اقرا خالد کا بہاولپور سے کینیڈین پارلیمنٹ تک کا سفر

پاکستان میں پیدا ہونے والی اقرا خالد نے اکتوبر میں ہونے والے کینیڈا کے عام انتخابات میں دوسری مرتبہ اکثریت حاصل کر کے پارلیمنٹ میں اپنی نشست برقرار رکھی ہے۔کینیڈا کے وزیرِ اعظم جسٹن ٹروڈو کی لبرل پارٹی سے تعلق رکھنے والی اقرا خالد نے پہلی مرتبہ سنہ 2015 میں کینیڈا کے دارالعوام کا انتخاب جیت کر سب کو حیرت میں ڈال دیا تھا۔انھیں انصاف اور انسانی حقوق کی قائمہ کمیٹی کا ممبر نامزد کیا گیا جس کے دوران انھوں نے جنوبی ایشیا میں انسانی سمگلنگ، میانمار میں روہنگیا بحران اور چین، عراق اور ایران میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بات کر کے عالمی توجہ حاصل کی تھی۔

اس کے علاوہ انھوں نے پاکستان جیسے ترقی پذیر ممالک میں خواتین اور بچوں کے تحفظ کے لیے فنڈز فراہم کرنے میں بھی اہم کردار ادا کیا۔سب سے بڑھ کر یہ کہ انھوں نے منظم نسل پرستی اور مذہبی تفریق کے خلاف ایک تحریک پیش کی جس کے پارلیمنٹ سے منظور ہونے کے بعد حکومت اب نسل پرستی اور مذہبی تفریق کے خلاف اقدامات اٹھانے کی پابند ہے۔مگر اس دوران ان کو قتل کی دھمکیاں دی گئیں اور ان کے خلاف مظاہرے بھی ہوئے۔اقرا خالد نے یہ مقام اپنی محنت اور جدوجہد کے بل بوتے پر حاصل کیا ہے جس میں انھیں ان کے خاندان اور والدین کی بھرپور مدد حاصل تھی۔ بی بی سی نے اقرا خالد سے ان کی انتھک جدوجہد پر بات کی ہے۔ ان کی کہانی ان ہی کی زبانی پڑھیں۔

پہلے برطانیہ اور پھر کینیڈا

میں نے صوبہ پنجاب کے شہر بہاولپور کے ایک متوسط خاندان میں آنکھ کھولی۔ میرے والد ایک مقامی یونیورسٹی میں پروفیسر تھے۔جب انھیں اپنی پی ایچ ڈی کے لیے برطانیہ جانا پڑا تو وہ ہم سب بچوں کو بھی ساتھ برطانیہ لے گئے۔ برطانیہ میں تین سال تک رہنے کے بعد جب میں 11 سال کی تھی تو واپس پاکستان آئی۔ایک سال پاکستان میں گزارنے پر ہمارے والدین نے محسوس کیا کہ اب ہمارے بچے پاکستان کے نظام تعلیم سے زیادہ ہم آہنگ نہیں ہو رہے، چنانچہ ہمارے والد نے کینیڈا کے لیے اپلائی کیا۔سنہ 1998 میں، میں جب 12 سال کی تھی تو کینیڈا چلی گئی۔ مجھے بچپن ہی سے کینیڈا میں ایڈجسٹ ہونے میں کوئی مشکل پیش نہیں آئی۔ سکول جاتی تو میرا بہت زیادہ وقت لائبریری میں گزرتا۔ جب سکول میں تھی تو سکول کا اخبار بنایا کرتی تھی۔

بچپن میں صحافی بننے کا شوق تھا مگر بعد میں امریکہ سے قانون کی ڈگری حاصل کی۔ملازمت اور پھر کاروبارمیں 16 سال کی تھی جب تعلیم کے دوران ایک آن لائن سٹور پر ملازمت کی۔ یہ میری پہلی ملازمت تھی مگر یہاں تھوڑا عرصہ ہی کام کیا کیونکہ میری والدہ نے کپڑوں کا کچھ کام شروع کر رکھا تھا۔ انھوں نے مجھ سے مدد کا کہا تو پھر میں ان کے ساتھ کام کرنے لگی۔جب ہمارے خاندان نے ایک کھانے کا کاروبار خریدنے کا فیصلہ کیا تو اس کے انتظامی امور سے لے کر کھانا پکانے تک اسے چلانے اور پھر مستحکم کرنے میں میرے مشورے اور کام کو بہت اہمیت دی گئی۔

