عقیدۂ نبوت ورسالت - مفتی منیب الرحمن (حصہ اول)

ماہِ ربیع الاول کی مناسبت سے میں نے مناسب سمجھا کہ نئی نسل کے لیے’’ عقیدۂ نبوت ورسالت ‘‘کے بارے میں ضروری معلومات فراہم کی جائیں ۔پس اسلام کے بنیادی عقائد میں سے ایک ’’عقیدۂ نبوت ورسالت ‘‘ہے ۔ رسول کے لغوی (Linguistic)معنی ہیں: ’’پیغام پہنچانے والا ‘‘اور شریعت کی اصطلاح میں رسول اُسے کہتے ہیںجو اللہ تعالیٰ کا پیغام اس کے بندوں تک پہنچائے۔ لفظِ نبی ’’نَبَاٌ‘‘سے مشتق ہے ،اس کے معنی خبر کے ہیں اور شریعت کی اصطلاح میں نبی اللہ تعالیٰ کے اُس منتخب بشر کو کہتے ہیں ۔

جسے اُس نے اپنے بندوں کی ہدایت کے لیے مبعوث کیا ہو، ’’نَبِیٌّ‘‘کے معنی ہیں:’’ غیب کی خبر دینے والا‘‘ اور ’’نُبُوَّت‘‘ کے ایک معنی ہیں: ’’رفعت وبلندی ‘‘اور نبی اللہ تعالیٰ کے فضل سے رفیع الشان ہوتا ہے۔ نبی صرف بشر اور مرد گزرے ہیں ،نہ کوئی عورت ’’نَبِیَّہْ ‘‘ہوئی اور نہ کوئی جنّ نبی ہوا، قرآنِ کریم کی کئی آیات میں اس کی صراحت ہے ۔انبیاء کی تعدادنہ قرآنِ کریم میں اور نہ کسی حدیثِ صحیح صریح میں تعیین کے ساتھ مذکور ہے ، انبیائے کرام ورُسلِ عظام علیہم السلام اوراللہ تعالیٰ کے نازل کردہ صحیفوں کی تعداد کے بارے میں روایات ہیں ،لیکن تعداد کی قطعی تعیین کے لیے اُن روایات پر عقیدے کی بنیاد نہیں رکھی جاسکتی ،کیونکہ عقیدے کے اثبات کے لیے دو شرطیں ہیں:(۱)کلام کا ثبوت قطعی ہو،(۲)اس کی اپنے معنی پر دلالت بھی قطعی ہو،یعنی دوسرے معانی کا احتمال نہ رکھے، اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: ’’اورہم نے ایسے رسول بھیجے جن کا تذکرہ اس سے پہلے ہم آپ کو بیان کرچکے اور ایسے رسول بھیجے جن کا تذکرہ ہم نے (آج تک) آپ کے سامنے نہیں کیا ، (النساء:164)‘‘۔ درجِ ذیل چھبیس انبیائے کرام علیہم السلام کے اسمائے مبارکہ قرآنِ کریم میں مذکورہیں:

