ایلو ویرا کے فوائد، مفید نسخہ جات - ثناء اللہ خان احسن

ایلوویرا یعنی کنوار گندل کے مسلمہ فوائد۔
‎ایلوویرا موٹاپے کا علاج۔
‎ایلوویرا گٹھیا اور جوڑوں کے درد کا علاج۔
‎ایلوویرا جسم و جگر کے لیے بہترین ٹانک۔
خواتین کے امراض کا علاج ایلوویرا۔
جلد کو رکھے جوان اور بے داغ۔
بالوں کے لیے آب حیات۔
‎ایلوویرا کا حلوہ بڑا مزیدار۔
وزن کم کرنے کے لیے ایلوویرا اجوائن کا نسخہ۔
ایلو ویرا، لیمن گراس اور لیموں شہد کی کاک ٹیل۔
‎ایلوویرا کا جوس بنانے کا آسان طریقہ۔
‎ایلوویرا شیمپو اور لوشن میں استعمال کرنے کا طریقہ۔
‎ایلوویرا کا گودا کم از کم دوسال پرانے بڑے پودے کے پتوں سے حاصل کرنا چاہیے۔
********************************

ایلوویرا یعنی کنوار گندل صدیوں سے جانا پہچانا پودا ہے جو اکثر گھرانوں کی کیاریوں یا گملوں کی زینت ہے۔ کئی نسلوں سے اس بوٹی کی افادیت مسلمہ ہے اور اکثر معالجین اس کا حلوہ یا اسے قیمے میں پکا کر ان مریضوں کو کھانے کا مشورہ دیتے ہیں جو جوڑوں کے درد یا معدے کے امراض کا شکار ہوتے ہیں۔ بیماریوں کو ختم کرنے کے لیے مہنگے علاج کی طرف جانے کے بجائے سستے اور قابل برداشت حفاظتی غذائی ہتھیار استعمال کیے جائیں جو دکھی انسانیت کو سکون بخش سکیں۔ پس ان تمام چیلنجز اور خطرات کے مقابلے کے لیے ایلوویرا ایک اہم دفاعی حصار کے طور پر سامنے آ رہی ہے۔

علامات و کلینیکل استعمال۔
ایلوویرا کے گودے کا شربت بنا کر غذا کے طور پر استعمال کیاجائے تو اس کے مسلسل استعمال سے سے جوڑوں کے درد اور نظام انہضام کے کئی عوارض بشمول موٹاپے سمیت، تقریبا 60 بیماریوں یا استحالی خلل کی درستگی عین ممکن ہے۔

ایلو ویرا جوس کے استعمالاتی فوائد :
1: ایلو ویرا نظام انہضام کو بہتر کرتا ہے۔ معدے میں موجود غذاؤں کے زہلریلے اثرات کو ختم کرتا ہے، السر، تیزابیت اور معدہ میں موجود زخموں اور سوزش بشمول خوراک کی نالی سے بڑی آنت تک کے لیے انتہائی مفید ہے۔

جوڑوں کا درد:
امریکی محققین اب ایلوویرا کو جوڑوں کی بیماری میں کلی علاج کے طور پر پیش کر رہے ہیں۔

تیزابیت، دائمی قبض، نظام ہضم کی دیگر پیچدگیاں بشمول موٹاپا:
ایلوویرا ڈرنک کے جزوی استعمال سے روزانہ لی گئی غذا سے اول تیزابیت دور کرنے میں مدد ملتی ہے، جبکہ مسلسل استعمال سے معدے اور آنتوں کے السر تک درست ہو جانے کی مصدقہ رپورٹیں انٹرنیٹ پر موجود ہیں۔ تیزابیت موٹاپے کی دیگر وجوہات میں سے ایک ہے۔ پس تیزابیت ختم ہوتے ہی موٹاپے میں حیرت انگیز کمی نوٹ کی گئی ہے۔ جس ایلوویرا ڈرنک کا ذکر ہو رہا ہے اس کو کم از کم ساڑھے تین سالہ بالغ ایلوویرا سے حاصل کیا گیا ہو اور پینے کے قابل بنانے کے لیے اس میں موجود زہریلے مادے مثلا فینولک کمپاونڈ کو نکال کر stablize کر دیا ہو۔ وگرنہ فائدے کے بجائے نقصان کا اندیشہ رہے گا۔

