۔ مجھے خیال ہوا کہ دیکھنے میں بظاہر کتنی چھوٹی سی بات لگتی ہے لیکن اس کے مفہوم پر عمل میں کتنی خیر چھپی ہے۔ اسے ایک واقعہ کی صورت باآسانی سمجھا جا سکتا ہے۔

مثلا والدہ صبح بیٹے کو رخصت کرتے ہوئے یہ خیال کرے کہ میرا بیٹا امور خانہ داری بہتر چلانے کے لیے کتنی محنت کرتا ہے، صبح سویرے گھر سے نکل جاتا ہے شام کو ہمارے لیے تھک ہار کر واپس آتا ہے، یا بیگم خیال کرے کہ میرا شوہر میری اور بچوں کی ضروریات پوری کرنے کے لیے کتنا مشقت بھرا دن گذارتا ہے، پھر یہ خیال محبت کے اس فطری تقاضے کو قدرتی بڑھا دے، اور اسی کے زیر اثر ماں یا بیگم خوب دل لگا کر محنت سے اپنے بیٹے یا شوہر کی من پسند ڈش بنانے میں جت جائے، لیکن قسمت کچھ یوں مہربان ہو کہ کھانے میں نمک تیز ہوجائے جس کا انہیں علم ہی نہ ہو۔

شام کو بیٹا یا شوہر گھر آتا ہے یہ محبت بھری نظروں سے اسے دیکھتی ہیں اور من ہی من خوش ہوتی ہیں کہ اب ہماری محنت اسے بھی خوش کردے گی، اور ان کی محنت وصول ہوجائے گی، اسی سرشار کیفیت میں وہ کھانا دسترخوان پر چن دیتی ہیں اور تعریف کی منتظر نظریں بیٹے یا شوہر کے چہرے پر گڑ جاتی ہیں کہ اچانک مردانہ کرخت آواز ابھرتی ہے "یہ کیا بنایا ہے؟ اسے گلے سے کیسے اتاروں؟" آپ اندازہ کریں اس ماں اور بیگم کی کیا کیفیت ہوگی جس نے سارا دن اس کے لیے محنت کی، آپ سوچیں محبت اور عظمت کا وہ آبگینہ کس طرح ٹوٹ کر بکھرے گا جس کی کرچیاں سیدھی محبت کی اس دیوی کی آنکھوں میں چھبے گی ۔

یہ بھی پڑھیں:   عالمی یومِ محبت - (ویلنٹائن ڈے) ڈاکٹر میمونہ حمزہ

اب ذرا سوچے وہ بیٹا اور شوہر اپنے نبی کو عمل کو جانتا ہوگا اور اس پر عمل پیرا ہوگا تو یقینا وہ اس کھانے کے پیچھے چھپی محبت کی مٹھاس کو پہچان لے گا، جو مٹھاس اس عیب پر حاوی ہو جائے گی اور ہر عیب کو چھپا دے گی اور اس کی زبان سے بھی بس میٹھا بول ہی نکلے کہ "بہترین بہت عمدہ" تو وہ اپنی آنکھوں سے دیکھے گا کہ کیسے اس کی ماں کے دل سے، اس کی بیوی کے احساس سے ایک اطمینان بھری سانس خارج ہوتی ہے، پھر اگر وہ کھانا ماں اور بیوی نے خود چکھ لیا اور سوالیہ نظروں سے اسے دیکھا جس پر جواب یہ ملا کہ آپ نے اتنی محنت کی ایک نمک زیادہ ہوگیا تو کیا ہوگیا۔

آپ سوچیں یہ ایک بول انہیں محبت کی کس معراج پر لے جائے گا، وہ محبت جس کی کوکھ میں ایک نسل کی تربیت چھپی ہوئی ہے۔ سچ ہے ہمارے نبی کی اک اک اداء اپنی مثال آپ ہے۔