حضرت آدم ، حضرت نوح ،حضرت ابراہیم ،حضرت اسماعیل، حضرت اسحاق ،حضرت یعقوب ،حضرت یوسف، حضرت موسیٰ، حضرت ہارون ، حضرت شعیب ، حضرت لوط، حضرت ہود، حضرت داود، حضرت سلیمان، حضرت ایوب، حضرت زکریا، حضرت یحییٰ ،حضرت عیسیٰ، حضرت الیاس، حضرت الیَسَع، حضرت یونس، حضرت ادریس، حضرت ذوالکفل، حضرت صالح ، حضرت عزیر اور سیدنا محمد رسول اللہ علیہم الصلوٰۃ والسلام۔ ان پر تعیین کے ساتھ نام بہ نام ایمان لانااور دیگر انبیائے کرام علیہم السلام پر اجمالاً ایمان لانا واجب ہے، بس اتنا کہنا کافی ہے :’’اٰمَنْتُ بِاللّٰہِ وَمَلٰئِکَتِہٖ وَکُتُبِہٖ وَرُسُلِہٖ‘‘، اگر ہم تعداد معیَّن کردیں اور اصل تعداد زیادہ ہو تو بعض نبیوں کا انکار لازم آئے گااور اگر حقیقی تعداد کم ہو تو غیرِ نبی کو نبی ماننا لازم آئے گااور یہ دونوں صورتیں کفر ہیں۔ ان میں سے پانچ انبیائے کرام اولوالعزم ہیں: سب سے افضل خاتم النبیین ،رحمۃ للعالمین سیدنا محمد رسول اللہ ﷺہیں ،پھر بالترتیب حضرت ابراہیم خلیل اللہ، حضرت موسیٰ ،حضرت عیسیٰ اور حضرت نوح علیہم الصلوات والسلام ہیں ۔ اُوْلُوالْعَزم کے معنی ہیں:’’عزیمت واستقامت اوررفعت وعظمت والے ‘‘۔نبی اور رسول عام طور پر ہم معنی استعمال ہوتے ہیں ، لیکن ان میں آپس میں معنوی فرق موجود ہے۔رسول اُسے کہتے ہیں جسے اللہ تعالیٰ نے نئی شریعت عطا کر کے بھیجا ہو، اُس میں سابق شریعت کے بعض احکام کو منسوخ کیا گیا ہو یا بعض احکام کا اضافہ کیا گیا ہویا اُسے کسی خاص قوم کی طرف مبعوث کیا گیا ہو، سب سے پہلے صاحبِ شریعت حضرت نوح علیہ السلام تھے ،اس لیے کہا جاتا ہے: ہر رسول نبی ہوتا ہے اور لازم نہیں کہ ہر نبی رسول ہو۔ انبیائے کرام علیہم السلام تمام مخلوق حتیٰ کہ رُسُلِ ملائکہ سے بھی افضل ہیں ،نبی کی تعظیم فرضِ عین ہے اور کسی بھی نبی کی توہین یا تکذیب کفر ہے ۔اللہ تعالیٰ پر نبی بھیجنا واجب نہیں ہے ،بلکہ اللہ تعالیٰ پر کوئی بھی چیز واجب نہیں ہے، اُس نے اپنے فضل سے بعض امور کو اپنے ذمۂ کرم پرلیا ہے ،مثلاً فرمایا: ’’زمین پر چلنے والے ہر جاندار کا رزق اللہ کے ذمۂ کرم پر ہے، (ہود:6)‘‘۔

یہ بھی پڑھیں:   بحث یا عقائد کی تصیح؟ - سطوت اویس

نبوت ورسالت کی حکمت اللہ تعالیٰ نے خود بیان فرمائی: ’’ہم نے خوش خبری دینے اور ڈر سنانے والے رسول بھیجے تاکہ رسولوں (کی بعثت )کے بعد لوگوں کے لیے اللہ کی بارگاہ میں کوئی حجت باقی نہ رہے ، (النساء:165)‘‘۔اس سے مراد یہ ہے کہ رسولوں کے آنے کے بعد نوعِ انسانی کے کسی فرد کے پاس کفروشرک اور ضلالت پر قائم رہنے کے لیے کوئی جواز باقی نہیں رہا کہ وہ اللہ کی عدالت میں یہ عذر پیش کرسکیں کہ ہمیں کوئی راہِ حق بتانے والا نہ تھا۔

نبی کی خصوصیت یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ اس پر وحی کا نزول فرماتا ہے اور اس کی صورتیں اللہ تعالیٰ نے قرآنِ کریم میں بیان فرمادی ہیں: ’’اور بشر کی یہ مجال نہیں کہ اللہ اُس سے کلام فرمائے ماسوا وحی کے یا پردۂ عظمت کے پیچھے سے کلام فرمائے یا وہ کوئی فرشتہ بھیجے کہ وہ اس کے حکم سے جو اللہ چاہے وحی کرے ، (الشوریٰ:51)‘‘۔ اس کے یہ معنی نہیں کہ عیاذاً باللہ !اللہ تعالیٰ براہِ راست وحی نازل کرنے پر قادر نہیں ہے ، بلکہ اس کے معنی یہ ہیں کہ اللہ تعالیٰ کی سنت یہ ہے کہ اُس نے عام طور پر بشر میں اس کی استعداد نہیں رکھی ،تاہم معراج النبی ﷺ کا واقعہ ایسا ہے کہ اس نے سیدنا محمد رسول اللہ ﷺ پر تجلِّی ذات فرمائی اور براہِ راست وحی فرمائی ، لیکن عام ضابطہ وہی ہے جومذکور ہ بالا آیت میں بیان فرمایا،مثلاً :حضرت موسیٰ علیہ السلام سے درخت کے واسطے سے کلام فرمایااور فرشتے کے ذریعے وحی نازل فرماناہمیشہ سے سنتِ الٰہیہ رہی ہے ، یہاں اصطلاحِ شریعت کے مطابق وحی مراد ہے ، وحیِ نبوت کی صورتیں احادیثِ مبارکہ میں مذکور ہیں اور قرآنِ کریم میں اللہ تعالیٰ کاملائکہ کو بھی وحی کرنے کا ذکر ہے۔

