لیڈربنائیں گے، بننے نہیں دیں گے - حبیب الرحمن

پاکستان پر کسی کا سایہ ہے۔ ایک تو وہ سایہ ہوتا ہے جو آنکھوں سے دیکھا جا سکتا ہے، لیکن ایک وہ سایہ ہوتا ہے جو ظاہری آنکھوں سے دیکھا تو نہیں جاسکتا لیکن پھر بھی نظر آتا ہے۔ اس سائے کو سایہ تو کہاجاتا ہے لیکن کسی کو خبر ہو نہیں پاتی کہ سایہ کس کا ہے۔ اس کے لیے لوگ پیروں فقیروں کا سہارا لیتے ہیں، جھاڑ پھونک کرواتے ہیں۔ ایسے لوگوں کو عام طور پر توہم پرستی کا طعنہ دیا جاتا ہے۔ لوگوں میں کچھ لوگ اس کو نفسیاتی بیماری کا نام دے کر ماہر نفسیات کے حوالے کردیتے ہیں، جو عام طور پر ان کو پاگل خانے تک پہنچا دیتا ہے۔ مزے کی بات یہ ہے کہ بیشتر افراد تو جھاڑ پھونک سے ٹھیک ہوجاتے ہیں اور کچھ وہ بھی ہوتے ہیں جن کا بھوت بڑے بڑے پیر بھی نہیں اتار پاتے۔ ایسے افراد جن کا بھوت کسی طور نہیں اتر پاتا، ان میں سے اکثر مزارات کی زینت بنا لیے جاتے ہیں۔

نفسیاتی ڈاکٹروں پر مشتمل پاگل خانوں میں رکھے جانے والے پاگل ہوں یا مزاروں کے حوالے کیے جانے والے پاگل، دونوں میں مشترک بات "آمدنی" ہی ہوتی ہے، خواہ وہ مزاروں کے زینت بنے پاگل و نیم پاگلوں کے ذریعے ہو یا پاگل خانوں میں داخل دیوانوں اور مجذوبوں سے۔ جس طرح اُن پر سوار "سایوں" کو نہ تو کوئی جان سکا اور نہ ان کو دیکھا جاسکا، بالکل اسی طرح پاکستان کی سیاست پر سوار "سائے" آج تک کسی کو نظر نہیں آسکے اور مستقبلِ قریب میں بھی ایسے کوئی آثار دکھائی نہیں دیتے کہ وہ سائے ظاہری آنکھوں سے کسی کو نظر آسکیں، البتہ جو ان کو جان چکے ہیں وہ جان بوجھ کر بھی کسی کو بتانے سے اس لیے گریزاں رہتے ہیں کہ اِدھر زبان کھولی اُدھر سایہ ان پر اس بری طرح سوار ہوجاتا ہے کہ یا تو زندگی چھین لیتا ہے یا پھر قیامت تک کے لیے اسے ایسا غائب کردیتا ہے کہ دیکھنے والوں کی آنکھیں حیران ہو کر رہ جاتی ہیں۔ یہی وہ خصوصیت ہے جو ان سایوں سے مختلف ہے جس کی وجہ سے ان کو پاگل خانے یا مزاروں پر لے جانا پڑتا ہے۔ پاگل خانوں یا مزاروں پر لے جانے والے پاگلوں پر جن "جنوں" کا سایہ ہوتا ہے، ان کا نام لینے پر آج تک نہیں دیکھا گیا کہ محض نام لینے کی وجہ سے نام لینے والوں پر وہ سوار ہو جائیں۔ گویا ان میں پھر بھی کچھ نہ کچھ "جناتیت" پائی جاتی ہے ۔اس لحاظ سے جس کا سایہ پاکستان پر ہے ان کو "فوق السایہ" کہا جائے تو بے جا نہ ہوگا۔

