جنابِ وزیرِ اعظم سے چند گزارشات - مفتی منیب الرحمن

چندگزارشات وزیرِ اعظم جناب عمران خان کے پیشِ خدمت ہیں: ہم مان لیتے ہیں کہ آپ نے حسنِ نیت سے اور نیک عزم کے ساتھ ریاستِ مدینہ قائم کرنے کا دعویٰ کیا اور وقتاً فوقتاً آپ اسے دُہراتے رہتے ہیں ،لہٰذا آپ کی نیت پر بدگمانی کرنے کا کوئی جواز نہیں ہے۔ لیکن ہم نے پہلے بھی کہاتھا، یہ بہت بڑا دعویٰ ہے، اس پر پورا اترنا آسان نہیں ہے اور موجودہ حالات میں عقلاً تو محال نہیں ہے، مگر عملاً دشوار ترین ہے۔ ریاستِ مدینہ سے ایک مسلمان کا ذہن اُس چالیس سالہ دور کی طرف جاتا ہے، جو سیدالمرسلین ﷺ کی ہجرت سے لے کر رسول اللہ ﷺ کے چوتھے خلیفۂ راشد امیرالمؤمنین حضرت علی رضی اللہ عنہ وکرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم کی عظیم شہادت پر ختم ہوتا ہے، یعنی عہدِ رسالت مآب ﷺ اور عہدِ خلافتِ راشدہ رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین کا مبارک دور ، جس کی عظمت کے نقوش ہرمسلمان کے دل ودماغ پر ثبت ہیں۔ پس آپ کے لیے بہتر یہ ہے کہ آپ اپنے خطابات میں یہ کہیں: ’’ہم اپنی بساط کے مطابق اسلامی فلاحی ریاست قائم کرنے کی جدوجہد کر رہے ہیں، ہماری نیت نیک ہے، عزائم پُختہ ہیں، اللہ تعالیٰ ہمیں اس میں سُرخرو فرمائے اور کامیابی نصیب فرمائے‘‘۔

معروضی حقیقت یہ ہے کہ ہم آج بھی اپنے دوست ممالک سے سود پر قرض لے کر نظامِ مملکت چلا رہے ہیں، اسی طرح عالمی مالیاتی اداروں سے سود پر قرض لے رہے ہیں اور داخلی طورپر اپنے قومی مالیاتی اداروں سے بھی وقتا فوقتاً سود پر قرض لیتے ہیں اور قومی بچت کی مختلف اسکیمیں بھی ریاست کے داخلی سودی قرض ہیں۔ ہماری گزشتہ حکومتیں بھی یہی کرتی رہی ہیں، جبکہ فتحِ مکہ کے موقع پر رسول اللہ ﷺ نے اعلان فرمایاتھا: ’’بے شک میں عہدِ جاہلیت کے سودی واجبات کو اپنے قدموں تلے روندتا ہوں، صرف رأس المال یعنی اصل زَر اداکرنا ہوگا اور سب سے پہلے میں (اپنے چچا) عباس بن عبدالمطلب کا سود معاف کرتا ہوں، یعنی آپ ﷺ نے قطعی اعلان فرما دیا تھا کہ اب اسلامی ریاست میں سودی لین دین نہیں چلے گا اور ایسا ہی ہوا۔ کیا ریاستِ مدینہ میں کوئی تصور کر سکتا ہے کہ قوم کی بیٹیاں چوک میں یہ پلے کارڈ لے کر کھڑی ہوں: ’’میرا جسم میری مرضی، ہاں! میں بدچلن، میں آوارہ‘‘، مگر آپ کے زیرِ اقتدار ریاستِ پاکستان میں ایسا ہوچکا ہے۔