2: ایلو ویرا جوس کے باقاعدہ استعمال سے خوراک میں موجود چکنائی کا اخراج ہو جاتا ہے جس سے کولیسٹرول جسم میں بڑھنے کا عمل کنٹرول میں آجاتا ہے۔ دل کے والوز میں جمع شدہ چربی کی شرح میں نمایاں کمی واقع ہوتی ہے اور خون میں وٹامن کے کی موجودگی متاثر کیے بغیر ایلو ویرا خون کو پتلا کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے، اور خون میں لوتھڑے بننے سے روکتا ہے، جس سے انسانی جسم میں خون کی گردش بہتر ہو جاتی ہے۔ ہائی بلڈ پریشر اور امراض قلب کے مریضوں کے لیے انتہائی مفید ہے۔ خاص کر کے ان مریضوں اور افراد کے لیے ایک بےضرر اور مفید مددگار ہے، جو لوگ ورزش کر سکنے سے قاصر ہیں، جن میں وہ لوگ جو امراض قلب، ہڈیوں کے فریکچرز والے لوگ، حاملہ خواتین شامل ہیں۔

دوران زچگی بہت ساری خواتین کی اموات بلڈ پریشر بڑھنے سے ہو جاتی ہیں، اس ضمن میں خواتین کو حمل کے ابتدائی دو ماہ اور آخری دو ماہ میں مکمل خوراک اور اس کے درمیانی عرصہ میں آدھی خوراک لینی چاہیے ۔

3: ایلو ویرا جوس انسانی جسم کے خلیات کی افزائش میں انتہائی بہتر معاون ثابت ہوا ہے۔ ٹی بی، کینسر اور ہیپاٹائٹس کی تمام اقسام کے لیے بہت مفید ہے، کیونکہ سب سے پہلے یہ اپنے خواص کی بدولت جسم میں بیرونی ذرائع سے داخل ہونے والے جراثیموں تلف کرتا ہے، بیرونی ذرائع سے داخل ہونے والے جسم میں زہریلے مادوں کو ختم کرتا ہے۔ اور پرانے خلیات کی قوت مدافعت بڑھاتا ہے۔ چونکہ زہریلے مادوں اور خلیات کو تباہ کرنے والے جراثیم کا خاتمہ کرتا ہے جس سے نئے خلیات بننے اور ان کی افزائش میں آسانی ہو جاتی ہے۔ جس سے جسم میں واضح بہتری کے آثار نمایاں نظر آنے لگتے ہیں۔ ایلو ویرا جوس نہ صرف معدے کے سکرز {معدے میں موجود غذا سے انزائم بنانے والے ریشے دار حصوں} کو بہتر کرتا ہے بلکہ جگر کے ساتھ معدے کے جڑے ہوئے حصے نالی کو بھی بہتر کرتا ہے اور جگر کی بیرونی جھلی کو بھی بہتر کرتا ہے۔ جس سے دیرینہ ہیپاٹائٹس سی کی آخری اسٹیج کے مریض کی زندگی میں بھی طوالت آجاتی ہے۔ اس سے جگرکے خون کا الٹی سمت میں معدے کی طرف جانے اور جگر کے پھٹنے کے خدشات رک جاتے ہیں۔ اگر ہیپاٹائٹس سی کی ابتدائی حالت میں اسے بطور علاج باقاعدگی سےاستعمال کروایا جائے تو ہیپاٹائٹس سی کنٹرول میں آجاتا ہے اور علاج مہنگے اور نقصان دہ انجیکشنز لگوائے بغیر ممکن ہوجاتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   نیند سے متعلق غلط فہمیاں اور حقائق

یاد رہے کہ ایلو ویرا جوس دنیا بھر کی وہ قدرتی چیز ہے جس میں کسی قسم کے جراثیم، بیکٹیریا یا وائرس زندہ نہیں رہ سکتے۔ اس کی یہی خصوصیت کافی ہے کہ ایلو ویرا جوس کی کمرہ کے درجہ حرارت پر کھلی ہوئی بوتل میہنوں خراب نہیں ہوتی، نہ اس کا ذائقہ بدلتا ہے، نہ رنگ بدلتا ہے اور نہ اس میں کوئی ناگوار بو پیدا ہوتی ہے۔