عام طور پر جس پر وہ معروف سایہ جس کو عرف عام میں سایہ ہی کہاجاتا ہے، وہ بگڑ جائے تو فرد کو پاگل خانے یا مزارات ہی کی زینت بناتا ہے، لیکن "فوق السایہ" سلطنت سائیہ کی حکمرانی پر فائز کردیتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ایسے فرد کو بار بار ایک ہستی یہ احساس دلاتی رہتی ہے کہ اب آپ صرف حامل سایہ ہی نہیں بلکہ وہ سایہ بن چکے ہیں جو پوری سلطنت پر سایہ فگن ہے۔ بار بار کی یاد دہانی کے باوجود بھی ایسے فرد کو بےسائیگی کا احساس ہونے لگتا ہے اور اچانک وہ عام انسان کی طرح تصوراتی کنٹینر پر کھڑا ہو کر اپنی پرانی زندگی کو یاد کرنے لگتا ہے اور یہ بھول جاتا ہے کہ اس کے سامنے ملک و قوم کے نہایت قابل، عقلمند، سمجھدار اور دانشور افراد بیٹھے ہیں۔ "سائے" کیونکہ عقل کو ٹھکانے لگا چکے ہوتے ہیں، اس لیے عام سی بات بھی فہم و عقل میں نہیں آپاتی کہ جو سائے کسی کو "سلطنتِ سایہ دار" کا سلطان بنا سکتے ہیں، وہ اس پر سے اگر اترج ائیں تو وہ واپس ایک عام ساانسان بن سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   زرداری، عمران خان اور فیصل واوڈا - محمد سعید اظہر

پاکستان کی تاریخ اسی عروج و زوال سے بھری پڑی ہے۔ یہاں لیڈر بنائے تو جاتے ہیں لیکن لیڈر بننے کی اجازت کسی صورت نہیں دی جاتی اور جو بھی کسی خوش فہمی میں مبتلا ہو کر ایسی راہوں پر چل نکلتا ہے کہ قوم اس کی گرویدہ ہونا شروع ہوجائے، وہیں اس کے پر کاٹ دیے جاتے ہیں، اس کے سر سے اتر جایا جاتا ہے اور وہ یا تو ایک عام عوام بن کر رہ جاتا ہے یا پھر اس کو دوسری دنیا کی سیر کرا دی جاتی ہے۔ یہ بات بھی یاد رکھنے کی ہے کہ جس سے جتنا زیادہ اس بات کا خطرہ ہوتا ہے کہ وہ مستقبل میں "فوق السائے" کے لیے خطرہ بن سکتا ہے، اس کے ساتھ رویہ بھی اتنا ہی شدید ہوتا ہے، یہاں تک کہ موت اس کا مقدر بنا دی جاتی ہے۔ اس لیے کہ ایک جنگل میں دو شیر اور ایک سر پر دو سائے نہیں رکھے جا سکتے۔

قائد اعظمؒ کے بعد اگر پاکستان کے لیے پاکستان کا مخلص ترین اور مقبول ترین لیڈر کوئی بن سکتا تھا تو وہ قائد ملت لیاقت علی خان ہو سکتے تھے اس لیے ان کے لیے سزا بھی انتہائی تجویز کی گئی۔ اس کے بعد ان کی بہن فاطمہ جناحؒ ہو سکتی تھیں لیکن سایوں کی مرضی میں رضا کا پہلو کیسے آ سکتا تھا؟ جنرل اعظم، مجیب الرحمن، ذولفقار علی بھٹو، محمد خان جونیجو، بےنظیربھٹو اورمیاں نواز شریف جیسے انسان تو وہ ہیں جن کو سائے پاکستان کے آسمانوں کی بلندی تک لیکر جانے کے بعد ایسے اترے کہ سلطنت سایہ دار کے اقتدار کا سارا نشہ بھی اتار کر خاک میں ملا دیا، لیکن کچھ وہ انسان بھی ہیں جن کو مقامی سیاست کا تاجدار بھی رہنے نہیں دیا جن میں اکبر بگٹی اور "لندن" والا پیربھی شامل ہے، اس لیے کہ بعض اوقات کمزور ترین بھی اتنے طاقتور ہوجاتے ہیں کہ ان کے آگے نہ صرف ہتھیار پھینکنے پڑجاتے ہیں بلکہ گرفتاریاں بھی دینا پڑجاتی ہیں۔ جب مجھ جیسا کم علم و کم عقل ان تمام باتوں کو جانتا اور سمجھتا ہے تو یہ کیسے تسلیم کیا جاسکتا ہے کہ اس وقت کی موجودہ قیادت ان تمام باتوں سے بے بہرہ ہوگی لیکن اقتدار کی شراب کا نشہ بوتل دیکھ کر انسان کو اتنا بد مست و بد حال بنا دیتا ہے کہ اسے پھر کرسی کے علاوہ اور کچھ نظر ہی نہیں آرہا ہوتا۔

