مرد ظالم ہے یا مظلوم؟ بشارت حمید

ایک بات اکثر کہی جاتی ہے کہ عورت کا اس دنیا میں‌ کوئی گھر نہیں‌ ہوتا۔ پہلے وہ والدین کے گھر میں‌ ہوتی ہے تو اسے پرایا دھن سمجھا جاتا ہے، پھر جب شادی کے بعد سسرال آ جاتی ہے تو وہاں‌ وہ بہو ہوتی ہے اور وہ گھر بھی اس کا نہیں ہوتا۔ لیکن کیا کسی نے کبھی سوچا کہ گھر تو مرد کا بھی کوئی نہیں‌ ہوتا۔ اور پھر گھر ہی کیا، وہ تو جو کچھ کماتا ہے، اس میں‌سے کتنا وہ اپنی ذات پہ خرچ کر پاتا ہے؟ شاید کل کمائی کا دس فیصد بھی نہیں جو اس کی اپنی ذات پہ خرچ ہوتا ہو۔ گھر اگر مرد کے نام پہ ہے تو صرف کاغذات میں ہی اس کا نام ہے۔ وہ اس "اپنی" چھت کو بھی اپنے بچوں‌کے لیے مستقبل کا ایک تحفظ سمجھتا ہے۔ وہ ہر وقت بیوی بچوں‌کی ضروریات پوری کرنے کی فکر میں‌ اپنی ذات کی پرواہ نہ کرتے ہوئے ہر وقت آمدنی بڑھانے کے بارے سوچتا رہتا ہے۔

ایک مڈل کلاس مرد کی سوچ ہر وقت انھی چیزوں میں‌اٹکی رہتی ہے کہ گھر کا خرچ کیسے چلنا ہے؟ گراسری خریدنی ہے، دودھ کا بل، بجلی کا بل، گیس کا بل، فون کا بل، انٹرنیٹ کا بل، پانی کا بل، بچوں کی سکول کالج کی فیسیں، کتابوں‌ اور یونیفامز کے اخراجات، گاڑی کا پٹرول، گاڑی کی مرمت کا خرچ، مہمان نوازی کے اخراجات، اور دیگر بے شمار چھوٹے چھوٹے اخراجات جو بجٹ بناتے وقت کسی شمار میں‌ نہیں‌ آتے، لیکن صاحب خانہ کو بھگتنے پڑتے ہیں۔

وہ اپنے جی میں‌ جنم لینے والی خواہشات کو پیدا ہوتے ہی مار دیتا ہے کہ رہنے دو، اس کے بجائے گھر کی فلاں‌ضرورت پوری کر لینی چاہیے۔ اپنے اندر ہی اندر گھٹ گھٹ کر وہ بس ایک مشین نما انسان بن کر رہ جاتا ہے، جو تمام خواہشات اور جذبات سے ماورا ہو۔ کبھی اس کا جی چاہے کہ پرانی گاڑی کی جگہ کوئی اچھی اور نئی گاڑی خرید لی جائے تو مستقبل میں‌ آنے والے بہت سارے اخراجات اس کے سامنے کھڑے ہو جاتے ہیں‌، وہ اپنی خواہش کا گلا گھونٹ کر چپ ہو رہتا ہے اور خود کو سمجھا لیتا ہے کہ ابھی وسائل کم ہیں اس لیے اسی گاڑی پہ گزارا چلاؤ۔

یہ بھی پڑھیں:   اسلام میں بیوی کے حقوق - رانا اعجاز حسین چوہان

کبھی گھر والوں‌ کے ساتھ شاپنگ کرنے نکلے تو اپنے لیے کوئی چیز بھی وہ لسٹ میں‌ شامل نہیں‌ کرواتا۔ نہ برانڈڈ کپڑوں‌کا شوق نہ اعلٰی معیار کے مہنگے جوتوں‌کا شوقین۔ بس واجبی سی قیمت والے کپڑے اور جوتوں پر گزارا چلا کر وہ یہی کوشش کرتا ہے کہ بیوی بچوں‌کو کچھ اچھا اور ان کی پسند کا خرید دے۔ اپنے بارے سوچتے ہی یاد آ جاتا ہے کہ ابھی تین ماہ پہلے تو یہ چیزیں‌ لی تھیں‌، ابھی مزید ضرورت ہی نہیں ہے، بس رہنے دو۔
اگر کبھی کوئی برگر یا پیزا کھانے کو جی کیا تو یہ سوچ کر اس خیال کو جھٹک دیتا ہے کہ اتنے پیسوں میں‌ تو گھر کی ایک دن کی ہانڈی بن جائے گی جو سب کھائیں‌گے۔

اگر گھر اپنا نہیں‌ ہے اور کرایہ پہ رہتے ہیں‌ تو ہر وقت اسی سوچ میں غلطاں رہتا ہے کہ کس طرح‌ اپنا ایک چھوٹا سا گھر بن سکے گا جہاں‌ ہر ماہ کی پہلی تاریخ کو کوئی کرایہ لینے نہیں‌ آئے گا۔ کب یہ موقع میسر ہوگا جب زمین کے کسی ٹکڑے پر بنے سائبان کو وہ اپنا گھر کہہ سکے گا۔

بچے اگر چھوٹے ہیں‌ تو دودھ اور ڈائپرز آج کل کا ایک بڑا خرچہ ہیں۔ چند سال قبل مائیں‌ بچوں‌ کے پیشاب کا خود خیال رکھا کرتی تھیں‌ اور کپڑے سے بنے ہوئے واش ایبل پوتڑوں‌ سے ڈائپرز کا کام لیا جاتا تھا۔ رات سوتے وقت بچے کے نیچے پلاسٹک کی شیٹ بچھا لی جاتی تھی تاکہ بستر گیلا نہ ہو۔ اب ڈائپرز نے ماؤں کو سہل بنا دیا ہے، بس ایک بار لگا دو اور کام ختم۔ جب بھر جائے تو تبدیل کر دو۔ لیکن اس سہولت کے بدلے گھر کے بجٹ پر جو اضافی دباؤ بڑھ جاتا ہے، وہ بھی اس ظالم مرد ہی کے سر پہ آتا ہے۔

مرد واقعی ظالم ہے لیکن وہ یہ ظلم کسی اور پر نہیں‌ بلکہ اپنے آپ پر اپنی ذات پر کرتا ہے کہ اپنا خیال نہیں‌ رکھتا، اپنی خواہشوں‌کا گلا گھونٹ کر بیوی بچوں‌کی خواہشات پوری کرنے میں‌ جتا رہتا ہے۔ اور پھر ایک وقت وہ بھی آتا ہے جب بچے باپ سے کہہ رہے ہوتے ہیں‌ کہ آپ نے ہمارے لیے کیا ہی کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   کیا آپ اپنے بچوں پر چیختے ہیں - جویریہ سعید

یہ نکتہ واضح رہے کہ ہمارے معاشرے میں‌ کچھ مرد انسان کے روپ میں‌ جانور کا کردار بھی رکھتے ہیں‌ اور اس تحریر میں‌ ان کو موضوع نہیں‌ بنایا گیا بلکہ دوسری قسم کے مرد جو ذمہ دارانہ رویہ رکھتے ہیں‌، ان کی بات کی گئی ہے۔

ہمارے ہاں‌ ماں کی عظمت اور مقام کے گن گائے جاتے ہیں اور اب تو عورتوں‌ کا عالمی دن بھی زور و شور سے منایا جاتا ہے لیکن مرد اور باپ کو گھر اور معاشرے میں‌ اس کا جائز مقام دینے کی بات کم ہی سننے کو ملتی ہے۔ بجائے کسی ایک انتہا پر ہونے کے ہمیں‌ اعتدال پر مبنی رویہ اپنانے کی ضرورت ہے۔

Comments

بشارت حمید

بشارت حمید

بشارت حمید کا تعلق فیصل آباد سے ہے. بزنس ایڈمنسٹریشن میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی . 11 سال سے زائد عرصہ ٹیلی کام شعبے سے منسلک رہے. روزمرہ زندگی کے موضوعات پر دینی فکر کے تحت تحریر کے ذریعے مثبت سوچ پیدا کرنے کی جدوجہد میں مصروف ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.