یہ کاروبار اب بہت مستحکم ہے اور میرے والد ہمیشہ یہ کہتے ہیں کہ اس میں اقرا کا بہت زیادہ کردار ہے۔امریکہ سے وکالت کی ڈگری کے بعد مجھے کینیڈا کی ایک معروف قانونی فرم میں ملازمت مل گئی جہاں پر میری صلاحیتوں کو خوب سراہا گیا۔میرا روز مرہ کا معمول تھا کہ میں دن کے وقت اپنی فرم میں کام کرتی تھی اور شام کے وقت ریسٹورنٹ چلی جاتی تھی جہاں پر والدین کا ہاتھ بٹاتی۔ اسی طرح فلاحی کاموں میں بھی بھرپور حصہ لیتی تھی۔یہ سنہ 2014 کی بات ہے جب کینیڈا کے 2015 انتخابات کی تیاریاں جاری تھیں اور سیاسی پارٹیوں میں نامزدگی کا مرحلہ شروع ہونے والا تھا۔ایک شام میں معمول کی طرح ریسٹورنٹ گئی تو میرے والد نے مجھے بلایا اور انتہائی سنجیدگی سے کہا کہ انتخابات ہونے والے ہیں، میں سمجھتا ہوں کہ تم میں بہت صلاحیت ہے اور تم سوشل ورک میں بھی حصہ لیتی ہوں، چلو نامزدگی حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

میں نے اپنی رضامندی ظاہر کر دی جس کے بعد میرے والد نے عملاً نامزدگی حاصل کرنے کی مہم چلا دی۔ ہمارے ریسٹورنٹ میں بہت لوگ آتے جاتے تھے اور یہ ہمارے رابطے کا بڑا ذریعہ بھی تھا۔میرے والد نے وہاں پر ہی اپنے دوستوں اور کمیونٹی کے لوگوں سے مشاورت شروع کر دی۔ جہاں کچھ لوگوں نے بہت سراہا جبکہ چند لوگوں نے مخالفت بھی کی۔اس کے بعد اپنے دوستوں اورکمیونٹی کی میٹنگ منعقد کی گئی جس میں سب سے مشاورت کے بعد نامزدگی کے لیے مہم شروع ہوئی۔ مہم کے دوران ہی مجھے اندازہ ہو گیا تھا کہ مجھے نامزدگی مل جائے گئی اور ایسا ہی ہوا۔انتخابی مہم آسان نہ تھی۔ میرا مقابلہ انتہائی تجربہ کار امیدوار سے تھا جو دو مرتبہ اس حلقے سے جیت چکے تھے۔میں ایک ایک گھر کا دروازہ کھٹکھٹاتی، لوگوں سے بات کرتی اور ان کو بتاتی کہ اگر وہ مجھے ووٹ دیں گے تو میں ان کے لیے کیا کروں گی۔

یہ ایک مشکل مہم تھی کیونکہ ہم نئے تھے اور ہمارے مدِمقابل انتہائی تجربہ کار افراد تھے مگر جب مہم شروع کی تو راستے کھلتے گئے اور تھوڑے ہی عرصے میں مجھے مختلف کمیونٹیز کے لوگوں کی حمایت حاصل ہو گئی۔انتخابات سے تین دن قبل جب میں اپنی انتخابی مہم کے بعد اپنے مرکزی کیمپ میں گئی تو وہاں کا منظر مجھے کبھی نہیں بھول سکتا۔میں نے دیکھا کہ ہر کمیونٹی کے سو، دو سو لوگ کیمپ میں بیٹھے انتخابات کے دن کی تیاری کر رہے ہیں۔ یہ لوگ تین، تین، چار چار کی ٹولیوں میں بیٹھے تھے اور ہر کوئی اپنے کام میں اتنا مگن تھا کہ کسی کو میری موجودگی کا احساس ہی نہیں ہوا۔

کیسا منظر تھا میں الفاظ میں بتا نہیں سکتی۔ یہ ہی کینیڈا کے معاشرے کی خصوصیت ہے جس میں مذہب، رنگ، قوم و نسل کی بنیاد پر نہیں بلکہ محنت اور صلاحیت کی بنیاد پر ترقی ملتی ہے۔انتخابات کا دن اعصاب شکن تھا۔ میں پریشان تھی مگر میرے والد بہت مطمئن تھے۔ دن بہت ہی مصروف گزرا اور شام کو جب انتخابی کیمپ میں گئی تو بہت زیادہ لوگ اکھٹے تھے۔ ہمارے کارکنان پر امید تھے۔اسی کیمپ میں میرے والد تمام معاملات سنبھال رہے تھے جب کہ میری والدہ ایک کونے میں موجود تھیں۔ میں بھی ان کے پاس جا کر بیٹھ گئی اور نتائج کا انتظار کرنے لگی۔

جب مکمل نتیجہ سامنے آیا تو سب سے پہلے مجھ تک پہنچایا گیا۔ میں جیت گئی تھی۔ یہ ناقابل یقین تھا۔ میں خوشی سے چیخ اٹھی۔ میری والدہ نے مجھے گرفت میں لے لیا۔ ان کی آنکھوں میں بھی خوشی کے آنسو تھے جبکہ پورے کیمپ میں خوشی کی لہر دوڑ چکی تھی۔

قتل کی دھمکیاں اور مظاہرے

انتخابات کے بعد لبرل پارٹی حکومت بنانے میں کامیاب ہوئی اور جسٹن ٹروڈو وزیر اعظم منتخب ہو گئے۔ ہماری کامیابی اندازوں سے زیادہ تھی۔ حکومت کو اپنے وعدوں کے بعد کام کرنا تھا اور مجھے یہ ثابت کرنا تھا کہ میں وہ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہوں جس کے لیے مجھے ووٹ دیے گئے ہیں۔


سب سے پہلا کام میں نے یہ کیا کہ میں اپنے حلقہ انتخاب میں ہروقت دستیاب رہتی اور ہر فون کال سننے کی کوشش کرتی، ورنہ وقت ملنے پر جواب ضرور دیتی۔ فعال ٹیم کا انتخاب کیا، عوام کے مسائل کو سنتی اور ان کو حل کرنے کی کوشش کرتی تھی۔مجھے انصاف اور انسانی حقوق کی قائمہ کمیٹی کا رکن منتخب کیا گیا تھا۔ میانمار کے روہنگیا مسلمانوں پر ہونے والے مظالم پر دو ٹوک بات کی اور باقاعدہ حکومتی سطح پر اقدامات کروائے۔اسی طرح افریقہ اور دیگر تیسری دنیا کے ممالک میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بات کی اور کئی ایک چیزیں بہتر کرنے کی کوشش کی جس پرعالمی سطح پر بھی مجھے سراہا گیا۔کینیڈا میں مختلف قوموں اور مذاہب سے تعلق رکھنے والے لوگ آباد ہیں اور یہاں قومیت اور مذہبی بنیادوں پر کوئی تفریق نہیں ہے۔ میں نے اپنے پہلے دور میں محسوس کیا کہ نفرتوں میں اضافہ ہورہا ہے۔

چنانچہ اسلامو فوبیا کے خلاف تحریک تیار کروائی اور اس کو جب اسمبلی میں پیش کیا تو کیا بتاؤں اس پر کتنی مشکلات پیش آئیں۔اس تحریک کے پیش ہوتے ہی میرے خلاف مظاہرے شروع ہو گئے اور مجھے قتل کی دھمکیاں دی جانے لگیں۔ چند لوگ اکھٹے ہوتے اور میرے گھر کے باہر مظاہرے شروع کردیتے، میں جہاں جاتی مظاہرہ شروع کر دیتے۔قتل کی دھمکیاں تو اتنی ملتیں کہ میں نے توجہ دینا ہی چھوڑ دیں۔ تحریک پیش کرنے اور پھر منظور ہونے میں تھوڑا عرصہ تھا۔ حکومت کی جانب سے کہا گیا کہ ہر وقت اپنے ساتھ پولیس رکھوں مگر میں نے ایسا کرنے سے انکار کردیا تھا تاہم عوامی مقامات پر مجھے پولیس سکیورٹی ملتی تھی۔

اس دوران میرے خاندان کو بھی نہیں بخشا گیا اور ہر ممکن کوشش کی گئی کہ مجھے خوفزدہ کیا جائے اور پیچھے ہٹایا جائے۔مگر ایسا اس ممکن نہیں تھا کہ کیونکہ اس کی حمایت میں ملنے والا ردِعمل منفی رد عمل سے کہیں زیادہ تھا جس کی وجہ سے میرا حوصلہ بڑھا اور میں ڈٹ گئی۔اس تحریک پر ووٹنگ ہوئی اور یہ پاس ہو گئی، جس کے بعد اب کینیڈا کے معاشرے میں نفرتوں کی گنجائش نہیں ہے، قانون اس کی اجازت نہیں دیتا۔ یہ تحریک صرف اسلام کے ماننے والوں کے لیے نہیں بلکہ تمام مذاہب کے لیے ہے۔

دوسرا الیکشن مشکل نہیں تھا

میرے لیے دوسرا الیکشن مشکل نہیں تھا۔ میں اپنے حلقے میں عوام کے ساتھ مکمل رابطے میں تھی۔ دوبارہ نامزدگی حاصل کرنے میں کوئی مشکل پیش نہیں آئی کیونکہ حلقے کے عوام خود ہی مہم چلار ہے تھے۔پہلا انتخاب میں نے تقریباً چھ ہزار کی برتری سے جیتا تھا اور حالیہ الیکشن تقریبا نو ہزار کی برتری سے جیتا ہے، جس سے واضح ہے کہ میرے حلقے کے عوام میرے ساتھ ہیں۔
اب نئے انتخابات کے بعد میرا کردار کیا ہو گا، یہ میری پارٹی طے کرے گی۔ مگر اب میں تجربہ کار ہوں۔

میں اپنے حلقے کے عوام سے کیے گئے وعدے پورے اور اپنے ملک کینیڈا کی ترقی کے لیے کردار ادا کرنے کے لیے پر عزم ہوں۔چونکہ میرا پس منظر جنوبی ایشیائی ہے، اس لیے ان ممالک کی ترقی کے لیے بھی اپنا کردار کرنے کی کوشش کروں گی اور پاکستان میں میرا گھر اور میرے رشتہ دار ہیں، اس لیے اگر پاکستان کی ترقی کے لیے کوئی کردار ادا کرسکوں تو بہت خوشی ہو گی۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com