دوسری اہم گزارش یہ ہے کہ آپ اپنے خطابات میں جو اسلامی حوالے دیں، اُن کے بارے میں کسی مُستندصاحبِ علم یا کم از کم اپنے وزیر ِمذہبی امور سے مشاورت کر لیا کریں۔ دینی مُقدّسات ایک حساس معاملہ ہے اور اس کے لیے الفاظ کا چُناؤ کرنے میں بےحد احتیاط کی ضرورت ہے۔ میر انیس اور میر تقی میر نے کہا تھا:


خیالِ خاطرِ احباب چاہیے ہر دم

انیس! ٹھیس نہ لگ جائے، ان آبگینوں کو

لے سانس بھی آہستہ کہ نازک ہے بہت کام

آفاق کی اس کارگہِ شیشہ گری کا


دینی مُقدّسات سے رشتۂ عقیدت کے آبگینے تو حد درجہ نازک ہیں۔ یہ بھی پیشِ نظر رہے کہ مسلمانوں کے لیے عقائد اور مُقدّساتِ دین کے معاملات جماعتی وفاداریوں سے بالاتر ہوتے ہیں۔ ہماری زندگی اس شعبے میں گزری ہے، لیکن ہم بھی ممکنہ حد تک حساس موضوعات پر بولنے یا لکھنے سے پہلے اصل مآخِذ کی طرف رجوع ضرور کرتے ہیں۔ ایک ہی مفہوم کے اظہار کے لیے الفاظ کے انتخاب کا بہت فرق ہوتا ہے۔ اردو زبان میں ایک اندازِ بیان یہ ہے کہ کوئی کہے: ’’تمہاری ماں کا خصم‘‘ اور دوسرا یہ: ’’آپ کے والدِ بزرگوار‘‘، ان دونوں میں معنوی فرق کوئی نہیں ہے، لیکن تاثیر کے اعتبار سے زمین و آسمان کا فرق ہے۔ پہلے کلمات سن کر انسان کے جذبات بھڑک اٹھتے ہیں، جبکہ دوسرے کلمات سن کر انسان کے دل میں قائل کے لیے احترام کے جذبات پیدا ہوتے ہیں۔ عربی شاعر نے کہا ہے: ’’نیزوں کے زخم تو وقت گزرنے کے ساتھ بھر جاتے ہیں، لیکن زبان کے لگائے ہوئے زخم کبھی مُندمِل نہیں ہوتے‘‘۔

یہ بھی پڑھیں:   تحریک انصاف نے بھی اس حمام میں کپڑے اتار دیے - اعزاز سید

امیر المؤمنین حضرت علی رضی اللہ عنہ اور ایک یہودی کے مابین مُقدمے کے حوالے سے آپ نے جو بات کہی، وہ معنوی اعتبار سے درست ہے، کیونکہ عدالت سے جس فریق کے خلاف فیصلہ آجائے، ہمارے عرف میں کہا جا سکتا ہے: وہ ہار گیا۔ لیکن اس کو اس انداز سے بیان کرنا چاہیے: امیر المؤمنین حضرت علی رضی اللہ عنہ خلیفۃ المسلمین اور قاضی القضاۃ ہوتے ہوئے بھی ایک یہودی کے مقابل عدالت میں مُدعی کے طور پر پیش ہوئے اور حق پر ہونے کے باوجود چونکہ آپ کے پاس عدالت میں پیش کرنے کے لیے غیر جانبدار گواہ نہیں تھے، اس لیے قاضی نے آپ کے خلاف فیصلہ دیا۔ آپ نے بطور گواہ اپنے صاحبزادے حضرت حسن اور اپنے غلام قنبر کو پیش کیا، قاضی نے کہا: بیٹے کی گواہی باپ کے حق میں اور غلام کی گواہی آقا کے حق میں معتبر نہیں ہے، اور آپ نے اس فیصلے کوخوش دلی سے قبول فرمایا۔ اس بےمثال عدل کا فریقِ مخالف یہودی پر گہرا اثر مرتب ہوا: وہ پلٹ کر آیا، عدالت میں اقرار جرم کیا اور کہا: یہ عدلِ نبوت کے مشابہ ہے کہ امیرالمؤمنین مجھے برابر کا درجہ دے کر قاضی کے سامنے پیش ہوئے، قاضی نے اُن کے خلاف فیصلہ دیا اور انہوں نے اسے قبول کیا، چنانچہ اس نے اسلام قبول کرلیا۔ حضرت علی نے وہ زرہ اور ایک گھوڑا اُسے ہبہ کیا اور پھر وہی نومسلم آپ کے ہمراہ خوارج کے خلاف جہاد کرتے ہوئے شہید ہوا۔ سید المرسلین ﷺ نے ایک موقع پر آپ سے فرمایا تھا: ’’اے علی! اگر ایک شخص بھی تمھارے ہاتھ پر اسلام قبول کرلے، تویہ نعمت تمہارے لیے سُرخ اونٹوں کے ریوڑ سے بہتر ہے، یہ واقعہ پوری تفصیل کے ساتھ کُتُبِ سیرت وتاریخ میں مرقوم ہے۔

