رمضان المبارک اور قرآن مجید (6) - یوسف ثانی

قرآن مجید میں موجود جملہ اوامر و نواہی پر مبنی احکامات کی موضوعاتی درجہ بندی کی آخری قسط پیش خدمت ہے۔ پچھلی قسط یہاں دیکھی جا سکتی ہے۔

44۔ قربانی اور قربانی کے جانور

حرام مہینوں میں سے کسی کو حلال نہ کر لو، نہ قربانی کے جانوروں پر دست درازی کرو (المآئدة:2) ہر اُمت کے لیے ہم نے قربانی کا ایک قاعدہ مقرر کردیا ہے (حج:34) اللہ کونہ قربانی کے گوشت پہنچتا ہے نہ خون، مگر اسے تمہارا تقویٰ پہنچتا ہے (الحج:37) نماز پڑھو اور قربانی کرو ( الکوثر:2)

45۔ قسم اور قسم کا کفارہ

قسم:

تم لوگ جو مہمل قسمیں کھا لیتے ہو اُن پر اللہ گرفت نہیں کرتا (المآئدة:89) اور اپنی قسمیں پختہ کرنے کے بعد توڑ نہ ڈالو (النحل:91) تم اپنی قسموں کو آپس کے معاملات میں مکروفریب کا ہتھیار بناتے ہو تاکہ ایک قوم دوسری قوم سے بڑھ کر فائدے حاصل کرے (سورة النحل:91) ہرگز نہ دبو کسی ایسے شخص سے جو بہت قسمیں کھانے والا بے وقعت آدمی ہے (سورة القلم :10)۔

قسم کا کفارہ:

قسم توڑنے کا کفارہ دس مسکینوں کو کھانا کھلانا، ایک غلام آزاد کرنایاتین دن کے روزے رکھنا ہے (المآئدة:89)۔

46۔ کامیابی اور ناکامی

کامیاب لوگ:

یہی سب سے بڑی کامیابی ہے۔ اللہ کی طرف بار بار پلٹنے والے، اس کی بندگی بجا لانے والے،اس کی تعریف کے گُن گانے والے، اس کی خاطر زمین میں گردش کرنے والے، اس کے آگے رکوع اور سجدے کرنے والے، نیکی کا حکم دینے والے، بدی سے روکنے والے اور اللہ کے حدود کی حفاظت کرنے والے ( توبة:112)۔

ناکام لوگ:

اپنے اعمال میں سب سے زیادہ ناکام و نامراد لوگ وہ ہیں جن کی دنیا کی زندگی میں ساری جدو جہد راہِ راست سے بھٹکی رہی اور وہ سمجھتے رہے کہ وہ سب کچھ ٹھیک کررہے ہیں (کھف:104) فلاح پاگیا وہ جس نے نفس کا تزکیہ کیا اور نامراد ہوا وہ جس نے اُس کو دبادیا (الشمس:9-10)۔

47۔ کراماً کاتبین

دو کاتب انسان کے دائیں بائیں بیٹھے اس کی زبان سے نکلے ہر لفظ کومحفوظ کرلیتے ہیں (سورة ق: 17-18)۔

48۔ کفر، کافر اور اہل کتاب

کفر:

حق کو ماننے سے انکار کر نے والے اپنے مال خدا کے راستے سے روکنے کے لیے صرف کر رہے ہیں (الانفال:36) خدا کے ساتھ کفرکرنےوالوں کے کرتوتوں کی وجہ سے ان پر کوئی نہ کوئی آفت آتی ہی رہتی ہے ( الرعد:31) جن لوگوں نے خود کفر کی راہ اختیار کی اور دوسروں کو اللہ کی راہ سے روکا (النحل:88) جس نے دل کی رضامندی سے کفر کو قبول کرلیا اس پراللہ کا غضب ہے (سورة النحل:106) کافرِ نعمت لوگوں کے لیے ہم نے جہنم کو قید خانہ بنا رکھا ہے ( بنی اسرائیل:8) جنہوں نے کفر کیا ان کے لیے آگ کے لباس کاٹے جاچکے ہیں ( الحج:19) اللہ کسی خائن کافرِ نعمت کو پسند نہیں کرتا (الحج:38) جنہوں نے کفر کیا ہو گا اور ہماری آیات کو جھٹلایا ہوگا ان کے لیے رسواکن عذاب ہوگا (الحج:57) جنہوں نے کفرکیا ان کے اعمال کی مثال ایسی ہے جیسے دشت بے آب میں سراب کہ پیاسااس کو پانی سمجھے ہوئے تھا، مگر جب وہاں پہنچا تو کچھ نہ پایا (النور:39) باطل کوماننے اور اللہ سے کفر کرنے و الے خسارے میں رہنے والے ہیں (العنکبوت:52) اور جو کفر کرے تو حقیقت میں اللہ بے نیاز ہے ( لقمان:12) جن لوگوں نے کفر کیا ہے ان کے لیے جہنم کی آگ ہے (فاطر:36) یہ زمین میں اور زیادہ سرکشی کرنے لگے اور بُری بُری چالیں چلنے لگے، حالانکہ بُری چالیں اپنے چلنے والوں ہی کو لے بیٹھتی ہیں ( فاطر:43) جن لوگوں نے کفر کیا اور اللہ کے راستے سے روکا (سورة محمد:1) کفر کرنے والوں نے باطل کی پیروی کی اور ایمان لانے والوں نے اس حق کی پیروی کی (محمد:3) اور اپنے اعمال کو برباد نہ کر لو۔ کفر پر جمے رہنے والوں کو تو اللہ ہرگز معاف نہ کرے گا (محمد:34) جن لوگوں نے اپنے رب سے کفر کیا ہے اُن کے لیے جہنم کا عذاب ہے۔ (سورة الملک:6)۔