یہ بھی پڑھیں:   ریاست مدینہؐ اور عمران خان - نسیم الحق زاہدی

پاکستان "لیڈرسازی" کی ایسی فیکٹری میں تبدیل ہوچکا ہے کہ یہاں وہی اہل قرار پا سکتا ہے جس کو اس فیکٹری کے سانچوں میں ڈھالا گیا ہو۔ اگر کوئی اپنی اہلیت کی وجہ سے فیکٹری میں ڈھلے سانچوں کے لیڈر سے زیادہ عوام کو قابل قبول ہو بھی جائے تو اس کی شکل و صورت کو "فوق السایوں" کی تیزاب گردی اتنی مسخ کر دیتی ہے کہ اسے پلاسٹک سرجری کے لیے بیرونی ممالک کا رخ کرنا پڑتا جاتا ہے۔

پاکستان میں "سائے" افراد کو قابو میں کرنے میں اس قدر طاق ہیں کہ شاید ہی دنیا میں اس کی مثال مل سکے۔ وہ کون ہے جس میں کوئی نہ کوئی کمزوری موجود نہیں ہوتی۔ وہ افراد جن کو شیطان نے حرام کی دولت اور کرتوتوں سے مالامال کیا ہوتا ہے ان کے تو کہنے ہی کیا ہوتے ہیں۔ وہ سب کے سب تو اپنی شیطانیت کے عروج پر ہوتے ہیں۔ دولت کی لوٹ مار ہو یا عیاشیوں کے ساز و سامان، چوری چکاری، ڈاکا زنی ہو یا کسی کو معمولی معمولی باتوں پر قتل کردینا، ان کے بائیں ہاتھ کا کھیل بن جاتا ہے۔ ہر بڑے اور امیر انسان کی کہانی ان سے بھری پڑی ہے۔ جس طرح وہ بیماریاں جن کو ہم "سایہ" قرار دیتے ہیں عموماً غلط عملیات یا گندی حرکتوں کی وجہ سے انسانوں پر سوار ہوتی ہیں، اسی طرح "فوق السایہ" بھی ایسے کرتوتوں کو آئین و قانون کے مطابق قرار واقعی سزا دلوانے کے بجائے ان کو ان کی شکلوں اور کرتوتوں کا آئینہ دکھا کر اپنے قابو میں کر لیتے ہیں اور پھر ان کو مجبور کر دیا جاتا ہے کہ جو جو وہ کہیں وہ وہ کرتے رہیں، بصورت دیگر قانون حرکت میں آ سکتا ہے۔ اس کی واضح مثال راتوں رات لوگوں کا مسلم لیگ کنونشن میں چلے جانا، فنکشنل بن جانا، ن میں ڈھل جانا، ق میں بدل جانا اور پھر ایسے سارے ماراماری کرنے والے افراد کا "انصاف" کا حصہ بن جانا ہے۔ قانون کے تقاضے فقط ان لوگوں کا نصیب ہیں جو "فوق السایوں" کی باتیں ماننے یا اسے اپنے سر پر سوار کرنے کے لیے تیار نہ ہوں۔

سخت سے سخت یا سنگین سے سنگین جرائم کرنے والے مجرموں کی پکڑے جانے کے بعد رہائی اور معمولی معمولی جرائم میں ملوث مجرموں کی سانسوں کو گھونٹ کر رکھ دینے والی ساری کہانیوں میں مرکزی کردار یہی نظر آئے گا۔ ایسے تمام رہا ہونے والے افراد یا تو ہونٹوں پر تالے لگائے پھرتے نظر آئیں گے یا پھر فیکٹری میں تیار کیے جانے والے برتنوں میں کھڑکتے دکھائی دیں گے۔ یہی دو اعمال ہیں جو ان کی سانسوں سے مشروط کر دیے جاتے ہیں۔

ان تمام باتوں کو سامنے رکھ کر موجودہ حکمرانوں کے لیے یہی پیغام دیا جاسکتا ہے کہ لیڈر بنا دیے جانے اور بن جانے میں بہت فرق ہوتا ہے۔ پانی کا اوپر سے نیچے کی جانب بہتے رہنا تو فطرت کی مجبوری ہے، بات تو جب ہے وہ زور پیدا ہو جو اسے خود آسمان کی جانب لے جائے۔