غزوۂ بدر میں بھی جہاد سے کوئی پیچھے نہیں ہٹا، غزوۂ بدر کو اللہ تعالیٰ نے الفرقان یعنی ایمان کی کسوٹی قرار دیا ہے۔ رسول اللہ ﷺ نے اہلِ بدر کی بابت اللہ کی یہ بشارت دی تھی: ’’تم جو چاہو کرو، میں نے تمھیں بخش دیا ہے۔‘‘ اور آپ ﷺ نے دعا کرتے ہوئے فرمایا تھا: ’’ اے اللہ ! اگر آج تو انھیں ہلاک کردے گا، تو پھر زمین پر تیری عبادت کبھی نہ ہوگی‘‘، اس ارشادِ نبوی کا معنیٰ یہ ہے کہ قیامت تک ایمان کی نعمت سے سرشار ہونے والا ہر شخص بدری صحابہ کے زیرِ بارِ احسان ہے۔

غزوۂ اُحد میں حضرت عبداللہ بن جُبیر کی قیادت میں جبلِ عینین پر مورچہ بند صحابۂ کرام سے یقیناً اجتہادی خطا ہوئی اور وہ سرورِ عالم ﷺ کی ہدایت کو نظرانداز کرکے مالِ غنیمت جمع کرنے میں لگ گئے، لیکن اُن کا یہ اقدام مال کے لالچ یا نافرمانی کے ارادے سے نہیں تھا، بلکہ اُنھوں نے نیک نیتی سے یہ سمجھا کہ اب مسلمانوں کو یقینی فتح حاصل ہوگئی ہے اور اب یہاں مورچہ زن رہنے کی ضرورت نہیں ہے۔ اس لیے اُن کے بارے میں بھی محتاط کلمات استعمال کرنے چاہییں اور صرف یہ کہنا چاہیے: ’’غزوۂ اُحد کا سبق یہ ہے کہ فرمانِ رسول ﷺ پر غیر مشروط طور پر عمل پیرا ہونا چاہیے اور اپنے اجتہاد یاحسنِ نیت سے بھی فرمانِ رسول کو نظر انداز نہیں کرنا چاہیے، اللہ کی عطاکردہ نعمتِ عقل کو منشاے نبوت کو نظرانداز کرنے کے لیے نہیں بلکہ اسے حاصل کرنے کے لیے استعمال کرنا چاہیے۔ مالِ غنیمت جمع کرنا اس دور میں شِعار تھا، کوئی معیوب بات نہیں تھی، اسے لوٹ مار سے تعبیر کرنا بےادبی ہے، کیونکہ رسول اللہ ﷺ خود مجاہدین کے درمیان مالِ غنیمت کو تقسیم فرماتے تھے، البتہ کسی نامی گرامی کافر کے بارے میں کبھی آپ یہ اعلان فرماتے: ’’جو اسے قتل کرے گا، اس کا مال اسے ملے گا‘‘۔

یہ بھی پڑھیں:   شیخ رشید کو جینے دو - محمد حنیف

اسی طرح آپ بڑے شوق سے احتساب کریں، بے لاگ احتساب کریں، لیکن اُس کے لیے ریاست کے آئینی اور قانونی ادارے موجود ہیں، اُنہیں آزادانہ ماحول میں اپنے فرائض انجام دینے دیں، اپنے فرائض کی انجام دہی میں اگر ان اداروں کو حکومتِ وقت کی مالی یا انتظامی مدد درکار ہو، تو وہ بھی فراہم کریں، لیکن یہ تاثر نہ دیں کہ احتساب کی ڈرائیونگ سیٹ پر آپ بیٹھے ہوئے ہیں اور مُتعلقہ ادارہ آپ کی آشیر باد یا اشارۂ ابرو پر ہاتھ باندھے عمل پیرا ہے۔ عربی کا مقولہ ہے: ’’جس نے دوسروں کی عزت کی، درحقیقت اس نے اپنے لیے عزت کمائی‘‘۔ آپ ملک کے وزیرِاعظم ہیں، اس وقت آپ پاکستان کا حوالہ ہیں، آپ اندازِ کلام اور تَخاطُب کا ایسا لب و لہجہ اختیار نہ کریں کہ کوئی رَدعمل میں آپ کے بارے میں نازیبا کلمات کہے، اپنی رہنمائی کے لیے اس حدیثِ مبارک کو مَشعلِ راہ بنائیں: رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: سب سے بڑے گناہوں میں سے ایک یہ ہے کہ کوئی شخص اپنے ماں باپ پر لعنت کرے ، صحابہ نے عرض کی : یارسول اللہ ! کوئی شخص اپنے ماں باپ پر کیوں لعنت بھیجے گا (یعنی ایسابدنصیب کون ہوگا)، آپ ﷺ نے فرمایا: ایک شخص دوسرے کے باپ یا ماں کو گالی دیتاہے تو وہ جواب میں اس کے ماں باپ کو گالی دیتاہے۔ (بخاری:5973)‘‘۔ صحیح مسلم کی حدیث میں لعنت کی جگہ گالی کا کلمہ آیا ہے۔

اس حدیث پاک سے معلوم ہوا کہ کسی کے قول و فعل پر جو ناپسندیدہ ردِ عمل آتا ہے، اُس کا ذمہ دار وہ خود ہے، کیونکہ اس نے خود اس کا جواز فراہم کیا ہے۔ اس کا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ دوسرے کے لیے کسی کو گالی دینا یا اہانت کرنا جائز ہوجائے گا، لیکن اپنی عزت کا تحفظ ہر شخص کی اپنی ذمے داری ہے۔ ایک اور حدیث میں رسول اللہ ﷺ کا فرمان ہے: ’’مؤمن کو روا نہیں کہ اپنے آپ کو ذلت سے دوچار کرے۔ (ترمذی: 2254) ‘‘، یعنی ایسی ذلت جس کا سبب وہ خود بنا ہے۔ کاش کہ ہم اللہ کے پیارے رسول ﷺ کی ان پاکیزہ تعلیمات سے سبق حاصل کریں۔

پاکستان کے تمام سیاسی رہنماؤں سے ہماری درخواست ہے کہ ایک دوسرے کی پالیسیوں، اقدامات اور اُن کے منفی نتائج پر ضرور تبصرہ کریں، عوام میں آگہی پیداکریں ،لیکن قوم کے اہلِ نظر کی آرزو یہی ہے کہ ہمارے رہنماؤں کو ذہنی اور سیاسی بلوغت کا مظاہرہ کرنا چاہیے، دنیا کے سامنے ہمارا کوئی مُثبت پہلو بھی آنا چاہیے۔ آج کل زبان یا قلم سے نکلاہوا ہر لفظ تاریخ کے ریکارڈ پر ثبت ہوجاتاہے، نہ اُسے واپس لینا ممکن ہوتا ہے، نہ دور اَزکار تاویلات کسی کام آتی ہیں۔