اہل کراچی کشمیر کی آواز بن کر گھروں سے نکلے - فریحہ مبارک

اتوار کی چھٹی کا تپتا ہواحبس ذدہ دن ۔۔۔پھر برستی بارش اور سیلابی ریلے ۔۔۔ شاہراہ فیصل پراطراف سڑ ک کے ایستاده کےالیکٹرک کے موت کے کھمبوں کے درمیان استقامت سے کھڑے کراچی کے باسیوں نے ثابت کر دیا کہ وہ جا گ رہے ہیں ،اپنے محصور کشمیری بہن بھائیوں کے ساتھ کھڑے ہیں، ۔۔۔

ان ساری آوازوں کو پیچھے چھوڑا جو کہہ رہی تھیں کہ مارچ سےکیا حاصل ،کیاکشمیر آذاد ہو جائے گا؟ ۔۔۔۔کوئی قصبہ کی پہاڑیوں سے اترا،کوئی ڈیفینس کی سیدھی سپاٹ سڑکوں سے آیا ۔۔ کسی نے یہ کہہ کر گاہکوں کے لئے دکان کے شٹر گرائے۔کہ نہیں صاحب!! آج کاروبار نہیں ہو گا ۔۔۔اس پار لاک ڈاؤن ہے ،ہسپتال قبرستان بنے ہیں ۔۔۔۔اس لئے آج ہماری ساری مصروفیات کا لاک ڈاؤن ہے۔۔۔۔۔۔۔ مارچ نے ساری دنیا، بھارت اور کشمیری عوام کو پیغام دیا کہ ہم کشمیر کے لئے ہر قسم کی قربانی دینے کے لئے تیار ہیں،قائدین کا خطاب مصلحتوں میں لپٹی کشمیر پالیسی کو مسترد کر رہاتھا ،اسٹیج پر سجے بینرز اعلان کر رہے تھے کہ قوم کا مطالبہ کیا ہے ۔؟؟۔۔۔کشمیر بزور شمشیر ۔۔۔۔۔⚔ اللہ کو گواہ بنایا گیا کہ ہم کشمیرکے ساتھ کھڑے ہیں۔۔ ان کابہتا لہوہمارے وجود کے زخموں سے رستا لہو ہے، اٹھائیس دن سے محصور کشمیر ی مسلمان کو اپنی بقا کی جنگ تک محدود کر کے ان کی قوت مزاحمت کو کچلنے کی ناپاک کوشش جاری ہے ،امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے یہ بھی واضح کیا کہ ہماری جدوجہد بھارت کے 22 کروڑ مسلمانوں کی بقا کی جدوجہد بھی ہے کیوں کہ انھیں بھی کچلا جارہا ہے اورکشمیر کے بعد وہ ان پر بھی ایسے ہی زندگی تنگ کرے گا ،بھارت اپنی غیر انسانی حرکتوں کی وجہ سے اپنے منطقی انجام کو پہنچنے کی راہ پر تیزی سےگامزن ہے ۔۔۔دیکھیں اللہ کس کس کو اس عظیم کام کے لئے منتخب کرتا ہے، آخر توفیق تو اللہ کی طرف سے ہی ملنی ہے۔۔۔۔ بس جاگتے رہنا بھائیوں بہنوں ۔۔۔۔۔۔۔!!!!!سونا نہیں ۔۔۔اب سمجھو چھٹیوں اور رخصتوں کے دن گٰئے ۔۔۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */