گنگو تیلی سے مودی تیلی تک - راجہ احسان

ہندوستان کے علاقے مدھیا پردیش کا ایک ضلع بھوپال جو کہ ایک ہندو راجہ بھوج پال کے نام پر " بھوج پال" سے بگڑ کر بھوپال بن گیا۔ بھوج پال کے راجہ کو عرف عام میں راجہ بھوج کہا جاتا تھا۔ رانی کملا وتی جب بھوپال کی حکمران بنی تو اسی زمانے میں گنگو تیلی کو راجہ بھوج بننے کی سوجھی۔ وہ ایک جنونی شخص تھا۔ گنگو تیلی کا پروگرام تھا کہ رانی کملاوتی کو شکست دے کر اس سے شادی کر کے راجہ بھوج بن جائے گا۔ اس نے معاشرتی قدروں کو بالائے طاق رکھ کر رانی کے خلاف بغاوت کر دی۔ جب رانی کو شکست کے آثار نظر آئے تو اس نے خودکشی کرنا قبول کیا اور گنگو تیلی کا خواب ادھورا رہ گیا۔ یہ بات چاہے جھوٹ پر ہی کیوں نہ مبنی ہو لیکن گنگو تیلی ایک ایسا کردار ہے جو اپنے مفادات کے حصول کے لیے تمام معاشرتی اقدار و قوانین کو بالائے طاق رکھ کر سب کچھ کر گزرنے کو تیار نظر آتا ہے اور تباہی و بربادی معاشرے کے حصے میں آتی ہے۔ بھارتی وزیرِاعظم نہ صرف ذات کے تیلی ہیں بلکہ ان کے طرزِ فکر اور اقدامات بھی گنگو تیلی ہی کی طرح ہیں۔ ہندوؤں کے عقائد کے مطابق اگر دیکھا جائے تو یہ گنگو تیلی ہی کا دوسرا جنم ہو سکتا ہے لیکن بحیثیت مسلمان میں یہ سمجھتا ہوں کہ مودی کا کردار گنگو تیلی سے مماثل ہے۔ ہو سکتا ہے کہ نریندر مودی گنگو تیلی کی اولاد میں سے ہوں۔

میں بحیثیت جرمیات کے طالبِ علم کے مودی کو ایک ایسے جنونی کی نظر سے دیکھتا ہوں کہ جسے نہ تو معاشرتی قدروں کی کوئی پرواہ ہے نہ ہی اسے قانون کا کوئی پاس ہے نہ ہی انسانیت کی اس کی نظر میں کوئی اہمیت ہے۔ یہ ایک ایسی شخصیت کا مالک شخص ہے جو صرف لذتِ گناہ سے آشنا ہے بلکہ ایسی شخصیت کے لیے تو گناہ نام کی کوئی چیز ہوتی ہی نہیں جبکہ اس کی نظر صرف اپنے مقاصد کے حصول پر ہوتی ہے اور اس کی ذات کو راحت صرف اس حصول سے ہی ملتی ہے۔ میرے محترم استاد جناب پروفیسر ملک مسعود اعوان صاحب جو کہ پیرمہر علی شاہ بارانی زرعی یونیورسٹی میں جرمیات کے شعبے سے وابستہ ہیں، مودی کو ''سائیکو پیتھ'' کہتے ہیں اور انھوں نے اس حوالے سے اس پر ایک مضمون بھی لکھا ہے۔ پروفیسر صاحب کی اجازت و تائید سے میں نے انھی کے مضمون اور نظریات سے استفادہ کرتے ہوئے اسے اپنے انداز میں تحریر کرنے کی کوشش کی ہے جس کے لیے میں ان کا بے حد شکر گزار ہوں۔

بھارتی وزیرِاعظم نریندر مودی کی زندگی پر اگر ایک نگاہ ڈالی جائے تو ان پر پرتشدد اور مجرمانہ کاروائیوں میں ملوث ہونے کے ان گنت الزامات و شواہد ملیں گے۔ پر تشدد اور مجرمانہ طرزِ عمل نفسیاتی مرض کی طرف بھی دلالت کرتا ہے۔ بہت سارے مجرم جو ظاہری طور پر نارمل دکھائی دیتے ہیں ان میں سے ہی کچھ لوگ "اخلاقی طور پر بدعنوان" یا "اخلاقی پاگل پن" کا شکار ہوتے ہیں کیونکہ ان کے نزدیک اخلاقیات کی کوئی قدر و قیمت نہیں ہوتی، ایسے لوگ احساسِ ہمدردی سے محروم ، لوگوں کے حقوق کا احترام اور ان کی پامالی پر کسی بھی قسم کے احساسِ ندامت سے عاری یہ لوگ تکبرانہ طور پر ایسے جرائم سے لذت محسوس کرتے ہیں۔ ایک سائیکوپیتھ جس ماحول کی پیداوار ہے، اس میں اس کی پرورش بھی شامل ہے۔ وہ عام طور پر ’’سرد مہری‘‘ ظاہر کرتے ہیں اور دوسروں کے جذبات و احساسات سے بے پرواہ رہتے ہیں۔ سائیکوپیتھ ایک ڈھیٹ قسم کی شخصیت کا حامل ہوتا ہے، احساسِ شرم، احساسِ جرم، پچھتاوے نام کی کوئی چیز ان کے نزدیک سے بھی ہو کر نہیں گزرتی۔ وہ ناقابل بھروسہ اور غیر ذمہ دار ہوتے ہیں اور دوسروں کو ان چیزوں کا ذمہ دار ٹھہراتے ہیں جو در حقیقت ان کی اپنی غلطیاں ہوتی ہیں۔ عدم توجہ، بےاعتقادی اور اپنے مفادات کے لیے صراحت کے ساتھ جھوٹ بولنا اور اس جھوٹ سے دوسروں کے جذبات کو بھڑکا کر اپنے مقصد کے لیے استعمال کرنا ان کی علامات میں سے ہے۔ ایسے لوگ اپنی عظمت کے قائل ہوتے ہیں اور خود کو عقلِ کُل سمجھتے ہوئے اپنے کیے ہر اقدام کو جائز تصور کرتے ہیں۔ جب ہم کسی کام کا آغاز کرتے ہیں تو کام کے شروع ہونے کے بعد ظاہر ہونے والے حالات اور اس سے متعلق نئی معلومات پر انحصار کرتے ہوئے، سرگرمی میں ضروری ردوبدل کرنے کا اور اپنے ردِ عمل میں تبدیلی کرنے کا رجحان اور گنجائش بھی رکھتے ہیں، لیکن سائیکوپیتھ اس صلاحیت کے حامل نہیں ہوتے کیونکہ وہ ہر وقت رد عمل کے لیے تیار رہتے ہیں۔ سائکیوپیتھ عام طور پر پیتھالوجک انوسنٹریسیٹی کا شکار ہوجاتے ہیں اور وہ کسی سے پیار کرنے کے قابل نہیں ہوتے۔

مندرجہ بالا سائیکوپیتھیس کی خصوصیات کے حامل نریندر مودی میں 2014 ء سے ہندوستان کے 14 ویں اور موجودہ وزیر اعظم کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔ مودی بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی)، اور راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (آر ایس ایس) کے رکن ہیں، ایک ہندو قوم پرست / انتہا پسند تنظیم۔ مودی کے خاندان کا تعلق ہندوستان کی خدمتگار ذاتوں میں سے تیلی برادری سے تھا جسے ہندوستانی حکومت اور عوام ایک پسماندہ طبقے میں گردانتے ہیں۔ بچپن میں ہی مودی نے اپنے والد کو ریلوے اسٹیشن پر چائے بیچنے میں مدد دی، اور بعد میں بس سٹاپ کے قریب اپنے بھائی کے ساتھ چائے کا ایک اسٹال چلایا۔ مودی نے اپنی اعلی ثانوی تعلیم اپنی جنم بھومی میں ہی مکمل کی جہاں ایک استاد نے انہیں تھیٹر میں دلچسپی رکھنے والا اوسط درجے کا طالب علم اور خطابت کا شوقین قرار دیا۔ طالبِ علمی کی ابتداء ہی سے مودی مباحثوں اور تقریروں کے مواقع سے بھرپور استفادہ کرتے، تھیٹر کی پروڈکشن میں زندگی سے زیادہ بڑے کردار ادا کرنے کو ترجیح دیتے ،جیسے بادشاہ یا شہزادہ وغیرہ بننا، جس نے ان کے سیاسی شناخت کو متاثر کیا۔

یہ بھی پڑھیں:   آر ایس ایس کا ہندو راشٹر کا خواب پورا ہونے والا ہے - سدھارتھ بھاٹیا

ایک پسماندہ طبقے کے ہندو کی حیثیت سے، زیادہ سے زیادہ عزائم والے مودی کسی بھی قیمت پر اپنے خوابوں کو حاصل کرنا چاہتے تھے۔ ظاہر ہے کہ اس کے عزائم ذات پات پر مبنی ہندوستانی معاشرے میں ایک خواب بن سکتے ہیں کیونکہ ثقافت مراعات یافتہ اقلیتوں کے تحت نچلی ذات کو جائز مقاصد کے حصول کی اجازت نہیں دیتی ہے۔ اس قسم کی صورتحال بہت سوں کو مایوس کرتی ہے کیونکہ ہندوستانی معاشرہ مراعات یافتہ طبقے اور پسماندہ طبقے کو اپنے مقاصد کے حصول کے لیے یکساں مواقع فراہم نہیں کرتا۔ لیکن، بے رحم ارادے اور اختراعی سوچ کے حامل، اپنے خوابوں کے حصول اور بہتر زندگی کے خواہاں مودی جیسے ایک محروم شخص نے انتہا پسند گروپ آر ایس ایس میں شامل ہوکر اپنے عزائم کی تکمیل کا فیصلہ کیا، بنیادی طور پر ہندوستان میں مسلمانوں اور دیگر اقلیتوں کو ختم کرنے کے نعرے لگاتے ہوئے "ہندوتوا" کا پرچار کیا۔ ان کی جارحانہ طبیعت اور بےرحم شخصیت کو آر ایس ایس کی شکل میں احساسِ گناہ، احساسِ جرم اور پچھتاوے کے بغیر اس طرح کے بھیانک اہداف کے حصول کے لیے ایک بہترین پلیٹ فارم میسر آ گیا۔ آر ایس ایس میں شامل ہونے کے بعد انہوں نے کبھی بھی پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ وہ کسی بھی قیمت پر اپنے خوابوں اورنظریات کی تکمیل کی تگ و دو مصروف ہو گئے۔ اقتدار میں شامل ہونے اور اپنے ایجنڈے کو پورا کرنے کے لیے یہ یقینی طور پر ایک سائیکوپیتھ اور ایک انتہا پسند گروپ کا انوکھا مرکب ہے۔

جب آٹھ سال کی عمر میں، مودی نے آر ایس ایس کو دریافت کیا اور انھوں نے اپنے مقامی تربیتی اجلاس میں شرکت شروع کی تو لکشمن راؤ نے انہیں آر ایس ایس میں "جونیئر کیڈٹ" کے طور پر شامل کر لیا اور وہ ان کے سیاسی سرپرست بن گئے۔ نریندر مودی کی نوعمری میں ہی شادی ہوگئی لیکن جلد ہی، انھوں نے ازدواجی ذمہ داریوں کو ترک کردیا اور گھر چھوڑ دیا اور دوبارہ شادی نہیں کی ( اور کبھی یہ تک بھی جاننے کی کوشیش نہیں کی کہ ان کی بیوی کہاں ہے اور کیا کر رہی ہے)۔ یہ ابتدائی شادی خود کئی دہائیوں تک مودی کے عوامی اعلانات میں غیرضروری رہی۔ اپریل 2014ء میں، ان کے اقتدار میں آنے والے قومی انتخابات سے کچھ دیر قبل، مودی نے عوامی طور پر اس بات کی تصدیق کی کہ ان کی شادی ہوگئی ہے، اور ان کی اہلیہ محترمہ چمن لال تھیں، لیکن ان کی علیحدگی ہو گئی تھی۔

1971ء میں وہ آر ایس ایس کے لیے کل وقتی باقاعدہ کارکن بن گئے۔ 1975ء میں ملک بھر میں عائد ایمرجنسی کے دوران مودی کو روپوش ہونے پر مجبور کیا گیا تھا۔ آر ایس ایس نے انہیں 1985ء میں بی جے پی میں شامل کروایا تھا، اور وہ 2001ء تک پارٹی کے تنظیمی ڈھانچے میں متعدد عہدوں پر فائز رہے اور جنرل سکریٹری کے عہدے تک پہنچے۔ مودی کو 2001ء میں گجرات کا وزیر اعلی مقرر کیا گیا تھا اور 2002ء میں گجرات فسادات سے نمٹنے کے لیے انھیں تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ مودی نے 2014ء کے عام انتخابات میں بی جے پی کی قیادت کی تھی لیکن وہ اپنے ہندو قوم پرست عقائد اور 2002ء کے گجرات فسادات کے دوران ان کے کردار کی بنا پر مقامی اور بین الاقوامی سطح پر متنازعہ شخصیت تھے۔

فروری 2002 کو، گودھرا کے قریب کئی سو مسافروں پر مشتمل ایک ٹرین جل گئی، جس میں لگ بھگ 60 افراد ہلاک ہوگئے۔ مسمار شدہ بابری مسجد کے مقام پر ایک مذہبی تقریب کے بعد ایودھیا سے واپس آنے والے ہندو یاتریوں کی ایک بڑی تعداد ٹرین میں موجود تھی۔ اس واقعے کے بعد ایک عوامی بیان دیتے ہوئے، مودی نے اسے ایک دہشت گرد حملے کا منصوبہ قرار دیا اور مقامی مسلمانوں کو اس منصوبے کا ذمہ دار ٹھہرایا۔ گجرات میں مسلم مخالف تشدد پھیل گیا۔ آزاد ذرائع نے ہلاکتوں کی تعداد 2000 سے زیادہ بتائی۔ لگ بھگ ڈیڑھ لاکھ افراد کو پناہ گزین کیمپوں میں منتقل کیا گیا۔ متاثرین میں متعدد خواتین اور بچے شامل تھے کیونکہ تشدد میں بڑے پیمانے پر عصمت دری اور خواتین کے ساتھ زیادتی بھی شامل ہے۔ متعدد علمائے کرام نے اس تشدد کو قتل عام قرار دیا ہے، جبکہ دوسروں نے اس کو ریاستی دہشت گردی کی مثال قرار دیا ہے۔ اس واقعہ پر مارتھا نوسبوم نے کہا کہ اب ایک وسیع اتفاق رائے ہوچکا ہے کہ گجرات میں تشدد نسلی صفائی کی ایک شکل تھی، اور یہ کہ بہت سے طریقوں سے اس کو قبل از وقت قرار دیا گیا تھا، اور یہ ریاستی حکومت کی شراکت سے ہوا تھا۔ ہنگاموں کے شکار مسلمان متاثرین کو مزید امتیازی سلوک کا نشانہ بنایا گیا جب ریاستی حکومت نے اعلان کیا کہ مسلم متاثرین کے لیے معاوضہ ہندوؤں کو پیش کی جانے والی رقم کا نصف ہوگا۔ 2002ء کے واقعات میں مودی کی ذاتی شمولیت پر بحث جاری ہے۔ جب، اپریل 2009ء میں ذکیہ جعفری کی ایک درخواست کے جواب میں (احسان جعفری کی بیوہ، جو مودی کے خلاف الیکشن لڑتی تھیں اور گلبرگ سوسائٹی کے قتل عام میں ماری گئی تھیں)، عدالت نے ایس آئی ٹی سے کہا تھا کہ وہ ان ہلاکتوں میں مودی کے ملوث ہونے کے معاملے کی تحقیقات کرے۔

یہ بھی پڑھیں:   جنت کشمیر میں خواتین سے دست درازیاں - قادر خان یوسف زئی

2002ء کے انتخابات میں، مودی نے اپنی انتخابی مہم کے دوران مسلم مخالف بیان بازی کا قابل ذکر استعمال کیا، اور بی جے پی نے ووٹروں میں مذہبی پولرائزیشن سے فائدہ اٹھایا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ مودی کی دوسری میعاد کے دوران حکومت کی بیان بازی ہندوتوا سے گجرات کی معاشی ترقی کی طرف منتقل ہوگئی۔ تاہم مودی نے بہت سے ہندو قوم پرستوں کے ساتھ روابط برقرار رکھے۔ وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی (جنہوں نے 2002ء میں گجرات تشدد کے بعد مودی سے رواداری کی درخواست کی اور وزیر اعلی کے طور پر ان کے استعفی کے حمایت کی) نے خود کو مودی سے دور کر دیا۔ بین الاقوامی مذہبی آزادی قانون کے زیراہتمام تشکیل دیے جانے والے کمیشن برائے بین الاقوامی مذہبی آزادی کی سفارشات کے مطابق، محکمہ خارجہ نے مودی کو ریاست ہائے متحدہ امریکہ میں داخل ہونے سے روک دیا تھا۔ برطانیہ اور یورپی یونین نے فسادات میں ان کے کردار کی وجہ سے اس کی حیثیت کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ چونکہ مودی ہندوستان میں اہمیت اختیار کرگئے، برطانیہ اور یورپی یونین نے بالترتیب اکتوبر 2012ء اور مارچ 2013ء میں پابندی ختم کر دی اور وزیر اعظم منتخب ہونے کے بعد انہیں واشنگٹن بلایا گیا۔

