انقرہ میں مسئلہ کشمیر سے متعلق بین الاقوامی کانفرنس

انقرہ میں مسئلہ کشمیر سے متعلق بین الاقوامی کانفرنس، مقررین کا جلد از جلد مسئلہ کشمیر حل کرنے پر زور . جان سویواین جی او کےلان میں کشمیر میں ہونے والے ظلم و ستم اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو اجاگر کرنے والی فوٹو گرافی نمائش کا اہتمام کیا گیا جس میں بڑی تعداد میں لوگوں نے گہری دلچسپی لی .

ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں جان سویو این جی او کے زیر اہتمام "امن و استحکام کے محور سے بحران اور غیر یقینی صورتحال ، آزاد جموں کشمیر" کانفرنس منعقد ہوئی ۔ جان سویواین جی او کےلان میں کشمیر میں ہونے والے ظلم و ستم اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو اجاگر کرنے والی فوٹو گرافی نمائش کا اہتمام کیا گیا جس میں بڑی تعداد میں لوگوں نے گہری دلچسپی لی۔ تقریب کا آغاز تلاوِتِ کلام پاک سے ہوا ۔ جان سویو این جی کے صدر مصطفیٰ قوئےلی نے اپنی افتتاحی تقریر میں کہا کہ مسئلہ کشمیر طویل عرصے سے ایک خاموش مسئلے کے طور پر دنیا کے ایجنڈے پر ہے اور اس مسئلے کو حل کرنے کی جانب آج تک کوئی توجہ نہ دی گئی۔ کشمیر میں جاری ظلم و ستم کو دنیا سے آگاہ کرنے کے لیے ہم نے کشمیر کانفرنس کا اہتمام کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر غیر مسلمانوں کو کوئی مسئلہ درپیش ہو تو اسے فوری طور پر حل کرلیا جاتا لیکن جب بات مسلمانوں کی ہو تو کوئی بھی حرکت میں نہیں آتا ہے۔

کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ترکی میں پاکستان کے سفیر محمد سائرس سجاد قاضی نے کہ بھارت کی ہٹ دھرمیوں کی وجہ سے اس مسئلے کو کشمیری اپنے ہی آبائی وطن جمو کشمیر میں اقلیت بن چکے ہیں۔ جموں و کشمیر میں سات لاکھ بھارتی فوجیوں نے معصوم کشمیریوں کو گزشتہ 73 دنوں سے محصور کررکھا ہے اور ان پر ظلم و ستم کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔ کشمیری عوام اپنے ہی گھروں اور اپنے ہی وطن میں اسیر ہیں۔ ہندوستانی فوجی ہر گھر اور عمارت پر پہرہ بٹھائے ہوئے ہیں۔ بچوں کو اسکولوں ، گھروں میں لوگوں ، اسپتالوں میں مریضوں کو حراست میں لیا گیا ہے ۔ لوگوں کو بندوق کے زور پر اپنے ہی گھروں میں قیدی بنا کر رکھدیا گیا ہے۔ بھارت نے کشمیری عوام پر اجتماعی تشدد اور جبر کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔ اس موقع پر سعادت پارٹی کے چئیرمین تیمل قارا رمولا اولو نے کہا جب ہم دنیا پر نگاہ ڈالتے ہیں تو ہمیں پتہ چلتا ہے کہ اس وقت دنیا میں اسلامی ممالک ہی کو بحران کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔ مسئلہ کشمیر گزشتہ 70 سالوں سے غیر حل طلب مسئلہ ہےاور کشمیری عوام اپنی آزاد ی کی جدو جہد کو جاری رکھے ہوئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:   ترکی: فندق کی برآمد سے ایک بلین 578 ملین ڈالر کا زرمبادلہ

ہم سعادت پارٹی ہونے کے ناتے مودی کے حالیہ فیصلے کی مذمت کرتے ہیں ۔کشمیر اور فلسطین جیسے عالمِ اسلام کے مسائل کو آج تک حل نہیں کیا جاسکا ہے۔ جبکہ عالمی اسلام کے دیگر ممالک عراق ، لیبیا ، تیونس میں بھی مسلمانوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہاہے۔ جب چاہتا ہء فلسطین پر چڑھ دوڑتا ہے ۔ یہ سب کچھ اسلامی ممالک کے مابین اتحاد نہ ہونے کی وجہ سے ہو رہا ہے۔ جبکہ اتحاد اور یکجہتی ہی ہمارے ایمان کی اساس ہے۔انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے مسئلہ کشمیر پر پاکستان تنہا رہ گیا تھا ہے جبکہ جموں کشمیر کو کھی جیل میں تبدیل کیا جاچکا ہے۔ سعادت پارٹی کے اعلی مشاورتی بورڈ کے چیئرمین اوزھان اصل ترک نے اس بات پر زور دیا کہ مسلمان اس وقت دنیا کے مختلف حصوں میں شدید پریشانی اور مشکلات میں مبتلا ہیں اور ان مسائل کا واحد حل مسلمانوں کا یکجا ہو دوبارہ سے ترقی کی راہ پر گامزن ہونا ہے۔ اس موقع پر ایصام تھنک ٹینک کے چئیرمین رجائی کوتین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر عالم اسلام کا رستہ ہوا زخم ہے۔

کشمیر میں بھارتیوں کی جانب سے ہمارے مسلمان بھائی بہنوں پر غیر انسانی مظالم اور قتل عام کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر صرف ہندوستان یا پاکستان کا ہی نہیں ، بلکہ امت کا مسئلہ ہے ۔ انہوں نے مسئلہ کشمیر کے حل کی جانب توجہ مبذول کرواتے ہوئے کہا کہمسلمانوں کے مسائل کو صرف اور صرف مسلمانوں کی کے نمائندوں پر مشتمل نئے ورلڈ آرڈر کے تحت ہی حل کیا جاسکتا ہے۔ افتتاحی تقرریوں کے بعد پینل کا بھی اہتمام کیا گیا جس میں مشتاق جیلانی، ڈاکٹر خاور ندیم، محمد وفا اوز آلپ، جمال دیمر ، پروفیسر ڈاکٹر خلیل طوقار، پروفیسر ڈاکٹر قدرت بلبل اور عبدلرشید ترابی نے مسئلہ کشمیر اور اس کے حل کے بارے میں اپنے اپنے خیالات کو پیش کیا۔