4: ایلو ویرا جوس قبض میں انتہائی معاون ثابت ہوتا ہے، یہ ہضم شدہ خوراک کو نرم کر دیتا ہے جس سے قبض کی شکائت ختم ہو جاتی ہے، معدہ اور انتڑیوں میں موجود گییس کا اخراج فوری طور پر کر دیتا ہے جس سے گیس سے طبعت کے بوجھل پن، سر درد کی شکایات نہیں ہوتیں، اپنی سیٹ پر بیٹھ کر طویل وقت تک کام کرنے والے لوگوں کی سہولت ہے۔ حاملہ خواتین دوران حمل استعمال کر سکتی ہیں۔

5: شوگر کی بنیادی وجہ لبلبہ کا متاثر ہونا ہے جس کی وجہ سے لبلبہ کا انسولین بنانے کی صلاحیت جسم کی ضرورت کے مطابق نہیں بنا پاتا۔ ایلو ویرا جوس لبلے کے اندرونی ٹشوز اور اس کی کارکردگی کو بہتر کرتا ہے۔ شوگر کو لا علاج سمجھا جاتا ہے، اگر شوگر کے ایسے مریض جسے متواتر انسولین لگائی جاتی ہو، کو ایلو ویرا جوس کے ساتھ روزانہ دو کلومیٹرز سے سات کلومیٹر کی پیدل واک کروائی جائے تو مرض کی مدت اور نوعیت کے مطابق 3 ماہ سے 4 ماہ میں انسولین لگنے سے مکمل نجات مل جاتی ہے۔ بلکہ 9 ماہ سےایک سال میں شوگر کا مرض مکمل ختم ہوجاتا ہے۔ بشرطیکہ مریض دوران علاج اور بعد از علاج پرہیز کے اصول پر کاربند رہے۔

6: ایلو ویرا جوس کا روزانہ استعمال موٹاپے اور جسم کی جربی کی افزائش سے بچاتا ہے۔ وزن کم کرنے یا موٹاپے سے نجات کے لیے ایلوویرا جوس کو سپائرولینا کے ساتھ نہار منہ استعمال کرنے سے بہترین اور بےضرر نتائج، جسمانی قوت کی کمی ہوئے بغیر حاصل ہوتے ہیں۔ اور قوت مدافعت بھی مزید بڑھ جاتی ہے۔ ایلو ویرا اور سپائرولینا کے ساتھ وزن کی کمی جسم کی کھال کو ڈھلکائے بغیر ہوتی ہے۔

ایلوویرا کا بیرونی استعمال:
اضافی طور پر ایلوویرا کا لوشن استعمال کیا جائے تو بال ملائم اور لمبے، سکری خ شکی سے دور، بالچر سے افاقہ، اور قدرتی طور پر کالے ہو جاتے ہیں جہاں تک جلد کا سوال ہے تو اس لوشن سے جھریاں، چھائیاں، حلقے، پھنسیاں، پھوڑے وغیرہ یوں غائب ہوتے ہیں کہ انسان خاصا کم عمر نظر آئے۔ نہ اس طرح چہرے یا جسم کی خوبصورتی متاثر ہوتی ہے اور نہ جگر،گردوں یا معدے پر نقصان دہ اثرات ہوتے ہیں۔

ایلو ویرا کا حلوہ
‎اجزاء:
‎ایلو ویرا کا گودا آدھا کلو
‎جائفل ایک چوتھائی چائے کا چمچ
‎دودھ دو لیٹر
‎جاوتری ایک چوتھائی چائے کا چمچ
‎چینی ایک کلو
‎بادام پستے حسب پسند
‎گوند کتیرا ایک پیالی
‎چھوٹی الائچی تین سے چار عدد
‎مکھانے ایک پیالی
‎ تیل یا دیسی گھی دو پیالی
‎چہار مغز ایک پیالی
پسا ہوا ناریل ایک پیالی