کافر:

جو کفر و ایمان کے بیچ میں ایک راہ نکالنے کا ارادہ رکھتے ہیں وہ پکے کافر ہیں (النساء:151) جن لوگوں نے کفر و بغاوت کی اور ظلم و ستم پر اتر آئے اللہ ان کو ہرگز معاف نہ کرے گا (النساء:168) کافروں کی بات ہرگز نہ مانو اور اس قرآن کو لے کر ان کے ساتھ زبردست جہاد کرو (الفرقان:52) ہماری آیات کا انکار صرف کافر ہی کرتے ہیں ( العنکبوت:47) اللہ سے ڈرو اور کفارو منافقین کی اطاعت نہ کرو (سورة الاحزاب:1)۔

کافروں کو رفیق بنانا:

وہ تو یہ چاہتے ہیں کہ جس طرح وہ خود کافر ہیں اسی طرح تم بھی کافر ہو جا ؤ تاکہ تم اور وہ سب یکساں ہو جائیں۔ لہٰذا ان میں سے کسی کو اپنا دوست نہ بناؤ (النساء:89) جو منافق اہلِ ایمان کو چھوڑ کر کافروں کو اپنا رفیق بناتے ہیں انہیں یہ مژدہ سُنا دو کہ ان کے لےے دردناک سزا تیار ہے (النساء:138) مومنوں کو چھوڑ کر کافروں کو اپنا رفیق نہ بناؤ (النساء:144) اہل ایمان کو چھوڑ کر کافروں کو اپنا رفیق و مددگار ہرگز نہ بناؤ۔ جو ایسا کرے گا اس کا اللہ سے کوئی تعلق نہیں۔ ہاں یہ معاف ہے کہ تم ان کے ظلم سے بچنے کے لیے بظاہر ایسا طرزِ عمل اختیار کر جا ؤ (آلِ عمران:28) یہودیوں اور عیسائیوں کو اپنا رفیق نہ بنا ؤ۔ یہ آپس ہی میں ایک دوسرے کے رفیق ہیں۔ اور اگر تم میں سے کوئی ان کو اپنا رفیق بناتا ہے تو اس کا شمار بھی پھر انہی میں ہے (المآئدة:51) اہل کتاب اور دوسرے کافروں کو اپنا دوست اور رفیق نہ بنا ؤ (المآئدة:57) اپنے باپ بھائیوں کو بھی اپنا رفیق نہ بناؤ اگر وہ ایمان پر کفر کو ترجیح دیں (سورة التوبة:23)۔

اہل کتاب:

اگر اہلِ کتاب میں سے کسی کی بات مانی تو یہ تمہیں کفر کی طرف پھیر لے جائیں گے (آلِ عمران:100) اگر تم اُن لوگوں کے اشاروں پر چلو گے جنہوں نے کفر کی راہ اختیار کی ہے تو وہ تم کو الٹا پھیر لے جائیں گے اور تم نامراد ہوجاﺅ گے (آلِ عمران:149) اہل کتاب سے بحث نہ کرو مگر عمدہ طریقہ سے ( العنکبوت:45)۔