لغوی معنی کے اعتبار سے وحی کے معنی ہیں: دل میں کسی بات کا القا کردینا،اس معنی میں شیاطین لوگوں کو دھوکے میں ڈالنے کے لیے ایک دوسرے کو خفیہ طریقے سے باتیں القا کرتے ہیں اور اسی طرح اپنے چیلوں کے ذہنوں میں بھی باتیں ڈالتے ہیں ، کاہنوں اور ساحروں کو بھی شیاطین القا کرتے ہیں اور لغوی معنی کے اعتبار سے اللہ تعالیٰ کی طرف سے اُمِّ موسیٰ، شہد کی مکھی اور زمین کو بھی وحی کرنا یعنی ذہن میں بات ڈالنا یا حکم دینا ثابت ہے ،اس کے لیے بھی قرآنِ کریم میں وحی کا کلمہ آیا ہے ۔

نبوّت کامدار علم ،عقل ،کسب ،عبادت وریاضت اور مجاہدے پر نہیں ہے ،بلکہ یہ ایک وہبی منصب ہے ،یعنی خالصۃً اللہ تعالیٰ کی عطا ہے اور وہ جسے چاہتا ہے اس کے لیے منتخب فرماتا ہے، ارشادِ باری تعالیٰ ہے: ’’اللہ خوب جانتا ہے کہ وہ کس جگہ اپنی رسالت کو رکھے گا، (الانعام:124)‘‘۔ البتہ یہ بات درست ہے کہ جسے وہ اس منصب کے لیے منتخب فرماتا ہے ،اُسے تمام مخلوق سے اعلیٰ علمی، عقلی اورفکری صلاحیتوں سے سرفراز فرماتا ہے، انہیں غیر معمولی تدبّر ،قوتِ فیصلہ اور نورِ بصیرت عطا فرماتا ہے، غیرِ نبی کتنا ہی صاحبِ عقل وفکر ہو، اُسے نبی سے کوئی نسبت نہیں ہوسکتی ، عقلاء وفلاسفہ کی باتیں ظَنّ وتخمین اور قیاسات کی بنیاد پر ہوتی ہیں،وہ قطعی نہیں ہوتیں، اُن کے اگر کسی حد تک درست ہونے کا امکان ہے، تو خطا ،فکری کجی اور ضلالت کا امکان بھی رہتا ہے، اللہ تعالیٰ نے فرمایا: ’’پس کیا آپ نے اس شخص کو دیکھا جس نے اپنی خواہش کو اپنا معبود بنالیا اور اللہ نے اُسے علم کے باوجود گمراہی میں چھوڑ دیااور اس کے کان اور اس کے دل پر مہر لگادی اور اس کی آنکھوں پر پردہ ڈال دیا،پس اللہ کے(گمراہی میں چھوڑنے کے) بعد کون ہے جو اُسے ہدایت دے ، (الجاثیہ:23)‘‘۔ اس سے معلوم ہوا کہ عقل کسی درجے میں رہنمائی کرسکتی ہے ،لیکن ہدایت کے لیے عقل پر کلی انحصار نہیں کیا جاسکتا، ورنہ عُقَلاء وحُکَماء میں سے کوئی گمراہ نہ ہوتا، پس ہدایت کا قطعی اور ہر شک وشبہے سے پاک ذریعہ صرف اور صرف وحیِ نبوت ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   عقیدۂ نبوت و رسالت - مفتی منیب الرحمن