‎ترکیب:
ایلو ویرا کے پانچ سے چھ پتے لے لیں اور ان کو صاف دھو کر چیرا لگا لیں یا تیز چھری کی مدد سے دونوں طرف سے چھلکا کاٹ کر نکال لیں، درمیان سے نکلنے والے گودے کو ہلکے ہاتھ سے دباتے ہوئے اس کا پانی نکال دیں تاکہ کڑواہٹ نکل جائے۔ کڑاہی میں ایک پیالی گھی ڈال کر درمیانی آنچ پر تین سے چار منٹ گرم کریں اور اس میں الائچی کے دانے ڈال کر کڑکڑا لیں، پھر اس میں ایلو ویرا کے گودے کے ٹکڑے کر کے ڈال دیں اور درمیانی آنچ پر بھوننا شروع کریں۔ علیحدہ کڑاہی میں ایک پیالی گھی ڈال کر درمیانی آنچ پر گرم کریں اور اس میں تھوڑے تھوڑے کر کے گوند اور مکھانے ڈال کر سنہری فرائی کر لیں۔ ایلو ویرا کی رنگت ہلکی سنہری ہونے لگے تو اس میں دودھ ڈال دیں، جو کہ فوراً ہی پھٹ جائے گا۔ تھوڑی سی آنچ تیز رکھ کر اسے اتنی دیر بھونیں کہ دودھ کا الگ ہونے والا پانی مکمل خشک ہو جائے۔ پھر اس میں فرائی کیے ہوئے گوند کو گرائنڈ کر کے، مکھانے اور چینی ڈال کر بھونیں، جب گھی علیحدہ ہونے لگے تو اس میں جائفل، جوتری ناریل اور باریک کٹے ہوئے بادام پستے ڈال کر چولہے سے اتار لیں۔

یہ صحت بخش حلوہ دیر تک کسی شیشے کی برنی میں محفوظ رکھا جا سکتا ہے۔ یہ حلوہ خاص طور پر گھٹنوں اور جوڑوں کے درد،گٹھیا، جلد اور بالوں کے لیے بےحد مفید ہوتا ہے۔
اس کی روزانہ خوراک دس سے بیس گرام تک ہے۔ تیار شدہ ایلوویرا کا حلوہ بھی مل جاتا ہے۔ کراچی میں ایمپریس مارکیٹ پر ایک بہت پرانی دکان پر یہ حلوہ تیار شدہ بھی دستیاب ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   ایلوویرا کے فوائد - بشری نواز

وزن میں کمی کا نسخہ:
ایلو ویرا کے گودے میں اجوائن مدبر کرنا:
ایلو ویرا کاگودا ایک کلو کسی مٹی کے کھلے منہ والے برتن میں ڈال دیں اور اس میں نصف کلو اجوائن دیسی اور نمک لاہوری 50 گرام ڈال کر سایہ میں رکھ دیں۔ دن میں دو تین مرتبہ ہلا دیا کریں۔ یہاں تک کی ایلو ویرا کا تمام پانی اجوائن میں خشک ہو جائے، اور صرف اجوائن باقی رہ جائے۔ یہ اجوائن مدبر ہوگئی جوکہ بڑے کام کی چیز ہے۔ تین ماشہ سے 6 ماشہ تک گرم پانی کے ساتھ استعمال کریں۔ پیٹ درد، بد ہضمی، بھوک کی کمی اور قبض وغیرہ میں بے حد مفید ہے۔ یہ اجوائن وزن کم کرنے کے لیے بھی بڑی شاندار ہے۔

بانجھ پن کے لیے:
اس کا گودا لیں، برابر وزن چینی ڈالیںم مرتبان میں ڈال کر زمین میں دبا کر چالیس دن بعد نکالیں۔
بانجھ پن میں ایک چمچ کھانے کے بعد
مجرب ہے سنیاسی نسخہ ہے۔

ایلوویرا جوس بنانے کا آسان طریقہ:
کم از کم دوسال پرانے ایلوویرا کے پودے سے حسب ضرورت ایلوویرا کے پانچ سے چھ پتے لے لیں اور ان کو صاف دھو کر چیرا لگا لیں یا تیز چھری کی مدد سے دونوں طرف سے چھلکا کاٹ کر نکال لیں۔ درمیان سے نکلنے والے گودے کو ہلکے ہاتھ سے دباتے ہوئے اس کا پانی نکال دیں تاکہ کڑواہٹ نکل جائے۔