49۔ کنجوسی اور فضول خرچی

جن لوگوں کو اللہ نے اپنے فضل سے نوازا ہے اور پھر وہ بُخل سے کام لیتے ہیں وہ اس خیال میں نہ رہیں کہ یہ بخیلی ان کے لیے اچھی ہے (آلِ عمران:180) اللہ کو ایسے لوگ بھی پسند نہیں جو کنجوسی کرتے ہیں اور دُوسروں کو بھی کنجوسی کی ہدایت کرتے ہیں (النساء:37) دردناک سزا کی خوشخبری دو اُن کو جو سونے اور چاندی جمع کر کے رکھتے ہیں اور انہیں خدا کی راہ میں خرچ نہیں کرتے (سورة التوبة:34) جب اللہ نے اپنے فضل سے ان کو دولت مند کر دیا تو وہ بخل پر اتر آئے ( التوبة:76) فضول خرچی نہ کرو۔ فضول خرچ لوگ شیطان کے بھائی ہیں ( بنی اسرائیل : 26-27) نہ تو اپنا ہاتھ گردن سے باندھ رکھو اور نہ اسے بالکل ہی کھلا چھوڑ دو کہ عاجز بن کر رہ جا ؤ (سورة بنی اسرائیل:29) فضول خرچی کرو نہ بُخل بلکہ ان دونوں انتہا ؤں کے درمیان اعتدال پر قائم رہو (67) کچھ لوگ بخل کر رہے ہیں حالانکہ جو بخل کرتا ہے وہ اپنے آپ ہی سے بخل کر رہا ہے (محمد:38) جس نے بُخل کیا اور اپنے خدا سے بے نیازی برتی اور بھلائی کو جھٹلایا (الیل:10)۔

50۔ گانا بجانا

ہنستے ہو اور روتے نہیں ہو؟ اور گا بجا کر انہیں ٹالتے ہو؟ جُھک جا ؤ اللہ کے آگے ( النجم:62)۔

51۔ گناہ اور گمراہی

گناہ سے پرہیز:

اگر تم اُن بڑے بڑے گناہوں سے پرہیز کرتے رہو جن سے تمہیں منع کیا جا رہا ہے تو تمہاری چھوٹی موٹی بُرائیوں کو ہم تمہارے حساب سے ساقط کر دیں گے (النساء:31) تم کُھلے گناہوں سے بھی بچو اور چھپے گناہوں سے بھی (الانعام:120) اللہ کو ایسا شخص پسند نہیں ہے جو خیانت کار اور معصیت پیشہ ہو (النساء:107)۔

گمراہی:

اپنے رب کی رحمت سے مایوس تو گمراہ لوگ ہی ہوا کرتے ہیں ( الحِجر:56) شعراءکے پیچھے بہکے ہوئے لوگ چلا کرتے ہیں۔ وہ ایسی باتیں کہتے ہیں جو کرتے نہیں ہیں (الشعراء:224) اپنی فکر کرو، کسی دوسرے کی گمراہی سے تمہارا کچھ نہیں بگڑتا اگر تم خود راہ راست پر ہو (المآئدة:105)

بد گمانی:

بہت گمان کرنے سے پرہیز کرو کہ بعض گمان گناہ ہوتے ہیں۔تجسُس نہ کرو۔ (الحجرات:12) مارے گئے قیاس و گمان سے حکم لگانے والے جو جہالت میں غرق اور غفلت میں مدہوش ہیں (الذاریات: 10-11) منافق و مشرک مردوں اور عورتوں کو سزا دے جو اللہ کے متعلق بُرے گمان رکھتے ہیں ( فتح:6) لوگ محض وہم و گمان کی پیروی کر رہے ہیں اور خواہشاتِ نفس کے مرید بنے ہوئے ہیں (النجم:23) جنہوں نے نیک رویہ اختیار کیا اور بڑے بڑے گناہوں اور کھلے کھلے قبیح افعال سے پرہیز کرتے رہے (النجم:32)۔

یہ بھی پڑھیں:   ناروے کا ابابیل - راجہ کاشف علی خان

گناہ میں تعاون:

جو گناہ اور زیادتی کے کام ہیں ان میں کسی سے تعاون نہ کرو (المآئدة:2) بکثرت لوگ گناہ اور ظلم و زیادتی کے کاموں میں حصہ لیتے ہیں اور حرام کے مال کھاتے ہیں (المآئدة:62)۔

اکثریت کے کہنے پر چلنا:

اگر تم زمین پر بسنے والوں کی اکثریت کے کہنے پر چلو تو وہ تمہیں اللہ کے راستہ سے بھٹکا دیں گے (الانعام:116) بکثرت لوگ علم کے بغیر محض اپنی خواہشات کی بنا پر گمراہ کُن باتیں کرتے ہیں (الانعام:119)۔

52۔ گواہی، شہادت

انصاف کے علمبردار اور خدا واسطے کے گواہ بنو اگرچہ تمہارے انصاف اور تمہاری گواہی کی زد خود تمہاری اپنی ذات پر یا تمہارے والدین اور رشتہ داروں پر ہی کیوں نہ پڑتی ہو (النساء:135)۔

53۔ لونڈی اور غلام

جب وہ لونڈیاں حصارِ نکاح میں محفوظ ہو جائیں اور اس کے بعد کسی بدچلنی کی مرتکب ہوں تو ان پر آدھی سزا ہے، جو خاندانی عورتوں (مُحصَنات) کے لیے مقرر ہے (النساء:25) اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کرو سوائے اپنی بیویوں اور ان عورتوں (لونڈی)کے جو مِلک یمین میں ہوں (مومنون: 5-6) جو لوگ مجرد ہوں اور تمہارے لونڈی غلاموں میں سے جو صالح ہوں، ان کے نکاح کردو۔ اگر وہ غریب ہوں تو اللہ اپنے فضل سے ان کو غنی کردے گا (النور:32) اپنی لونڈیوں کو اپنے دنیوی فائدوں کی خاطر قحبہ گری پر مجبور نہ کرو (نور:33) تمہارے مملوکوں میں سے جو مکاتبت کی درخواست کریں ان سے مکاتبت کرلو (النور:33) جو اپنی شرم گاہوں کی حفاظت کرتے ہیں، بجز اپنی بیویوں یا اپنی مملوکہ عورتوں (لونڈی) کے جن سے محفوظ نہ رکھنے میں ان پر کوئی ملامت نہیں (المعارج : 29-30)

54۔ لین دین اور قرض

لین دین کو لکھ لینا:

آپس کے معاملات میں فیاضی کو نہ بھولو (البقرة:237) جب کسی مقرر مدت کے لیے تم آپس میں قرض کا لین دین کرو تو اسے لکھ لیا کرو (البقرة:282) معاملہ خواہ چھوٹا ہو یا بڑا، میعاد کی تعین کے ساتھ اس کی دستاویز لکھوا لینے میں تساہُل نہ کرو (البقرة:282) اور دستاویز لکھنے کے لیے کوئی کاتب نہ ملے تو رہن بالقبض پر معاملہ کرو (البقرة:283)۔

لین دین میں گواہی:

پھر دو آدمیوں کی اس پرگواہی کرالو۔اگر دو مرد نہ ہوں تو ایک مرد اور دو عورتیں ہوں۔ (البقرة:282) گواہوں کو جب گواہ بننے کے لیے کہا جائے تو انہیں انکار نہ کرنا چاہیے (البقرة:282) تم لوگ جو لین دین دست بدست آپس میں کرتے ہو، اس کو نہ لکھا جائے تو کوئی حرج نہیں۔ مگر تجارتی معاملے طے کرتے وقت گواہ کر لیا کرو۔ کاتب اور گواہ کو ستایا نہ جائے (البقرة:282)

لین دین میں رضامندی:

ایک دُوسرے کے مال باطل طریقوں سے نہ کھا ؤ، لین دین ہونا چاہیے آپس کی رضا مندی سے، اور اپنے آپ کو قتل نہ کرو (النساء:29)۔

قرضدار کو مہلت دینا:

قرض دار تنگدست ہو تو اُسے مہلت دو۔ اگر صدقہ کردو تو یہ تمہارے لیے زیادہ بہتر ہے (البقرة:280)۔

55۔ مال و دولت

مال:

اپنے وہ مال جنہیں اللہ نے تمہارے لیے قیام زندگی کا ذریعہ بنایا ہے، نادان لوگوں کے حوالہ نہ کرو (النساء:5) جو کچھ تم نے مال حاصل کیا ہے اسے کھا ؤ کہ وہ حلال اور پاک ہے اور اللہ سے ڈرتے رہو (الانفال:69) اللہ نے مومنوں سے ان کے نفس اور ان کے مال جنت کے بدلے خرید لیے ہیں (التوبة:111)۔

مال کی محبت:

انسان مال و دولت کی محبت میں بُری طرح مُبتلا ہے (العٰدیٰت:8) تمہارے مال اور تمہاری اولادیں تم کو اللہ کی یاد سے غافل نہ کر دیں (المنافقون:9)۔ مال غنیمت: جو کچھ مال غنیمت تم نے حاصل کیا ہے اُس کا پانچواں حصہ اللہ اور اس کے رسولﷺ اور رشتہ داروں اور یتیموں اور مسکینوں اور مسافروں کے لیے ہے (الانفال:41)۔

مال جمع کرنے کی دُھن:

ایک دوسرے سے بڑھ کر دنیا حاصل کرنے کی دُھن نے تمہیں غفلت میں ڈال رکھا ہے (التکاثر:1-2) جس نے مال جمع کیا اور اُسے گن گن کر رکھا۔ (الہمزہ:2) اور احسان نہ کرو زیادہ (مال و دولت) حاصل کرنے کے لیے (المدثر:6)۔

56۔ مذاق اور طعنہ زنی

مذاق:

نہ مرد دوسرے مردوںکا مذاق اڑائیں اور نہ عورتیں دوسری عورتوں کا مذاق اڑائیں (الحجرات:11)

طعنہ دینا:

آپس میں ایک دوسرے پر طعن نہ کرو اور نہ ایک دوسرے کو بُرے القاب سے یاد کرو (الحجرات:11)۔

57۔ مسجد اور مسجد حرام

اللہ کی مسجدوں کے آبادکار (مُجاور و خادم) تو وہی لوگ ہو سکتے ہیں جو اللہ اور روزِ آخر کو مانیں، اور نماز قائم کریں، زکوٰة دیں، اور ا للہ کے سوا کسی سے نہ ڈریں ( التوبة:18) مسجد حرام (کعبہ) میں مقامی باشندوں اور باہر سے آنے والوں کے حقوق برابر ہیں (الحج:25) مسجدیں اللہ کے لیے ہیں، لہٰذا اُن میں اللہ کے ساتھ کسی اورکو نہ پکارو (الجن:18)۔

58۔ مسلم ومومن؛ مر داور عورتیں

یہ لوگ صبر کرنے والے ہیں، راست باز ہیں، فرماں بردار اور فیاض ہیں۔ اور رات کی آخری گھڑیوں میں اللہ سے مغفرت کی دعائیں مانگا کرتے ہیں (آلِ عمران:17) اب دنیا میں وہ بہترین گروہ تم ہو جسے انسانوں کی ہدایت و اصلاح کے لیے میدان میں لایا گیا ہے۔ تم نیکی کا حکم دیتے ہو اور بدی سے روکتے ہو (آلِ عمران:110) اے ایمان والو! اپنی جماعت کے لوگوں کے سوا دوسروں کو اپنا رازدار نہ بنا ؤ (آلِ عمران:118) دل شکستہ نہ ہو، غم نہ کرو، تم ہی غالب رہو گے اگر تم مومن ہو (آلِ عمران:139) جو نقصان لڑائی کے دن تمہیں پہنچا وہ اللہ کے اذن سے تھا اور اس لیے تھا کہ اللہ دیکھ لے تم میں سے مومن کون ہیں اور منافق کون (آلِ عمران:166) جو مومنوں پر نرم اور کفار پر سخت ہوں گے۔ جو اللہ کی راہ میں جدوجہد کریں گے اور کسی ملامت کرنے والے کی ملامت سے نہ ڈریں گے (المآئدة:55) جو نماز قائم کرتے ہیں، زکوٰة دیتے ہیں اور اللہ کے آگے جھکنے والے ہیں (المآئدة:55)۔ مومن مرد اور مومن عورتیں، یہ سب ایک دوسرے کے رفیق ہیں، بھلائی کا حکم دیتے اور برائی سے روکتے ہیں، نماز قائم کرتے ہیں، زکوٰة دیتے ہیں اور اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرتے ہیں ( التوبة:71) جو نماز قائم کرتے اور زکوٰة دیتے ہیں اور آخرت پر پورا یقین رکھتے ہیں (النمل:3) مجھے حکم دیا گیا ہے کہ میں مسلم بن کر رہوں اور یہ قرآن پڑھ کر سُنا ؤں ( النمل: 91-92) جو مرد اور عورتیں مسلم ہیں،مومن ہیں، مطیع فرمان ہیں، راست باز ہیں، صابر ہیں (الاحزاب:35) اے مومنو! اللہ کو کثرت سے یاد کرو اور صبح و شام اس کی تسبیح کرتے رہو (سورة الاحزاب:41-42) کفار و منافقین سے ہرگز نہ دبو،ان کی اذیت رسانی کی پروا نہ کرو اور اللہ پر بھروسہ کرلو (احزاب:48) نماز قائم کرو، زکوٰة دو اور اللہ اور اس کے رسولﷺ کی اطاعت کرو (سورةالاحزاب:33) اللہ کے آگے جُھکنے والے، صدقہ دینے والے اور روزے رکھنے والے ہیں (سورة الاحزاب:35) اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کرنے والے اور اللہ کو کثرت سے یاد کرنے والے ہیں (الاحزاب:35) مومن عورتیں اس بات کا عہد کریں کہ وہ اللہ کے ساتھ کسی چیز کو شریک نہ کریں گی (الممتحنہ:12) چوری نہ کریں گی، زنا نہ کریں گی، اپنی اولاد کو قتل نہ کریں گی (سورة الممتحنہ:12) اپنے ہاتھ پاؤں کے آگے کوئی بہتان گھڑ کر نہ لائیں گی (سورة الممتحنہ:12) اور کسی امرِ معروف میں شوہر کی نافرمانی نہ کریں گی (الممتحنہ:12) اپنے معاملات آپس کے مشورے سے چلاتے ہیں ( الشوریٰ:38)۔

59۔ منافق مرد اور منافق عورتیں

منافق مرد اور منافق عورتیں سب ایک دوسرے کے ہم رنگ ہیں۔ برائی کا حکم دیتے اور بھلائی سے منع کرتے ہیں اور اپنے ہاتھ خیر سے روکے رکھتے ہیں (سورة التوبة:67)۔

60۔ موت اور زندگی

کافروں کی سی باتیں نہ کرو جن کے عزیز و اقارب اگر کبھی سفر پر جاتے ہیں یا جنگ میں شریک ہوتے ہیں تو وہ کہتے ہیں کہ اگر وہ ہمارے پاس ہوتے تو نہ مارے جاتے اور نہ قتل ہوتے (آلِ عمران:156) اگر تم موت یا قتل سے بھاگو تو یہ بھاگنا تمہارے لیے کچھ بھی نفع بخش نہ ہوگا (الاحزاب:16) اللہ نے موت اور زندگی کو ایجاد کیا تاکہ آزماکر دیکھے تم میں سے کون بہتر عمل کرنے والا ہے (الملک:2)۔

یہ بھی پڑھیں:   ناروے کا افسوسناک واقعہ ، ہمیں کیا کرنا چاہیے؟ آصف لقمان قاضی

61۔ نماز، الصلوٰة

نماز:

نماز قائم کرتے ہیں (البقرة :3) ابراہیم ؑ جہاں عبادت کے لیے کھڑا ہوتا ہے اس مقام کو مستقل جائے نماز بنالو (البقرة:125) نماز قائم کرو دن کے دونوں سروں پر اور کچھ رات گزرنے پر (ھود:114) اپنے رب کی رضا کے لیے صبر سے کام لیتے ہیں، نماز قائم کرتے ہیں (الرعد:22) نماز قائم کریں اور جو کچھ ہم نے ان کو دیا ہے اس میں سے کھلے اور چُھپے خرچ کریں (سورة ابراہیم:31) اے میرے پروردگار! مجھے نماز قائم کرنے والا بنا۔ (ابراہیم:40) نماز قائم کرو، زکوٰة دواور اللہ سے وابستہ ہوجاﺅ (الحج:78) جو اپنی نماز میں خشوع اختیار کرتے ہیں (سورةالمؤمنون:2) اپنی نمازوں کی محافظت کرتے ہیں ( المؤمنون:9) جو نماز قائم کرتے ہیں، زکوٰة دیتے ہیں اور آخرت پر یقین رکھتے ہیں (سورة لقمان:4) نماز قائم کرو، زکوٰة دو اور اللہ کو اچھا قرض دیتے رہو ( المزمل:20) فلاح پاگیا وہ جس نے پاکیزگی اختیار کی اور اپنے رب کا نام یاد کیا پھر نماز پڑھی ( الاعلیٰ :14)۔

نماز قصر:

اور جب تم لوگ سفر کے لیے نکلو تو کوئی مضائقہ نہیں اگر نماز میں اختصار کر دو (النساء:101)۔

کعبہ رُخ ہونا:

تم جہاں کہیں بھی ہو، مسجد حرام ہی کی طرف منہ کرکے نماز پڑھو (البقرة:۰۵۱) اپنی نمازوں کی نگہداشت رکھو (البقرة:238)۔ اوقاتِ نماز:

نماز پابندی وقت کے ساتھ اہلِ ایمان پر فرض کیا گیا ہے (النساء:103) نماز قائم کرو زوالِ آفتاب سے لے کر رات کے اندھیرے تک (سورة بنی اسرائیل:78) رات کو تہجد پڑھو۔ ( بنی اسرائیل:79) صبر کرو اور اپنے رب کی حمد و ثناکے ساتھ اس کی تسبیح کرو سورج نکلنے سے پہلے اور غروب ہونے سے پہلے اور رات کے اوقات میں بھی تسبیح کرو اور دن کے کناروں پر بھی (سورة طٰہٰ:130) صبح و شام اللہ کی تسبیح کرو اور تیسرے پہر اور جب تم پر ظہر کا وقت آتا ہے (الروم:17-18) رات کو نماز میں کھڑے رہا کرو (المزمل:1)۔

نماز جمعہ:

جمعہ کے دن نماز کے لیے پکارا جائے تو اللہ کے ذکر کی طرف دوڑو اور خرید و فروخت چھوڑ دو (الجمعہ:9) جب نماز پوری ہو جائے تو زمین میں پھیل جا ؤ اور اللہ کا فضل تلاش کرو (الجمعہ:10) قرا ت کی آواز: نماز نہ زیادہ بلند آواز سے پڑھو نہ بہت پست آواز سے بلکہ اوسط درجے کا لہجہ اختیار کرو۔ (سورة بنی اسرائیل:110)۔

اہل خانہ کو تلقین:

وہ اپنے گھر والوں کو نماز اور زکوٰة کا حکم دیتا تھا (مریم:55) اپنے اہل و عیال کو نماز کی تلقین کرو اور خود بھی اس کے پابند رہو (سورة طٰہٰ:132)۔

نماز اور برائی:

نماز قائم کرو، یقیناً نماز فحش اور برے کاموں سے روکتی ہے ( العنکبوت:46) جو اپنی نماز کی ہمیشہ پابندی کرتے ہیں، جن کے مالوں میں سائل اور محروم کا ایک مقرر حق ہے (المعارج:23-25) سجدہ کرو اور اپنے رب کاقرب حاصل کرو (سورة العلق:19) نماز قائم کریں اور زکوٰة دیں۔یہی نہایت صحیح و درست دین ہے (البینہ:5)۔

نماز سے بیزاری:

نماز کے لیے آتے ہیں تو کسمساتے ہوئے آتے ہیں اور راہِ خدا میں خرچ کرتے ہیں تو بادل ناخواستہ خرچ کرتے ہیں (توبة:54) تم نے دیکھا اُس شخص کو جو ایک بندے کو منع کرتا ہے جبکہ وہ نماز پڑھتا ہو؟ (سورة العلق : 9-10) جنہوں نے نماز کو ضائع کیا اور خواہشاتِ نفس کی پیروی کی (سورة مریم:59) پھر تباہی ہے اُن نماز پڑھنے والوں کے لیے جو اپنی نماز سے غفلت برتتے ہیں (الماعون: 4-5)۔

62۔ وراثت اور وصیت

ترکہ کی تقسیم کے موقع پر کنبہ کے لوگ اور یتیم اور مسکین آئیں تو ان کو بھی کچھ دو (النساء:8) مرد کا حصہ دو عورتوں کے برابر ہے۔ اگر (میت کی وارث) دو سے زائد لڑکیاں ہوں تو انہیں ترکے کا دو تہائی دیا جائے۔ اور اگر ایک ہی لڑکی وارث ہو تو آدھا ترکہ اس کا ہے۔ اگر میت صاحب اولاد ہو تو اس کے والدین میں سے ہر ایک کو ترکے کا چھٹا حصہ ملنا چاہیے۔ اور اگر وہ صاحب اولاد نہ ہو اور والدین ہی اس کے وارث ہوں تو ماںکو تیسرا حصہ دیاجائے۔ اور اگر میت کے بھائی بہن بھی ہوں تو ماں چھٹے حصہ کی حق دار ہوگی (النساء:11) اورتمہاری بیوی تمہارے ترکہ میں سے چوتھائی کی حقدار ہوں گی اگر تم بے اولاد ہو۔ ورنہ صاحبِ اولاد ہونے کی صورت میں ان کا حصہ آٹھواں ہوگا (النساء:12)۔ اور اگر وہ مرد یا عورت بے اولاد بھی ہو اور اس کے ماں باپ بھی زندہ نہ ہوں، مگر اس کا بھائی یا ایک بہن موجود ہو تو بھائی اور بہن ہر ایک کو چھٹا حصہ ملے گا۔ بھائی بہن ایک سے زیادہ ہوں تو کُل ترکہ کے ایک تہائی میں وہ سب شریک ہوں گے (النساء:12) اگر کوئی شخص بے اولاد مر جائے اور اس کی ایک بہن ہو تو وہ اس کے ترکہ میں سے نصف پائے گی اور اگر بہن بے اولاد مرے تو بھائی اس کا وارث ہوگا۔ اگر میت کی وارث دو بہنیں ہوں تو وہ ترکے میں سے دو تہائی کی حقدار ہوںگی اور اگر کئی بھائی بہنیں ہوں تو عورتوں کا اکہرا اور مردوں کا دوہرا حصہ ہوگا (النسآء:176) اور میراث کا سارا مال سمیٹ کر کھاجاتے ہو، اور مال کی محبت میں بُری طرح گرفتار ہو (الفجر :19-20)۔

وصیت:

جب تم میں سے کسی کی موت کا وقت آجائے اور وہ وصیت کر رہا ہو تو اس کے لیے شہادت کا نصاب یہ ہے کہ تمہاری جماعت میں سے دو صاحبِ عدل آدمی گواہ بنائے جائیں (المآئدة:106)

63۔ ہجرت، ترک ِ وطن

جن لوگوں نے میری خاطر اپنے وطن چھوڑے اور جو میری راہ میں اپنے گھروں سے نکالے گئے اور ستائے گئے اور میرے لیے لڑے اور مارے گئے اُن کے سب قصور میں معاف کردوں گا (آلِ عمران:195) جو کوئی اللہ کی راہ میں ہجرت کرے گا وہ زمین میں پناہ لینے کے لیے بہت جگہ اور بسر اوقات کے لیے بڑی گنجائش پائے گا (النساء:100) جن لوگوں نے ایمان قبول کیا اور ہجرت کی اور اللہ کی راہ میں اپنی جانیں لڑائیں اور اپنے مال کھپائے، اور جن لوگوں نے ہجرت کرنے والوں کو جگہ دی اور ان کی مدد کی، وہی دراصل ایک دوسرے کے ولی ہیں (الانفال:72) جو ایمان لائے، اللہ کی راہ میں گھر بار چھوڑے اور جنہوں نے پناہ دی، مدد کی وہی سچے مومن ہیں (الانفال:74) وہ ستائے گئے تو گھر بار چھوڑدیے، ہجرت کی، راہ خدا میں سختیاں جھیلیں اور صبر سے کام لیا ( النحل:110) جنہوں نے راہِ خدا میں ہجرت کی، پھر قتل کردیے گئے یا مرگئے، اللہ ان کو اچھا رزق دے گا ( الحج:58)۔

64۔ یتیم اور مسکین

یتیموں کے ساتھ وہ طرز عمل اختیار کرو جس میں ان کے لیے بھلائی ہو (سورة البقرة:220) یتیموں کے مال ان کو واپس دو۔ اچھے مال کو بُرے مال سے نہ بدل لو اور اُن کے مال اپنے مال کے ساتھ ملا کر نہ کھا جا ؤ، یہ بہت بڑا گناہ ہے (سورةالنساء:2) یتیم کا مالدار سرپرست پرہیزگاری سے کام لے اور جو غریب ہو وہ معروف طریقہ سے کھائے (النساء:6) جو لوگ ظلم کے ساتھ یتیموں کے مال کھاتے ہیں،وہ اپنے پیٹ آگ سے بھرتے ہیں (النساء:10) یتیموں کے ساتھ انصاف پر قائم رہو (النساء:127) مالِ یتیم کے قریب نہ جا ؤ مگرا حسن طریقہ سے۔ یہاں تک کہ وہ اپنے سنِ رُشد کو پہنچ جائے (الانعام:152) مالِ یتیم کے پاس نہ پھٹکو مگر احسن طریقے سے (سورة بنی اسرائیل:34) اللہ کی محبت میں مسکین اور یتیم اورقیدی کو کھانا کھلاتے ہیں (الدہر:8) مسکین کو کھانا نہیں کھلاتے تھے (سورة المدثر:44) یتیم پر سختی نہ کرو اور نہ سائل کو جھڑکو۔ اپنے رب کی نعمت کا اظہار کرو (سورةالضحیٰ:11) وہی تو ہے جو یتیم کو دھکے دیتا ہے، اورمسکین کوکھانا دینے پر نہیں اُکساتا (سورة الماعون: 2-3) تم یتیم سے عزت کا سلوک نہیں کرتے؟ مسکین کو کھانا کھلانے پر ایک دوسرے کو نہیں اُکساتے؟ (الفجر: 17-18) کسی گردن کو غلامی سے چھڑانا، یا فاقے کے دن کسی قریبی یتیم یا خاک نشین مسکین کو کھانا کھلانا ( سورةالبلد : 13-16)۔

(ختم شد)

Comments

یوسف ثانی

یوسف ثانی

یوسف ثانی پیغام قرآن ڈاٹ کام کے مدیر اعلیٰ ہیں۔ 2008ء سے اردو، سندھی اور انگریزی زبانوں میں قرآن و حدیث پر مبنی کتب کی تصنیف و تالیف میں مصروف ہیں۔ ان کی کتب "پیغام قرآن، " "پیغام حدیث،" "قرآن جو پیغام،" "اسلامی ضابطہ حیات" اور "اسلامک لائف اسٹائل " کے تا حال پندرہ ایڈیشنز شائع ہوچکے ہیں۔ آپ ایم اے صحافت بھی ہیں اور بطور صحافی خبر رساں ادارے پاکستان پریس انٹرنیشنل اور جنگ لندن سے برسوں وابستہ رہنے کے علاوہ گزشتہ چار دہائیوں سے قومی اخبارات و جرائد میں بھی لکھ رہے ہیں۔ پیشے کے اعتبار سے کیمیکل ٹیکنا لوجسٹ ہیں۔ کیمیکل ٹیکنالوجی میں پوسٹ گریجویٹ ڈپلومہ کے بعد 1981ء سے قومی و کثیر القومی آئل اینڈ گیس فیلڈز سے وابستہ ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.