مودی نے اپنی پوری زندگی متعدد بار جنونی شخصیت ہونے کا مظاہرہ کیا۔ انہوں نے معاشرتی اصولوں کا کبھی احترام نہیں کیا، معاشرتی پابندیوں کو توڑنے کے لئے ہر وقت تیار رہتے یہاں تک کہ بین الاقوامی ذمہ داریوں سے اپنے مقاصد کے حصول کے لیے بغیر کسی پچھتاوے اور قتل عام کے خوف کے روگردانی کی۔ وہ اپنی ابتدائی زندگی میں ہی سماجی دباؤ اور محرومی کے رد عمل میں ایک انتقامی شخص کے طور پر نمودار ہوئے۔ مقبوضہ کشمیرمیں آرٹیکل 370 کو منسوخ کرنا ان کے ذاتی اور آر ایس ایس ایجنڈے کی ایک اور مثال ہے جو ہندوستان سے مسلمانوں اور اقلیتوں کو ختم کرنا ہے۔ انہوں نے جوہری ہتھیاروں کے استعمال کی پالیسی میں تبدیلی کا اشارہ دے کر نہ صرف خطے بلکہ پوری دنیا میں اس مسئلے کو مزید بڑھایا۔ اس نفسیاتی مریض اور غیر معمولی طرز عمل کے رہنما کی وجہ سے پوری دنیا خطرے میں پڑ گئی ہے کیونکہ سیاسی عہدہ سنبھالنے کے بعد انھوں نے اپنے کیے ہوئے کاموں کے لیے کبھی بھی پشیمانی اور ندامت کا کوئی احساس نہیں دکھایا۔ ان کے معاملے کو اقوام متحدہ کے صدر برائے نفسیاتی ماہر نفسیات کی کمیٹی کے پاس بھیجا جانا چاہیے کیوں کہ انھوں نے عالمی امن اور ہم آہنگی کو خطرے میں ڈال دیا ہے۔ خطے میں مزید تناؤ سے بچنے کے لیے اقومِ متحدہ کی سلامتی کونسل کی نگرانی میں تشکیل پانے والی ایک کمیٹی کے ذریعہ ان کے اقدامات پر نظر رکھنی چاہیے، کسی بھی ناخوشگوار واقعے سے بچنے کے لیے ان کے اقدامات کو فوری طور پر 5 اگست کی بھارتی مقبوضہ کشمیر کی پوزیشن پر واپس لانا چاہیے۔ اقومِ متحدہ کی سلامتی کونسل کو کشمیریوں تک رسائی دی جانی چاہیے۔ اقوام متحدہ میں کشمیریوں کی مشاورت سےکیا جانے والا حل ہی 70 سالوں سے ان پر ہونے والے جارحیت سے متاثرہ لوگوں کی تسکین کا باعث ہو سکتا ہے۔

سب سے اہم بات یہ ہے کہ دنیا کی سلامتی کے ضامن دنیا کا امن کیسے ایک جنونی اور نفسیاتی بیمار شخص کے ہاتھ میں دے سکتے ہیں۔ اگر مودی کے غیر ذمہ دارانہ اقدامات کی وجہ سے خطہ جوہری حادثے کی طرف چلا گیا تو اربوں انسانوں کی زندگیاں خطرے میں پڑ سکتی ہیں۔ کیا اربوں انسانوں کی تقدیر ایک نفسیاتی جنونی شخص کے ہاتھ میں دی جا سکتی ہے؟ اقوامِ عالم کو اب یہ سوچنا ہوگا اور اس کے لئے کوئی لائحہ عمل بنانا ہوگا۔ میری اپنے ہم وطنوں سے بھی گزارش ہے کہ ہر شخص اپنے دائرہء اختیار کے مطابق یہ آواز اٹھائے تا کہ عالمی سلامتی کے ضامنوں کے کانوں تک ہماری یہ فکر پہنچے۔ اگر ایسا نہ ہو سکا تو اربوں انسانوں کی زندگیاں گنگو تیلی کے جذبہء لذتِ ظلم کی نذر ہو جائیں گی ۔