کڑوا پانی اچھی طرح نکالنے کے بعد اس گودے کو گرائنڈر میں بلینڈ کرلیں۔ اب فرج میں برف جمانے والی کیوبز ٹرے میں یہ گودا ڈال کر فریز کردیجیے۔ روزانہ ایک کیوب اپنے پسندیدہ فروٹ جوس میں ملا کر پیجیے۔ کچھ وقت استعمال کرنے کے بعد آپ دو کیوبز کرسکتے ہیں۔ بس یہ مقدار کافی ہے۔ اس سے زیادہ نہ لیجیے۔ چاہیں تو لیموں پانی، یا لیمن گراس کے جوس کے ساتھ، یا کسی پسندیدہ شربت میں یا شہد کے پانی میں ملا کر بھی پی سکتے ہیں۔ اس طرح آپ کافی دنوں کے لیے ایلوویرا جوس با آسانی استعمال کرسکتے ہیں۔

وزن کم کرنے والی کاک ٹیل:
آپ لیمن گراس لیموں ایلوویرا جیل اور شہد ملا کر بہترین وزن کم کرنے والی کاک ٹیل بھی بنا سکتے ہیں۔

ایلوویرا جیل کو شیمپو لوشن اور کریم میں استعمال کرنا:
ایلوویرا جیل آج کل شیمپوز، باڈی اینڈ فیس لوشن، فیس اسکرب، فیشل ماسک، شیونگ کریم، فیس واش میں بکثرت استعمال ہو رہا ہے۔ اس کو اپنے گھر میں استعمال کرنے کے لیے حسب معمول اوپر بتائے گئے طریقے سے ایلو کا گودا حاصل کیجیے۔ بیرونی استعمال کے لیے اس گودے کی کڑواہٹ نکالنے کی ضرورت نہیں۔ اب اس گودے کو بلینڈ کرلیجیے۔ اپنے شیمپو کی بوتل کو کچھ خالی کیجیے اور اس میں یہ ایلو جیل ڈال کر اچھی طرح شیک کیجیے۔ لیجیے آپ کا ایلوویرا کی خوبیوں والا شیمپو تیار ہے۔ ایلو جیل کی مقدار شیمپو کی مقدار کا پانچواں حصہ ہونی چاہیے۔ مثال کے طور پر اگر شیمپو کی مقدار 100 ملی لیٹر ہے تو ایلو جیل کی مقدار 20 ملی لیٹر ہونی چاہیے یعنی چائے کے پانچ چمچے فل بھرے ہوئے۔ اسی طرح آپ فیس یا باڈی لوشن اور کریم میں بھی ایلو جیل شامل کرسکتے ہیں۔ لیکن استعمال سے پہلے خوب اچھی طرح ہلا لیا کیجیے۔

آج کل ایلو ویرا سے بنے شربت و ٹانک و دیگر ادویات تقریبا" ہر یونانی و آیور ویدک فارمیسیاں بنا رہی ہیں۔ ان میں ہمدرد کا 'تن سکھ' اور ' بیریسال' جبکہ مرحبا لیبارٹریز کا 'ایلو ٹانک' قابل ذکر ہیں۔
ایلو ویرا کا تیار شدہ امپورٹڈ اور لوکل جوس بھی پلاسٹک کینز میں دستیاب ہے جسے آپ اپنی پسند اور جیب کے مطابق خرید سکتے ہیں۔ یہ جوس آپ کو بڑے اسٹورز اور فارمیسیز پر باآسانی دستیاب ہے۔ امپورٹڈ کافی مہنگا جبکہ لوکل کافی سستا پڑتا ہے۔ آن لائن بھی دستیاب ہے۔

احتیاط:
کچھ لوگوں کو ایلو ویرا کے استعمال کے بعد پیٹ میں خرابی یا دست یا بہت زیادہ خشکی محسوس ہوسکتی ہے۔ ایسی صورت میں کم مقدار سے ایلو جوس لینا شروع کیجیے اور اگر پھر بھی افاقہ نہ ہو تو ایلو جوس استعمال نہ کیجیے۔ اگر ایلوویرا سے پیٹ میں خرابی ہو جائے تو گرم دودھ میں زیتون کا تیل یا ایک چمچ دیسی گھی ڈال کر کھائیں اس کے کھانے سے جو بھی خرابی ہوگی صحیح ہوجائے گی۔

نوٹ: اس مضمون کی تیاری میں مختلف کتب، ویب سائٹس اور بلاگز سے مدد لی گئی ہے۔