نبی معصوم ہوتا ہے،عصمت نبی اور فرشتے کا خاصّہ ہے، ان کے سواکوئی معصوم نہیں، عصمتِ نبوت کے معنی یہ ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے ہر قسم کی معصیت سے اُن کی حفاظت کا وعدہ فرمالیا ہے ،لہٰذا اُن سے گناہ کا صادر ہونا شرعاً مُحال ہے، پس نبی نبوت سے پہلے اور نبوت کے بعد کبائر سے پاک ہوتا ہے اور مختار قول کے مطابق نبوت سے پہلے بھی عمداً صغائر سے پاک ہوتا ہے ،وہ احکام جو اللہ تعالیٰ نے امت تک پہنچانے کے لیے نبی کو تفویض کیے ہیں ،ان کے ابلاغ میں نبی قطعی طور پر معصوم ہوتا ہے اور اس میں خطا ونسیان کا بھی کوئی احتمال نہیں ہوتا،اگر احکامِ تَبْلِیْغِیَّہ میں خطا ونسیان کا احتمال تسلیم کرلیا جائے تو شریعت کی بنیاد ہی منہدم ہوجائے گی، لہٰذا اس مسئلے میں انتہائی احتیاط کی ضرورت ہے۔نبوت کی صفت جاریہ مُسْتَمِرَّہ ہے ، یعنی نبی سے نبوت کا زوال نہیں ہوتا اور جونبی سے نبوت کا زوال جائز جانے، وہ دائرۂ اسلام سے خارج ہے۔

نبی کو اللہ تعالیٰ وجاہت سے نوازتا ہے ،قرآنِ کریم میں ہے :’’اے مومنو! ان لوگوں کی طرح نہ ہوجانا جنہوں نے موسیٰ کو اذیت پہنچائی تھی، تو اللہ نے موسیٰ کو اُن کی تہمت سے بری کردیااور وہ اللہ کے نزدیک وجاہت (عزت )والے تھے، (الاحزاب:69)‘‘۔ چونکہ نبی امت کے لیے قُدوہ، مُقتدیٰ اور پیشوا ہوتا ہے، اس لیے اس کا معزز وباوقار ہونامنصبِ نبوت کا تقاضا ہے، سو یہ کہنا کہ’’ نبی اللہ تعالیٰ کے نزدیک( معاذ اللہ!)چوہڑے چمار کی مثل ہے‘‘کھلی گمراہی ہے۔ نبی لوگوں کے درمیان رہتا ہے، سوتا جاگتا ہے، کھاتا پیتا ہے، بشری عوارض بھی اُس پر طاری ہوتے ہیں: جیسے صحت ومرض ،خوشی اور غم کا لاحق ہونا، وفات پاناوغیرہ ، لیکن نبی ایسے عوارض سے پاک ہوتا ہے جو انسانی شرَف ووقار کے منافی ہوں ،جیسے :جذام یا برص جیسی قابلِ نفرت بیماریوں کا لاحق ہوناوغیرہ۔

نیز ہم ایسی روایات کو بھی رَد کرتے ہیں جو شانِ نبوت کے خلاف ہوں ،جیسے :حضرت ایوب علیہ السلام کے بارے میں یہ روایات کہ معاذ اللہ! انہیں ایسی بیماری لاحق ہوگئی تھی کہ لوگوں کو گھِن آتی تھی ،اُن کے جسم میں کیڑے پڑ گئے تھے اور انہیں کوڑے کے ڈھیر پر ڈال دیا گیا تھا، البتہ انبیاء پر مصائب ومشکلات اورآزمائشوں کا آنا شانِ نبوت کے خلاف نہیں ہے، حال ہی میں ایک مشہور واعظ نے کہا: ’’(معاذ اللہ)یوسف علیہ السلام کا منہ کالا کر کے انہیں گدھے پر بٹھاکر گھمایا گیا ‘‘، یہ شانِ نبوت کے خلاف ہے اور نبی کے بارے میں ایسے ریمارکس دینے سے اللہ کی پناہ مانگنی چاہیے، تاریخ میں ہر طرح کی روایات مل جاتی ہیں ،لیکن دینی مُسَلَّمَات کے خلاف روایات کو رَد کردیا جائے گا، ایسی ہی روایات کو ’’اسرائیلیات ‘‘سے تعبیر کیا گیا ہے اورموجودہ تحریف شدہ تورات میں انبیائے کرام علیہم السلام کے بارے میں ایسی کئی روایتیں ہیں جو شانِ نبوت کے خلاف ہیں، اُن کو رد کیا جائے گا،(جاری ہے)۔

Comments

مفتی منیب الرحمن

مفتی منیب الرحمن

مفتی منیب الرحمن، چیئرمین مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان، صدر تنظیم المدارس اہلسنت پاکستان، سیکرٹری جنرل اتحاد تنظیمات مدارس دینیہ پاکستان، مہتمم دارالعلوم نعیمیہ اہلسنت پاکستان

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.